شاہ اسماعیل دہلوی

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
(شاہ اسماعیل شہید سے رجوع مکرر)
Jump to navigation Jump to search
شاہ اسماعیل دہلوی
مقبرہ شاہ اسماعیل
مقبرہ شاہ اسماعیل

معلومات شخصیت
تاریخ پیدائش 26 اپریل 1779ء
وفات 6 مئی 1831ء
بالاکوٹ  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں مقام وفات (P20) ویکی ڈیٹا پر
عملی زندگی
پیشہ مصنف  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں پیشہ (P106) ویکی ڈیٹا پر

شاہ ولی اللہ کے پوتے اور حضرت شاہ عبد الغنی کے بیٹے۔ ان کی تعلیم و تربیت ان کے چچا شاہ عبدالعزیز کے زیر سایہ ہوئی۔سید احمد بریلوی نے سکھوں کے خلاف جو جہاد کیا تھا شاہ اسماعیل اس میں اُن کے دست راست رہے اور بالاخر بالاکوٹ ضلع ہزارہ میں شہید ہوئے۔بالاکوٹ میں ہی سید احمد بریلوی کے ساتھ مدفون ہیں۔ان کی مشہور کتاب تقویۃ الایمان ہے اس کے علاوہ اصول فقہ، منصب امامت، عبقات، مثنوی سلک نور اور تنویر العینین فی اثبات رفع الیدین بھی اس کی تصانیف ہیں۔

آپ نامور محدث ومجاہد، حضرت شاہ عبد الغنی دہلویؒ کے فرزند، حضرت شاہ عبد العزیزدہلویؒ، حضرت شاہ رفیع الدین دہلویؒ اور شاہ عبد القادر دہلویؒ کے بھتیجے اور حضرت شاہ ولی اللہ دہلویؒ کے پوتے اور حضرت شاہ عبد الرحیم دہلویؒ کے پرپوتے تھے۔

ولادت[ترمیم]

آپ کی ولادت صحیح اور مستند روایت کے مطابق 12؍ ربیع الاول 1193ھ مطابق 26؍ اپریل 1779ء کو دہلی میں ہوئی۔ آپ کی والدہ کا نام بی بی فاطمہ تھا۔

تعلیم وتربیت[ترمیم]

آپ نے ابتدائی تعلیم اپنے والد ماجد سے حاصل کی، آٹھ سال کی عمر میں تکمیلِ حفظِ قرآن مجید فرمایا۔ جب آپ کی عمر دس برس کی ہوئی، تو والدماجد کا انتقال ہو گیا۔ والد کے انتقال کے بعد درسی کتابیں حضرت شاہ عبد القادر دہلویؒ سے پڑھیں اور سندِ حدیث حضرت شاہ عبد العزیز دہلویؒ سے لی۔ پندرہ سال کی عمر میں تحصیلِ علم سے فارغ ہوئے۔

راہِ سلوک[ترمیم]

تحصیل علم سے فراغت کے بعد آپ نے حضرت سید احمد شہید رائے بریلویؒ کی خدمت میں رہ کر طریقِ سلوک طے کیا۔ آپ حضرت رائے بریلویؒ سے سات سال بڑے تھے۔

آپ کا علمی واصلاحی کارنامہ[ترمیم]

آپ جہاں بہت بڑے عالم ومجاہد اور واعظ ومبلغ تھے وہیں بہترین مصنف بھی تھے۔ آپ کے علمی کارناموں میں تقویۃ الایمان ،منصبِ امامت اورصراطِ مستقیم وغیرہ آپ کے علم وفضل کا شاہ کارہیں ۔ آپ نے اس وقت کے رسم و رواج، بدعات وخرافات کی بذریعہ تقریر وتحریر دھجّیاں بکھیر دیں جو آپ کا زبردست اصلاحی کارنامہ ہے۔

آپ میدانِ جہاد میں[ترمیم]

آپ 1241ھ میں اپنے پیر و مرشد (حضرت سید احمد شہیدؒ) کے ارشاد پر انگریزوں اور سکھوں کے خلاف جہاد کے لیے نکلے۔ چند سال مسلسل معرکہ ہائے جہاد وقتال میں شرکت ورہنمائی کے بعد 1246ھ مطابق 1831ء میں بمقام بالاکوٹ کفار سے جنگ کرتے ہوئے شہیدہوگئے، اس وقت آپ کی عمر 53؍ سال کی تھی۔ [1] [2]

مزید دیکھیے[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. فقہائے پاک وہند 3؍187،تذکرۂ محدثین ص207، تاریخ دعوت وعزیمت 5/377،آثار الصنادید ص 81
  2. تذکرہ اکابر، تالیف مولانا نظام الدین صاحب قاسمیؔ استاذ جامعہ اشاعت العلوم اکل کوا، صفحہ 44 http://www.elmedeen.com/read-book-4994&&page=49#page-44&viewer-text