مندرجات کا رخ کریں

موسی بن اسماعیل تبوذکی

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
موسی بن اسماعیل تبوذکی
معلومات شخصیت
پیدائشی نام موسى بن إسماعيل التبوذكي
وجہ وفات طبعی موت
رہائش بصرہ
شہریت خلافت عباسیہ
کنیت ابو سلمہ
مذہب اسلام
فرقہ اہل سنت
عملی زندگی
طبقہ 9
نسب البصری ، المنقری
ابن حجر کی رائے ثقہ
ذہبی کی رائے ثقہ
استاد ابان بن یزید ، مبارک بن فضالہ ، شعبہ بن حجاج ، عبد اللہ بن مبارک ، حماد بن سلمہ ، یزید بن ابراہیم تستری ، عبدالعزیز بن عبداللہ ماجشون
نمایاں شاگرد محمد بن اسماعیل بخاری ، ابو داؤد ، ابو زرعہ رازی ، یحییٰ بن معین ، ابو حاتم رازی
پیشہ محدث
شعبۂ عمل روایت حدیث

ابو سلمہ موسیٰ بن اسماعیل منقری بصری تبوذکی (وفات :223ھ )، آپ ابوجعفر منصور کی خلافت کے آغاز میں پیدا ہوئے۔آپ کو شیخ الاسلام کہا جاتا ہے اور آپ ثقہ حدیث نبوی کے راویوں میں سے ایک ہیں۔آپ نے دو سو تیئیس ہجری میں بصرہ میں وفات پائی ۔

شیوخ[ترمیم]

اس کی سند سے مروی ہے: ابان بن یزید عطار، اعین خوارزمی ، جو صغار تابعین میں سے تھے اور جریر بن حازم اور شعبہ بن حجاج کی ایک حدیث اور جویریہ بن اسماء، حماد بن سلامہ، قاسم بن فضل، ہمام بن یحییٰ، مبارک بن فضلہ، ابو ہلال اور یزید بن ابراہیم تستری اور محمد بن راشد مخولی، سلیمان بن مغیرہ، ضحاک بن نبراس، عبد العزیز بن ماجشون، عبد العزیز بن مختار، عبد العزیز بن مسلم، مہدی بن میمون، وہیب، عبد اللہ ابن مبارک اور حماد بن زید اور دیگر محدثین۔[1][2]

تلامذہ[ترمیم]

اس کی سند سے روایت کیا ہے: امام بخاری، ابوداؤد اور بقیہ بن ولید کی سند سے، حسن بن علی خلال، یحییٰ بن معین، محمد بن یحییٰ، احمد بن حسن ترمذی، ابو زرعہ رازی، یعقوب فسوی، ابراہیم بن دیزیل، ابراہیم حربی، اسماعیل سمویہ اور ابو حاتم اور محمد بن غالب تمتام، ابن وارہ، ابو الاحوص عکبری، محمد بن ایوب بن ضریس ، عباس بن فضل اسفاطی ، ان کی اولاد امام ابوبکر بن ابی عاصم اور احمد بن داؤد مکی۔ [3]

جراح اور تعدیل[ترمیم]

ابو حاتم رازی نے کہا: وہ ثقہ ہے اور میں بصرہ میں کسی کو نہیں جانتا جس سے ہم نے ان سے بہتر حدیث حاصل کی ہو۔ ابو حاتم بن حبان بستی کہتے ہیں: وہ صاحبان میں سے تھے۔ احمد بن صالح جیلی نے کہا: ثقہ ہے۔ حافظ ذہبی نے کہا: حافظ ثقہ اور ثابت ہے۔ عبد الرحمٰن بن یوسف بن خراش کہتے ہیں: لوگوں نے ان کے بارے میں کہا اور وہ صدوق ہے۔ علی بن مدینی نے کہا: جس نے ان کے بارے میں نہیں لکھا اس نے ان کے بارے میں ایک آدمی کے بارے میں لکھا۔ محمد بن سعد، واقدی کا مصنف نے کہا: ثقہ ہے اور اس کی بہت سی احادیث ہیں۔ ہشام بن عبد الملک طیالسی نے کہا: وہ ثقہ اور صفوق ہے۔ یحییٰ بن معین نے کہا: ثقہ اور قابل اعتماد۔ ابن حجر عسقلانی نے کہا: ثقہ اور ثابت ہے۔[4] [5]

وفات[ترمیم]

آپ کی وفات بصرہ میں رجب کے مہینے 223ھ میں ہوئی۔

حوالہ جات[ترمیم]

  1. شمس الدين الذهبي (1985)، سير أعلام النبلاء، تحقيق: شعيب الأرنؤوط، مجموعة (ط. 1)، بيروت: مؤسسة الرسالة، ج. العاشر، ص. 361،
  2. معلومات الراوي موسى بن إسماعيل التبوذكي المكتبة الإسلامية. وصل لهذا المسار في 30 يوليو 2016 آرکائیو شدہ 2017-03-26 بذریعہ وے بیک مشین
  3. ابن أبي حاتم (1952)، الجرح والتعديل (دائرة المعارف العثمانية، 1952م) (ط. 1)، بيروت، حيدر آباد: دائرة المعارف العثمانية، دار الكتب العلمية، ج. الثامن، ص. 136
  4. معلومات الراوي موسى بن إسماعيل التبوذكي المكتبة الإسلامية. وصل لهذا المسار في 30 يوليو 2016 آرکائیو شدہ 2017-03-26 بذریعہ وے بیک مشین
  5. سانچہ:استشهاد بويكي بيانات