حق خودارادیت

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
:چھلانگ بطرف رہنمائی، تلاش

ایک سیاسی نظریہ جس کی رو سے عام لوگوں کو یہ حق ہوتا ہے کہ وہ اپنے ملک میں اپنی پسند کے مطابق حکومت اور دیگر اداروں کی تشکیل کر سکیں۔ یہ اصطلاح پہلے جنگ عظیم اول کے دروان میں اتحادیوں نے جرمنی اور اس کے حواریوں کے خلاف مشرق وسطی اور وسطی یورپ کے ممالک میں پراپیگنڈا کرنے کے لیے استعمال کی کیونکہ یہ ممالک جرمنی اور ترکی کے محکوم تھے۔ صدر امریکا مسٹر ولسن نے اپنے 14 نکات میں اس اصول کا بھی ذکر کیا تھا اور پھر 1940ء میں امریکا اور برطانیہ نے اس اصول کو دوبارہ منشور اوقیانوس میں واضح طور پر بیان کیا۔ پاکستان نے مقبوضہ کشمیر میں حق خودارادیت کی ہمیشہ سے حمایت کی ہے۔

مزید دیکھیے[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]