دنیش گپتا

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
دنیش گپتا
(بنگالی میں: দীনেশ গুপ্ত ویکی ڈیٹا پر (P1559) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
Dinesh Gupta.jpg
 

معلومات شخصیت
پیدائش 6 دسمبر 1911  ویکی ڈیٹا پر (P569) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
بکرم پور،  بنگال پریزیڈنسی  ویکی ڈیٹا پر (P19) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
وفات 7 جولا‎ئی 1931 (20 سال)  ویکی ڈیٹا پر (P570) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
علی پور جیل،  کولکاتا  ویکی ڈیٹا پر (P20) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
وجہ وفات پھانسی  ویکی ڈیٹا پر (P509) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
طرز وفات سزائے موت  ویکی ڈیٹا پر (P1196) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
شہریت British Raj Red Ensign.svg برطانوی ہند  ویکی ڈیٹا پر (P27) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
عملی زندگی
مادر علمی ڈھاکہ کالج  ویکی ڈیٹا پر (P69) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
پیشہ انقلابی  ویکی ڈیٹا پر (P106) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
پیشہ ورانہ زبان بنگلہ  ویکی ڈیٹا پر (P1412) کی خاصیت میں تبدیلی کریں

دنیش گپتا (انگریزی: Dinesh Gupta، بنگلہ= দীনেশ গুপ্ত)، پیدائش: دنیش چندر گپتا، 6 دسمبر، 1911ء - وفات: 7 جولائی، 1931ء) بنگال کے مشہور انقلابی اور تحریک آزادی ہند کے مجاہد تھے۔ سبھاش چندر بوس کی منظم کی ہوئی انقلابی تنظیم بنگال والٹیئرز کے رکن تھے۔ دنیش نے بادل گپتا، بنوئے باسو اور دیگر انقلابیوں کے ساتھ مل کر بنگال میں برطانوی راج کے خلاف مسلح جدوجہد میں ان کا اہم کر دار تھا۔ کلکتہ کے ڈلہوذی اسکوائر (موجودہ بی بی ڈی باغ) کے علاقے میں رائٹرز بلڈنگ میں انسپکٹر جنرل (جیل) کرنل این ایس سیمسن کے قتل میں شریک ہوئے، قتل کے مقدمے میں انہیں موت کی سزا سنائی گئی اور کلکتہ جیل میں پھانسی دی گئی۔

حالات زندگی[ترمیم]

دنیش گپتا 6 دسمبر 1911ء کو جشولونگ، پرگنہ بکرم پور، (موجودہ ضلع منشی گنج، بنگال پریزیڈنسی (حالیہ بنگلہ دیش) میں پیدا ہوئے۔[1] ان کے والد کا نام ستیش چندر گپتا تھا۔ وہ ڈھاکہ کالج میں دورانِ تعلیم انقلابی تنظیم بنگال والٹیئرز کے رکن بنے، جسے بنگال والٹیئرز کو ہندوستان کے مشہور رہنماسبھاش چندر بوس نے 1928ء کو انڈین نیشنل کانگریس کے کلکتہ سیشن کے دوران منظم کیا تھا۔ بنگال والنٹیئرز نے بہت ہی کم عرصے میں ایک انقلابی تنظیم کے طور پر شہرت حاصل کی اور بہت سے برطانوی پولیس افسران پر مسلح حملے کیے اور انہیں قتل کیا۔ انہوں نے مدناپور، مغربی بنگال میں بہت سے مقامی انقلابیوں کو اسلحہ چلانے کی ٹریننگ بھی دی اور ان کے ٹریننگ یافتہ انقلابیوں نے تین برطانوی ضلعی مجسٹریٹوں کو قتل بھی کیا۔ 8 دسمبر 1930ء کو دیگر ساتھیوں بنوئے باسو اور بادل گپتا کے ہمراہ کلکتہ کے ڈلہوذی اسکوائر میں واقع رائٹرز بلڈنگ میں انسپکٹر جنرل جیل کرنل این ایس سیمسن (Col. N. S. Simpson) کے قتل میں شریک ہوئے۔ گرفتاری سے بچنے کے لیے ریوالور سے خودکشی کی ناکام کوشش کی جس میں وہ زخمی ہو گئے۔ بالآخر انہیں گرفتار کر لیا گیا اور قتل کا مقدمہ چلایا گیا۔ جیل میں انہیں بے پناہ جسمانی اذیتیں دی گئیں۔ مقدمہ میں موت کی سزا سنائی گئی۔ 7 جولائی 1931ء کو کلکتہ کے علی پور جیل میں انہیں پھانسی دے دی گئی۔[2][3] تقسیم ہند کے کے بعد ڈلہوذی اسکوائر کو یادگار کے طور پر بینوئے-بادل-دنیش باغ (Benoy-Badal-Dinesh Bagh) یعنی بی بی ڈی باغ کر دیا گیا۔ انہوں نے مشہور روسی افسانہ نگار چیخوف کی ایک کہانی کا بنگالی میں ترجمہ بھی کیا تھا جو بنگالی جریدے پراباسی میں شائع ہوئی۔[2][4]

مزید دیکھیے[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. Mohanta، Sambaru Chandra (2012). "Gupta, Dinesh Chandra". In Islam، Sirajul؛ Jamal، Ahmed A. Banglapedia: National Encyclopedia of Bangladesh (ایڈیشن Second). Asiatic Society of Bangladesh. 
  2. ^ ا ب Prithwish C. Gupta (2016). Shahid Dinesh (Bengali). Kolkata: Shrayan. صفحہ 81. ISBN 978-81-926712-6-0. 
  3. شہیدانِ آزادی (جلد اول)، چیف ایڈیٹر: ڈاکٹر پی این چوپڑہ، قومی کونسل برائے فروغ اردو زبان نئی دہلی، 1998ء، ص 426
  4. AMIT ROY (15 June 2008). "Hanged Bengali icon's great-niece bags MBE". telegraphindia.com. اخذ شدہ بتاریخ 02 اگست 2017.