مہوا موئتر

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
مہوا موئتر
مناصب
رکن مغربی بنگال قانون ساز اسمبلی   ویکی ڈیٹا پر (P39) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
آغاز منصب
2016 
رکن سترہویں لوک سبھا   ویکی ڈیٹا پر (P39) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
رکنیت سنہ
23 مئی 2019 
حلقہ انتخاب کرشنا نگر لوک سبھا حلقہ 
پارلیمانی مدت 17ویں لوک سبھا 
معلومات شخصیت
پیدائش سنہ 1976 (عمر 43–44 سال)  ویکی ڈیٹا پر (P569) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
کولکاتا  ویکی ڈیٹا پر (P19) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
شہریت Flag of India.svg بھارت  ویکی ڈیٹا پر (P27) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
جماعت آل انڈیا ترنامول کانگریس  ویکی ڈیٹا پر (P102) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
عملی زندگی
مادر علمی ماؤنٹ ہولیوک کالج  ویکی ڈیٹا پر (P69) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
پیشہ سیاست دان  ویکی ڈیٹا پر (P106) کی خاصیت میں تبدیلی کریں

مہوا موئتر بھارت کی سیاست دان، مقررہ اور سابق بینکر ہیں۔[1][2] وہ مغربی بنگال کی سیاست پارٹی آل انڈیا ترنمول کانگریس کی رکن ہیں۔ ابھی وہ کرشنا نگر لوک سبھا حلقہ سے لوک سبھا کی رکن ہیں۔ اس سے قبل وہ مغربی بنگال اسمبلی میں کریم پور سے ایم ایل اے تھیں۔

ابتدائی زندگی[ترمیم]

مہوا موئتر نے اپنی زندگی کے ابتدائی ایام آسام میں گزارے اور اس کے بعد کولکاتا چلی آئیں۔ پھر 15 برس کی عمر میں اہل خانہ کے ساتھ امریکا چلی گئیں جہاں انہوں نے ماؤنٹ ہولیوکے کالج سے معاشیات اور ریاضی کی تعلیم حاصل کی۔ تعلیم کے بعد انہوں نے لندن اور نیو یارک شہر میں جے پی مورگن چیز میں بحیثیت بینکر کام کیا اور نائب صدر بھی رہیں۔ 2008ء میں وہ واپس بھارت آئیں اور سیاست میں قدم رکھا۔[3][4][3]

سیاسی سفر[ترمیم]

2009ء میں انہوں نے ترنمول کانگریس میں شمولیت اختیار کی۔ قبل ازیں انہوں نے راہل گاندھی کی "عام آدمی کا سپاہی" میں بھی کام کیا مگر زمینی سطح پر اس کے اثرات میں کمی کا حوالہ دیتے ہوئے پارٹی سے استعفی دے دیا اور آل انڈیا ترنمول کانگریس میں شامل ہو گئیں۔ وہ مغربی بنگال کے ضلع ندیا کے کریم پور حلقہ سے ایم ایل اے بنیں۔[5][6] فی الحال وہ کرشنا نگر سے رکن لوک سبھا ہیں۔ 2016ء میں انہوں اپنے اثاثہ کا تخمینہ 2.5 کڑوڑ بتایا تھا۔[7] جولائی 2019ء میں انہوں نے مودی حکومت کے ذریعے کی جانے والی جاسوسی کے خلاف عدالت عظمی میں مقدمہ دائر کیا ہے۔[8]

تنازع[ترمیم]

جنوری 2017ء میں انہوں نے بھارتیہ جنتا پارٹی کے لیڈر بابل سوپریو کے خلاف ایک مقدمہ کیا، ان کا الزام تھا کہ موصوف نے ایک ٹی وی مباحثہ کے دوران میں ان کی بے عزتی کی ہے۔[9] جواباً سوپرایو نے بھی ان پر غلط الزامات لگانے کا مقدمہ کر دیا۔[10]

فعالیت[ترمیم]

مہوا موئتر نجی معلومات کے تحفظ کے لیے خاصی فعال رہ چکی ہیں اور انہوں نے اس کے لیے بھارت کے سپریم کورٹ سے بھی رجوع کیا تھا۔ ان کی کوششوں کی وجہ سے حکومت کو اور آدھار کارڈ کے منتظم ادارے یو آئی ڈی اے آئی کو ای میل اور سماجی ذرائع ابلاغ کی باضابطہ نگرانی کے منصوبے سے دست کش ہونا پڑا تھا۔[11]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. "Ex-investment banker Mahua Moitra has assets of over Rs 2.5 cr". انڈیا ٹوڈے. 1 اپریل 2016. اخذ شدہ بتاریخ 5 جون 2016. 
  2. "Ex-investment banker Mahua Moitra". Business Standard. 1 اپریل 2016. اخذ شدہ بتاریخ 5 جون 2016. 
  3. ^ ا ب Bhattacharya، Ravik (11 مئی 2010). "Key Youth Cong face in Bengal flirts with Trinamool". دی انڈین ایکسپریس. اخذ شدہ بتاریخ 19 جولائی 2017. 
  4. Dasgupta، Piyasree (6 فروری 2019). "Mahua Moitra Is The Only Politician Stopping Modi Govt From Creeping On Your Inbox". ہف پوسٹ. 
  5. "Winner and Runner up Candidate in Karimpur assembly constituency". elections.in. اخذ شدہ بتاریخ 5 جون 2016. 
  6. "MAHUA MOITRA KARIMPUR". این ڈی ٹی وی. اخذ شدہ بتاریخ 5 جون 2016.  [حوالہ میں موجود نہیں]
  7. "Ex-investment banker Mahua Moitra has assets of over Rs 2.5 cr". Business Standard. 1 اپریل 2016. 
  8. Dasgupta، Piyasree (6 فروری 2019). "Mahua Moitra Is The Only Politician Stopping Modi Govt From Creeping On Your Inbox". HuffPost. 
  9. Ali، Arshad (10 جنوری 2017). "TMC MLA Mahua Moitra accuses Babul Supriyo of insulting her modesty, Union Minister laughs it off". زی نیوز. اخذ شدہ بتاریخ 26 جون 2019. 
  10. Kumari، Sweety (11 جنوری 2017). "Rose valley chit fund case: Babul Supriyo sends defamation notices to TMC leaders for linking him to scam". India Express. اخذ شدہ بتاریخ 26 جون 2019. 
  11. https://www.herzindagi.com/society-culture/mahua-moitra-fighting-for-invasion-of-privacy-by-govt-on-social-media-article-94020

بیرونی روابط[ترمیم]