خاصکی سلطان

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
یہاں جائیں: رہنمائی، تلاش کریں

خاصکی سلطان (Haseki sultan) (عثمانی ترکی: خاصکی سلطان) عثمانی سلطان کی ایسی خاتون کا شاہی خطاب تھا جس نے ایک شہزادہ (şehzade) کو جنم دیا ہو۔ یعنی اس طرح اس کا مطلب شہزادہ کی ماں ہے۔ خاصکی سلطان کا محل میں ایک اہم مقام ہوتا تھا، جو والدہ سلطان (valide sultan) کے بعد حرم میں دوسری سب سے زیادہ طاقتور عورت سمجھی جاتی تھی۔

فہرست[ترمیم]

نام شادی سے قبل نام اصل اختتام عہدہ وفات شوہر
خرم سلطان
خُرَّم سلطان
Aleksandra or
Anastazja Lisowska
روتھینیائی۔
راسخ الاعتقاد پادری کی بیٹی
15 اپریل 1558 سلیمان اول
نور بانو سلطان
نور بانو سلطان
Cecilia Venier-Baffo or
Rachel or
Kalē Kartanou
وینس یا یہودی یونانی 15 دسمبر 1574
شوہر کی وفات
7 دسمبر 1583 سلیم ثانی
صفیہ سلطان
صفیہ سلطان
Sofia البانوی 15 جنوری 1595
شوہر کی وفات
10 نومبر 1618 مراد ثالث
فولانے سلطان نامعلوم جولائی 1598 محمد ثالث
کوسم سلطان
قسّم سلطان
Anastasia یونانی۔
تینوس جزیرے پر ایک پادری کی بیٹی
22 نومبر 1617
شوہر کی وفات
3 ستمبر 1651 احمد اول
عائشہ سلطان|(عثمان ثانی)
عایشہ سلطان
نامعلوم[1] 10 مئی 1622
شوہر کی برطرفی
after 1640 عثمان ثانی
عائشہ سلطان (مراد رابع)
عایشہ سلطان
نامعلوم 8 فروری 1640
شوہر کی وفات
1680 مراد رابع
صنوبر سلطان
صنوبر سلطان
بوسنیائی 8 فروری 1640
شوہر کی وفات
1677
تورخان خدیجہ سلطان
ترخان سلطان
نامعلوم روسی 12 اگست 1648
شوہر کی وفات
5 جولائی 1683 ابراہیم اول
خدیجہ معزز سلطان نامعلوم[2] 12 اگست 1648
شوہر کی وفات
1687
صالحہ دل آشوب سلطان نامعلوم[2] 12 اگست 1648
شوہر کی وفات
4 دسمبر 1689
عائشہ سلطان Ayşe کریمیائی تاتار 12 اگست 1648
شوہر کی وفات
Mahienver Sultan چیرکاسیائی 12 اگست 1648
شوہر کی وفات
Saçbağlı Sultan Leyla چیرکاسیائی 12 اگست 1648
شوہر کی وفات
1694
Şivekar Sultan Meryem آرمینی 12 اگست 1648
شوہر کی وفات
ہما شاہ سلطان
ھما شاہ سلطان
چیرکاسیائی 12 اگست 1648
شوہر کی وفات
1672
رابعہ گلنوش سلطان
گلنوش سلطان
Evmania Voria یونانی 8 نومبر 1687
شوہر کی برطرفی
6 نومبر 1715 محمد رابع
رابعہ سلطان 6 فروری 1695
شوہر کی برطرفی
14 جنوری 1712 احمد ثانی

حوالہ جات[ترمیم]

  1. Peirce (1993) p.106
  2. ^ 2.0 2.1 A.D. Alderson, The Structure of the Ottoman Dynasty، Clarendon Press, Oxford, 1955, p.83