عالمی بنک

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
:چھلانگ بطرف رہنمائی، تلاش
عالمی بنک
قائم جولائی 1944
قسم بین الاقوامی تنظیم
قانونی حیثیت
معاہدہ
مقصد قرضہ
مقام واشنگٹن ڈی سی
رکنیت 188 ممالک [1](IBRD) 170 countries (IDA)
صدر
جم یونگ کم
اہم عضو
Board of Directors[2]
Parent organization
عالمی بنک گروپ
ویب سائٹ عالمی بنک

عالمی بنک یا عالمی بنک گروپ کل پانچ عالمی تنظیموں پر مشتمل ہے۔ جو رکن ممالک کو معاشی ترقی اور غربت کے خاتمے کے لیے قرضہ فراہم کرتے ہیں یا اس کے لیے مشورے دیتے ہیں۔ اس کا قیام بریٹن وڈز کے معاہدے کے تحت 27 دسمبر 1945 عمل میں آیا تھا۔ اس نے 25 جون 1946 کو کام شروع کیا۔ اس کی پانچ ذیلی تنظیمیں یہ ہیں:

ان میں سے پہلا ادارہ 1945 میں بنا تھا مگر باقی بعد میں آہستہ آہستہ بنے ھیں۔ عالمی بنک کے کام کا زیادہ تعلق ترقی پذیر ممالک کی ترقی خصوصاً انسانی زندگی کو بہتر بنانے، تعلیم، زراعت کو ترقی دینے اور ذرائع رسل و رسائل کو ترقی دینے کے ساتھ ہے اگرچہ کچھ لوگوں کے نزدیک عالمی بنک اس سلسلے میں بڑی طاقتوں کے مفاد کے مطابق کام کرتا ہے اور اس کے قرضے کی فراہمی کچھ ایسی شرائط پر مبنی ہوتی ہے جو ترقی پذیر ممالک کے مفاد میں نہیں ہوتیں۔ آخری دونوں ادارے حکومتوں کے علاوہ شخصی اداروں کو قرضے اور ضمانتیں بھی مہیا کرتے ہیں۔

انتظامی ڈھانچہ[ترمیم]

عالمی بنک گروپ کا سب سے بڑا ادارہ بین الاقوامی بنک برائے تعمیر و ترقی ہے،جسے لوگ عموماً عالمی بنک کہتے۔ عالمی بنک کا صدر دفتر امریکہ کے دارالحکومت واشنگٹن (ضلع کولمبیا) میں ہے۔ اس کے مالک اس کے ارکان ممالک ہیں۔ عالمی بنک کا منافع اس کی اور اس کے ارکان ممالک کی ترقی اور غربت کے خاتمے کے لیے استعمال ہوتا ہے۔ ارکان ممالک کے شروع میں برابر ووٹ ہوتے ہیں مگر مختلف ممالک کے زائد ووٹ اس بنیاد پر ہوتے ہیں کہ اس کی عالمی بنک میں سرمایہ کاری کا حصہ کتنا مقرر ہوا ہے۔ چاہے وہ یہ حصہ دے یا نہ دے اور وقت پر دے یا نہ دے مثلاً امریکہ اکثر عالمی بنک میں اپنا حصہ کم ادا کرتا ہے اور وقت پر مہیا نہیں کرتا اور یہ شکائت اقوام متحدہ کو بھی ہے۔ عالمی بنک کے فیصلے ووٹوں کی طاقت کے مطابق ہوتے ہیں۔ اس بنیاد پر عالمی بنک میں فیصلے ترقی یافتہ ممالک کی مرضی سے ہوتے ہیں۔ نومبر 2006 میں امریکہ کے ووٹ %16.4، جاپان کے %7.9 ، جرمنی کے %4.5 ، فرانس کے %4.3 اور برطانیہ کے %4.3 ووٹ تھے۔ اس حساب سے صرف اوپر دے گئے پانچ ممالک کے ووٹ %37.4 بنتے ہیں یعنی وہ جو چاہے کر سکتے ہیں۔ عالمی بنک میں بڑے فیصلوں کے لیے %85 ووٹ درکار ہوتے ہیں اور ان فیصلوں کو امریکہ اکیلا کسی ملک کی مدد کے بغیرمسدود (بلاک) کر سکتا ہے۔ عالمی بنک کو ایک بورڈ آف گورنرز کے ذریعے چلایا جاتا ہے جس کا اجلاس سالانہ بنیادوں پر ہوتا ہے۔ ہر ملک کی طرف سے اس ملک کا وزیرِ مالیات گورنر ہوتا ہے۔ گورنروں نے اپنا اختیار 24 ایگزیکٹو ڈائریکٹرز کو سونپا ہوا ہے جن کا باقاعدہ انتخاب ہوتا ہے (عالمی بنک کے ووٹوں کی تعداد ذہن میں رکھئیے)

ارکان[ترمیم]

کوئی بھی ملک ان کا رکن بننے کی درخواست دے سکتا ہے۔ ضروری نہیں کہ آپ عالمی بنک گروپ کی ساری تنظیموں کی رکنیت حاصل کریں۔ ان کے لیے علیحدہ درخواست دی جاتی ہے۔ بین الاقوامی بنک برائے تعمیر و ترقی اور بین الاقوامی انجمن برائے ترقی کو مجموعی طور پر عالمی بنک کہا جاتا ہے اور بیشتر ممالک ان دو تنظیموں کے رکن ہیں۔ بین الاقوامی بنک برائے تعمیر و ترقی کے 185 ارکان ہیں اور باقیوں کے ارکان کی تعداد 140 اور 176 کے درمیان ہے۔ پاکستان ان تمام تنظیموں کا رکن ہے۔

