جیمس باسویل

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
جیمس باسویل
(انگریزی میں: James Boswell ویکی ڈیٹا پر مقامی زبان میں نام (P1559) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
James Boswell by Sir Joshua Reynolds.jpg 

معلومات شخصیت
پیدائش 29 اکتوبر 1740[1][2] اور 18 اکتوبر 1740[3]  ویکی ڈیٹا پر تاریخ پیدائش (P569) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
ایڈنبرگ[4]  ویکی ڈیٹا پر مقام پیدائش (P19) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
وفات 19 مئی 1795 (55 سال)[1][5][2][6][7][8]  ویکی ڈیٹا پر تاریخ وفات (P570) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
لندن  ویکی ڈیٹا پر مقام وفات (P20) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
شہریت Flag of Great Britain (1707–1800).svg مملکت برطانیہ عظمی
Flag of the United Kingdom.svg مملکت متحدہ[9]  ویکی ڈیٹا پر شہریت (P27) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
عملی زندگی
مادر علمی جامعہ ایڈنبرگ[4]
جامعہ گلاسگو
یوتریخت یونیورسٹی[4]  ویکی ڈیٹا پر تعلیم از (P69) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
پیشہ روزنامچہ نگار، مصنف، وکیل[4]، سوانح نگار  ویکی ڈیٹا پر پیشہ (P106) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
پیشہ ورانہ زبان انگریزی[10]  ویکی ڈیٹا پر زبانیں (P1412) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
ملازمت جامعہ ایڈنبرگ  ویکی ڈیٹا پر نوکری (P108) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
P literature.svg باب ادب

جیمس باسویل (انگریزی: James Boswell) (پیدائش: 29 اکتوبر 1740ء - وفات: 19 مئی 1795ء) اسکاٹ لینڈ سے تعلق رکھنے والے انگریزی زبان کے مصنف، سفرنامہ نویس اور سوانح نگار تھا۔ وہ سیموئیل جانسن کے سوانح نگار کی حیثیت سے ادبی دنیا میں مشہور ہوئے۔

حالات زندگی[ترمیم]

جیمس باسویل 29 اکتوبر 1740ء کو ایڈنبرگ، اسکاٹ لینڈ میں پیدا ہوئے۔[11] ان کے والد اسکاٹ لینڈ کے ایک سربر آوردہ جج تھے اور انہی کے اصرار پر باسویل کو بھی قانون کی تعلیم حاصل کرنی پڑی، پھر ساری عمر وکالت کرتے رہے لیکن اس کی دلچسپی ہمیشہ ادبی سرگرمیوں پر مرکوز رہی۔ 1763ء میں باسویل لندن آئے۔ جہاں ان کی مشہور انگریزی ادیب سیموئیل جانسن سے ملاقات ہو گئی۔ وہ اس کا بڑا مداح بن گیا۔ لندن میں قیام کے دوران وہ سیموئیل جانسن کے بہت قریب آ گیا۔ اس کی کہی ہوئی باتیں وہ روزانہ نوٹ کرتا جاتا تھا۔ اسی کی بنیاد پر اس نے سیموئیل جانسن کی سوانح حیات مرتب کی، بعض نقادوں کا خیال ہے کہ جانسن آج باسویل کی اسی تصنیف کی وجہ سے اتنا مشہور ہے۔ باسویل کو سیر کا بہت شوق تھا، اس نے یورپ کا سفر کیا۔ وہاں والٹیئر اور روسو سے ملا۔ اسے ادبی شہرت کارسیکا کے بارے میں ایک سفرنامہ تحریر کرنے سے حاصل ہوئی۔باسویل ایک شرابی، عیاش اور شیخی باز شخص تھا، لیکن اس کے باوجود اس کے قلم سے اس معرکہ کی تصنیف کا نکلنا حیرانی کی بات ہے۔ باسویل کا شمار مغرب کے سوانح نگاروں کی صف اول میں ہوتا ہے۔ بلکہ بعض نقاد اسے سب سے بڑا سوانح نگار مانتے ہیں۔[12]

آخری عمر میں باسویل غربت اور خرابیِ صحت کا شکار رہے۔ عیاشی کی زندگی رنگ لائی۔ بعد کے دور میں باسویل کے کئی مسودوں، خطوط، مضامین وغیرہ کا پتہ چلا اور یہ کئی جلدوں میں شائع ہوئے۔ جیمس باسویل 19 مئی 1795ء کو لندن میں انتقال کر گئے۔[11][12]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. ^ ا ب http://data.bnf.fr/ark:/12148/cb11893082f — اخذ شدہ بتاریخ: 10 اکتوبر 2015 — اجازت نامہ: آزاد اجازت نامہ
  2. ^ ا ب ایس این اے سی آرک آئی ڈی: https://snaccooperative.org/ark:/99166/w6m32t04 — بنام: James Boswell — اخذ شدہ بتاریخ: 9 اکتوبر 2017
  3. ایس این اے سی آرک آئی ڈی: https://snaccooperative.org/ark:/99166/w6m32t04 — بنام: James Boswell — اخذ شدہ بتاریخ: 27 اپریل 2014 — اجازت نامہ: CC0
  4. ^ ا ب پ مدیر: Christopher Hibbert — ناشر: Penguin Classics — ISBN 978-0-14-043116-2
  5. دائرۃ المعارف بریطانیکا آن لائن آئی ڈی: https://www.britannica.com/biography/James-Boswell — بنام: James Boswell — اخذ شدہ بتاریخ: 9 اکتوبر 2017 — عنوان : Encyclopædia Britannica
  6. دا پیرایج پرسن آئی ڈی: https://tools.wmflabs.org/wikidata-externalid-url/?p=4638&url_prefix=http://www.thepeerage.com/&id=p47313.htm#i473124 — بنام: James Boswell, 9th of Auchinleck — اخذ شدہ بتاریخ: 9 اکتوبر 2017 — مصنف: Darryl Roger Lundy
  7. ڈسکوجس آرٹسٹ آئی ڈی: https://www.discogs.com/artist/5487414 — بنام: James Boswell (2) — اخذ شدہ بتاریخ: 9 اکتوبر 2017
  8. Brockhaus Enzyklopädie online ID: https://brockhaus.de/ecs/enzy/article/boswell-james — بنام: James Boswell
  9. https://libris.kb.se/katalogisering/97mppfgt3ggh1hg — اخذ شدہ بتاریخ: 24 اگست 2018 — شائع شدہ از: 1 اکتوبر 2012
  10. http://data.bnf.fr/ark:/12148/cb11893082f — اخذ شدہ بتاریخ: 10 اکتوبر 2015 — اجازت نامہ: آزاد اجازت نامہ
  11. ^ ا ب جیمس باسویل، دائرۃالمعارف برطانیکا آن لائن
  12. ^ ا ب جامع اردو انسائیکلوپیڈیا (جلد-1 ادبیات)، قومی کونسل برائے فروغ اردو زبان، نئی دہلی،2003ء، ص 96