بین الاقوامی عدالت جرائم

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
:چھلانگ بطرف رہنمائی، تلاش
International Criminal Court
بین الاقوامی عدالتِ جرائم
Membership (as of March 2011), Orange denotes states where membership treaty is signed but not ratified
Membership (as of March 2011), Orange denotes states where membership treaty is signed but not ratified
Seat ہیگ, Netherlands
Working languages English and French
Membership 114 states
قائدین
 -  President Song Sang-Hyun
 -  First Vice-President Fatoumata Dembélé Diarra
 -  Second Vice-President Hans-Peter Kaul
 -  Judges Elizabeth Odio Benito
Akua Kuenyehia
Erkki Kourula
Anita Ušacka
Adrian Fulford
Sylvia Steiner
Ekaterina Trendafilova
Daniel David Ntanda Nsereko
Bruno Cotte
Joyce Aluoch
Sanji Mmasenono Monageng
Christine Van Den Wyngaert
Cuno Tarfusser
René Blattmann
 -  Prosecutor Luis Moreno Ocampo
قیام
 -  Rome Statute adopted 17 July 1998 
 -  Entered into force 1 July 2002 
موقع جال
www.icc-cpi.int

بین الاقوامی عدالتِ جرائم مستقل عدالت ہے جس کا مقصد ایسے افراد پر مقدمہ چلانا ہے جو قوم کشی، جنگی جرائم، انسانیت کے خلاف جرائم، اور جارحیت کے جرائم کے مرتکب ہوں۔

یہ عدلات 1 جولائی 2002ء کو وجود میں آئی، اور اس تاریخ کے بعد کے واقعات پر مقدمہ چلا سکتی ہے۔ اس کا مقام نیدرلینڈ ہے مگر کسی جگہ بھی عدالت لگا سکتی ہے۔

اس عدالت پر عالمی طاقتوں کا ہتکھنڈہ ہونے کا الزام لگایا جاتا ہے۔ 2011ء میں اس نے لیبیا کے صدر کی گرفتاری کے پروانے کا مطالبہ کیا جبکہ امیریکی اور یورپی طاقتیں فضا سے لیبیا پر بمباری کے جرم کا ارتکاب کر رہی تھی۔[1] [2]

افریقی اتحاد نے "عدالت" کا افریقی تعصب دیکھتے ہوئے افریقی سربراہان مملکت کا عدالت کے سامنے پیش ہونے پر پابندی لگا دی۔[3]