صدارت[ترمیم]

اگرچہ عالمی بنک کے صدر کا باقاعدہ انتخاب ہوتا ہے مگر آج تک تمام صدر امریکی تھے۔ یہ ایک غیر تحریر کردہ معاہدہ ہے کہ عالمی بنک کا صدر امریکی اور بین الاقوامی مالیاتی فنڈ کا صدر ھمیشہ یورپی ہوگا۔ آج کل پال وولفووٹز اس کے صدر ہیں۔ ان کا تعلق امریکہ سے ہے۔ ان کا انتخاب جون 2005 میں ہوا تھا۔ آج تک کے صدور کی فہرست کچھ یوں ہے:

  • اوجین مئی۔ جون 1946 ۔ دسمبر 1946
  • جان میکلائے۔ 1947 مارچ ۔ جون 1949
  • اوجین بلیک۔ 1949۔ 1963
  • جارج ووڈز۔ جنوری 1963۔ مارچ 1968
  • رابرٹ میکنامارا۔اپریل 1968 ۔جون 1981
  • ایلڈن کلوسن۔ جولائی 1981۔جون 1986
  • باربر کونابیل۔جولائی 1986۔ اگست 1991
  • لوئیس پریسٹن۔ ستمبر 1991۔ 1995مئی
  • جیمز وولفنسن۔مئی 1995۔ جون 2005
  • پال وولفووٹز۔ جون 2005۔ جون 2007
  • رابرٹ بی زوئلک۔ جولائی 2007 تاحال

عالمی بنک کی کارکردگی کا تنقیدی جائزہ[ترمیم]

عالمی بنک ایک بڑا اور بین الاقوامی ادارہ ہے جس کا مقصد ترقی پذیر ممالک کی ترقی ہے۔ مگر عالمی بنک کے ووٹوں کی غیر منصفانہ تقسیم کی وجہ سے اسے تمام ایسے اقدامات کرنے پڑتے ہیں جو سرمایہ دار ممالک کے مفاد میں ہو چاہے وہ عالمی بنک کے اپنے منشور سے ھٹ کے ہو۔ بعض ناقدین کے خیال میں عالمی بنک کی اساسی تبدیلی کی پالیسی ( Structural Adjustment Policy ) کے ساتھ ملحقہ شرائط ترقی پذیر ممالک کو ترقی نہیں بلکہ زیادہ غربت عطا کرتے ہیں۔ اس کا ثبوت افریقہ کے بہت سے ممالک کی موجودہ حالت ہے۔ حقیقت یہ ہے کہ موجودہ ترقی یافتہ ممالک چاہتے ہیں کہ ان کی اشیاء ترقی پذیر ممالک کی منڈیوں میں بغیر کسی مشکل اور رکاوٹ کے فروخت ہوں اور ترقی پذیر ممالک صرف ان منصوبوں میں سرمایہ کاری کریں جن سے ترقی یافتہ ممالک کے مفادات پر ضرب نہ پڑتی ہو۔ ہوتا یہ ہے کہ ترقی پذیر ممالک کے کرپٹ اور بدمعاش عہدادارانِ حکومت قرضے لے کر لٹا دیتے ہیں اور وہ ٹھیک جگہ پر خرچ نہیں ہوتے۔ ان قرضوں کے ساتھ جومبنی بر نا انصافی شرائط وہ قرض لینے کے لئے قبول کر لیتے ہیں جن کا خمیازہ اس ملک کے عوام کو بھگتنا پڑتا ہے۔ ناقدین کے مطابق اس ادارہ کو امریکہ خصوصاً اور یورپی ممالک عموماً اپنے مفادات کے لیے استعمال کرتے ہیں۔ ان وجوہات کی بناء پر کئی ممالک میں عالمی بنک کے خلاف مظاہرے ہوتے ہیں اور اس کے چنگل سے آزادی کے لیے اپنی حکومتوں سے درخواست کی جاتی ہے مگر عالمی بنک ایک بہت بڑا قرض حاصل کرنے کا ذریعہ ہے اس لئے غریب ممالک کی حکومتوں کو اس سے رجوع کرنا پڑتا ہے اور قرض کے ساتھ ملحقہ شرمناک شرائط بھی ماننا پڑتی ہیں۔ اس میں ایک بڑا مسئلہ یہ ہے کہ عالمی بنک غیر ملکی زرِمبادلہ میں قرض دیتا ہے جو اسی زرِمبادلہ میں واپس کرنا پڑتا ہے۔ دوسری طرف بین الاقوامی مالیاتی فنڈ ترقی پذیر ممالک پر اثر ڈال کر ان کے روپے کی قیمت میں کمی کرواتی ہے۔ اس سے قرضوں کی مقدار قرض لیے بغیر ہی بڑھ جاتی ہے۔ اس کے علاوہ جب عالمی بنک کوئی قرض دیتا ہے تو اس کی پہلی قسط دینے سے پہلے وہ پچھلے قرضوں کا سود اور قسط کاٹتا ہے۔ کچھ ممالک کو تو نئے قرض کا صرف دس فی صد سے بھی کم اصل میں ملتا ہے۔ پاکستان بھی ان ممالک میں شامل ہے۔

بیرونی روابط[ترمیم]

مزید دیکھیئے[ترمیم]

حوالے[ترمیم]

  1. ^ http://web.worldbank.org/WBSITE/EXTERNAL/EXTABOUTUS/ORGANIZATION/BODEXT/0,,contentMDK:22427666~pagePK:64020054~piPK:64020408~theSitePK:278036,00.html
  2. ^ "Board of Directors". World Bank. http://go.worldbank.org/11PWB3RTM0. Retrieved 14 August 2011.