بخت خان

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
:چھلانگ بطرف رہنمائی، تلاش

بخت خان روہیلہ 1857ء کی جنگ آزادی کے ہیرو۔ مغلیہ خاندان کے شہنشاہ بہادر شاہ ظفر کے زمانے میں انگریزی فوج میں‌ صوبیدار تھے۔ انگریزوں کے خلاف جنگ آزادی میں اپنے فوجی دستے سمیت شرکت کی اور کارہائے نمایاں انجام دیے۔ جنگ آزادی کی ناکامی کے بعد روپوش ہوگئے۔

بخت خان، ( پیدا ئش: ١٧٩٧ بجنور، ۔۔۔۔۔ موت:١٨٥٩ ترائی) انگریز مخالف باغی فوج کے سپہ سالار (١٨٥٨ تا ١٨٥٩)۔1856 میں برطانوی حکومت نے فوج سے معزول کر دیا گیا تھا ۔ بخت خان نے برطانوی وسطی بھارت کمپنی کی فوج میں ایک پیادہ دستے کمانڈر کے طور پر خدمات انجام دیں. بخت خان نے بہادر شاہ ظفر کو فرنگیوں کے خلاف باغی فوج بنانے اور اسے منظم کرنے کا مشورہ دیا جسکو بہادر شاہ ظفر نے مسترد کردیا۔ مگر انگریزوں کے خلاف بخت خان نے علم بغاوت پلند کیا۔. تاریخ دان کہتے ہیں کہ ستمبر ١٨٥٩ میں برطانوی فوج نے بخت خان کو دلی سے باہر رکنے پر مجبور کر دیا تھا کچھ لوگوں کا کہنا تھا کہ وہ کچھ دن نیپال کی پہاریوں میں روپوش ھوگئے تھے۔ ١٣ ، مئی ١٨٥٩ میں زخمی ھوکر ترائی کے جنگلات میں شہید ھوئے۔ “ تن سر“ کے قبرستان میں دفن کیا گیا ھے۔ جو اب پاکستان میں ھے جس کو اب “ جوزینہ“ کہا جاتا ھے۔