جابر حسین

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
جابر حسین
معلومات شخصیت
پیدائش 5 جون 1945 (74 سال)  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں تاریخ پیدائش (P569) ویکی ڈیٹا پر
بہار  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں مقام پیدائش (P19) ویکی ڈیٹا پر
شہریت Flag of India.svg بھارت
British Raj Red Ensign.svg برطانوی ہند  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں شہریت (P27) ویکی ڈیٹا پر
جماعت راشٹریہ جنتا دل  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں سیاسی جماعت کی رکنیت (P102) ویکی ڈیٹا پر
عملی زندگی
پیشہ سیاست دان،  ومصنف  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں پیشہ (P106) ویکی ڈیٹا پر
پیشہ ورانہ زبان اردو  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں زبانیں (P1412) ویکی ڈیٹا پر
اعزازات

جابر حسین 5 جون 1945ء کو راج گیر میں پیدا ہوئے۔ وہ راشٹریہ جنتا دل پارٹی سے تعلقات رکھنے والے سیاست دان تھے اور بہار میں راجیا سبھا ، بھارتی پارلیمانی رکن تھے۔[2] وہ ایک اشاعت یافتہ مصنف بھی تھے۔حسین کو 2005ء میں اردو میں یادگار کام کرنے پر ستھیا اکیڈمی ایوارڈ سے بھی نوازا گیا۔

ہندی اور اردو کے معروف مصنف جابر حسین 5 جون 1947ء کو پیدا ہوئے۔ ان کے والد کا نام سید سیف الدین اور والدہ کا نام نجم النساء بیگم تھا۔ وہ  بہار کے ضلع نالندا میں ایک بہت ہی تاریخی مقام راج گیر میں پیدا ہوئے۔

وہ انگریزی زبان اور انگریزی ادب، اردو اور ہندی زبانوں میں میں ایم-اے تھے۔انہوں نے انگریزی زبان اور ادب کے پروفیسر کی حیثیت سے ماگھڑ یونیورسٹی کے تحت کامرس کالج، پٹنا میں کام کیا۔ 18 ستمبر 1972ءکو انہوں نے عشرت حسین سے شادی کی۔

1974ء میں انہوں نے جے پرکاش نارائن کی زیر قیادت تحریک میں بہت گہری دلچسپی لیتے ہوئے سرگرم کردار ادا کیا۔ وہ میسا سے علاحدہ ہو گئے، یونیورسٹی سروس سے انہیں نکال دیا گیا اور انہیں صعوبتیں برداشت کرنی پڑیں۔ بعد ازاں وہ 1977ء میں مونگر ودھان سبھا سے بڑے بھاری ووٹوں سے منتخب ہوئے۔

انہوں نے مرحوم کارپوری ٹھاکر کے وزارت میں صحت کے شعبے میں کیبنیٹ مینیجر بننے کی ذمہ داری لی۔انہوں نے دیہی علاقوں میں طبی سہولیات کے پھیلاؤ اور بھارتی طبی نظام کی ترقی کے لیے کام کیا۔

جون 1994ء میں گورنر نے انہیں بہار قانون ساز کونسل کا رکن نامزد کیا۔ تب 1995ء اپریل میں انہیں بطور قانون ساز کونسل کا چیئرمین تعینات کیا گیا۔ وہ 26 جولائی 1996ء بہار قانون ساز کونسل کے بلامقابلہ چیئر مین منتخب ہوئے۔ مئی 2000ء میں انہیں ودھان سبھا میں بطور خاص شامل کیا گیا۔

جابر حسین نے کونسل کے چیئرمین کے طور پر پارلیمانی سیاست میں مختلف جہتیں  متعارف کروائیں۔انہوں نے معاصر پارلیمانی، ثقافتی اور سماجی مسائل پر جمہوری انداز سے بات چیت کی روایت ڈالی۔انہوں نے جھاریا لینڈ سلائیڈ، جڑوگودا ریڈی ایشن افیکٹس، چائلڈ لیبر، عوامی خواندگی، ضروری تعلیم، دریاؤں کا مسئلہ، بچوں کے حقوق وغیرہ جیسے اہم موضوعات سے متعلق مسائل کا حل تلاشنے میں بہت اہم اور سرگرم کردار ادا کیا۔

وہ ان چند نایاب سیاست دانوں میں شمار ہوتے ہیں جنہیں ان کی خدمات پر ستھیا اکیڈمی ایوارڈ سے نوازا گیا۔

حوالہ جات[ترمیم]

  1. http://sahitya-akademi.gov.in/awards/akademi%20samman_suchi.jsp#URDU
  2. "Parliament panel to study nuclear safety"۔ دی ہندو۔ اپریل 2, 2011۔ مورخہ 25 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 6 مئی 2012۔

بیرونی روابط[ترمیم]