کرشنا کوہلی

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
کرشنا کوہلی
رکن ایوان بالا پاکستان
آغاز منصب
12 مارچ 2018ء
معلومات شخصیت
پیدائش 1 فروری 1979 (39 سال)  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں تاریخ پیدائش (P569) ویکی ڈیٹا پر
شہریت Flag of Pakistan.svg پاکستان  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں شہریت (P27) ویکی ڈیٹا پر
جماعت پاکستان پیپلز پارٹی  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں سیاسی جماعت کی رکنیت (P102) ویکی ڈیٹا پر
عملی زندگی
مادر علمی سندھ یونیورسٹی  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں تعلیم از (P69) ویکی ڈیٹا پر
پیشہ سیاست دان  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں پیشہ (P106) ویکی ڈیٹا پر
شعبۂ عمل انسانی حقوق  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں شعبۂ عمل (P101) ویکی ڈیٹا پر
اعزازات
100 خواتین (بی بی سی)  (2018)[1]  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں وصول کردہ اعزازات (P166) ویکی ڈیٹا پر

کرشنا کماری کوہلی (سندھی: ڪرشنا ڪماري ڪوهلي، انگریزی: Krishna Kumari Kohli، مختصر نام کشو بائی) ایک پاکستانی سیاست دان جو ایوان بالا پاکستان کی مارچ 2018ء سے منتخب رکن ہے۔ وہ پہلی ہندو دلت خاتون اور یہ منصب پانے والی دوسری ہندو خاتون (پہلی رتنا بھگوان داس چاولا) ہے۔ اس نے حقوق نسواں کے لیے اور بندھوا مزدوری کے خلاف مہم چلائی تھی۔

ابتدائی زندگی اور تعلیم[ترمیم]

کرشنا کوہلی 1 فروری 1979ء[2] کو نگر پارکر کے پسماندہ علاقے سے تعلق رکھنے والے غریب خاندان میں پیدا ہوئی۔[3] جب وہ بچی تھی اور تیسری جماعت کی طالبہ تھی، تو اس کو اور اس کے خاندان کو بندھوا مزدور بنا کر تین سال کے لیے ضلع عمرکوٹ کے نجی قید خانے میں (جس کا مالک ایک وڈیرا تھا) قید کر لیا گیا۔[4][3] انہیں تب ہی رہائی ملی جب پولیس نے اس نجی قید خانے میں چھاپہ مارا۔ اس نے ابتدائی تعلیم ضلع عمرکوٹ سے حاصل کی اور پھر ضلع میرپور خاص سے حاصل کی۔

اس نے 1994ء میں 16 برس کی عمر میں شادی کی تب وہ نویں جماعت کی طالبہ تھی۔[2] اس نے شادی کے بعد اپنی تعلیم جاری رکھی اور 2013ء میں جامعہ سندھ سے عمرانیات میں ماسٹر کی ڈگری حاصل کی۔[3]

وہ سنہ 2007ء میں اسلام آباد میں تیسرے مہر گڑھ ہیومن رائٹس یوتھ لیڈرشپ ٹرینگ کیمپ میں آئی جس میں اس نے حکومت پاکستان، بین الاقوامی ہجرت، تزویراتی منصوبہ بندی کے متعلق مطالعہ کیا اور معاشرہ کو تبدیل کرنے والے آلات کے متعلق سیکھا۔[2]

سیاسی کیریئر[ترمیم]

کرشنا کوہلی نے پاکستان پیپلز پارٹی (پی پی پی) میں ایک سماجی فعالیت پسند کے طور پر شمولیت اختیار کی تاکہ وہ تھر کے علاقے کی اچھوت برادریوں کے حقوق کے لیے مہم چلا سکے۔ اس نے حقوق نسواں کے لیے، پندھوا مزدوری کے خلاف اور جنسی حراساں کرنے کے خلاف بھی مہم چلائی۔[4] 2018ء کے پاکستانی ایوان بالا انتخابات میں وہ پیپلز پارٹی کی سندھ سے امیدوار تھی اور وہ ان انتخابات میں کامیابی سے منتخب ہوئی۔[5][6] وہ پہلی ہندو دلت خاتون رکن ہے اور رتنا بھگوان داس چاولا کے بعد دوسری منتخب شدہ ہندو خاتون رکنِ ایوان بالا ہے۔[4]

اعزاز[ترمیم]

2018ء کو بی بی سی نے کرشنا کو 100 با اثر خواتیں کی فہرست میں شامل کیا۔[7]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. https://www.bbc.com/news/world-46225037
  2. ^ ا ب پ "In historic first, a Thari Hindu woman has been elected to the Senate"۔ ڈان ڈاٹ کام۔ 4 مارچ 2018۔ اخذ کردہ بتاریخ 4 مارچ 2018۔ 
  3. ^ ا ب پ حنیف سمون (4 فروری 2018)۔ "PPP nominates Thari woman to contest Senate polls on general seat"۔ ڈان۔ اخذ کردہ بتاریخ 4 مارچ 2018۔ 
  4. ^ ا ب پ "Krishna Kumari becomes first Hindu Dalit woman senator of Pakistan"۔ ڈیلی پاکستان گلوبل۔ 3 مارچ 2018۔ 
  5. "LIVE: PML-N-backed independent candidates lead in Punjab, PPP in Sindh – The Express Tribune"۔ دی ایکسپریس ٹریبیون۔ 3 مارچ 2018۔ اخذ کردہ بتاریخ 3 مارچ 2018۔ 
  6. اے۔ خان (4 مارچ 2018)۔ "PML-N gains Senate control amid surprise PPP showing"۔ ڈان ڈاٹ کام۔ اخذ کردہ بتاریخ 4 مارچ 2018۔ 
  7. "BBC 100 Women 2018: Who is on the list?"۔ BBC News۔ 19 November 2018۔ اخذ کردہ بتاریخ 19 November 2018۔