آذر بیگدلی

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
آذر بیگدلی
معلومات شخصیت
پیدائش 7 فروری 1722  ویکی ڈیٹا پر تاریخ پیدائش (P569) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
اصفہان  ویکی ڈیٹا پر مقام پیدائش (P19) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
وفات سنہ 1781 (58–59 سال)  ویکی ڈیٹا پر تاریخ وفات (P570) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
قم  ویکی ڈیٹا پر مقام وفات (P20) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
شہریت Flag of Iran.svg ایران  ویکی ڈیٹا پر شہریت (P27) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
بہن/بھائی
عشاق اذری بیگدلی  ویکی ڈیٹا پر بہن/بھائی (P3373) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
عملی زندگی
پیشہ شاعر، ادیب، مصنف  ویکی ڈیٹا پر پیشہ (P106) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
پیشہ ورانہ زبان فارسی  ویکی ڈیٹا پر زبانیں (P1412) کی خاصیت میں تبدیلی کریں

آذر بیگدلی یا حاجی لطف علی اصفہانی (پیدائش: 7 فروری 1722ء — وفات: 1781ء) فارسی النسل مصنف اور تذکرہ نگار تھے۔ اُن کی وجہ فارسی ادب میں اُن کے تحریر کردہ فارسی زبان کے شعرا کے تذکرہ یعنی ’’آتش کدہ‘‘ ہے۔ جس میں اُنہوں نے اٹھارہویں صدی عیسوی تک کے تمام فارسی شعراء کا تذکرہ کیا ہے۔

سوانح[ترمیم]

پیدائش اور ابتدائی حالات[ترمیم]

آذر بیگدلی 7 فروری 1722ء کو اصفہان میں پیدا ہوئے۔ اُن کے والد آقا خان بیگدِلی تھے ۔ آذر کا تعلق ترکمانوں کے قبیلۂ بِیگدِلی سے تھا کیونکہ اُن کا نسب بیگدِلی خان سےجا ملتا ہے جو اِلدِگِز خان کے چار بیٹوں میں سے تیسرا تھا اور خود اِلدِگِز خان اوغوز خان کے چھٹے بیٹوں میں سے تیسرا تھا۔ غرض یہ کہ لطف علی اِسی نسبت سے بیگدِلی کہلائے۔[1]

افشار سلطنت میں سفر[ترمیم]

نادر شاہ کی حکومت کے پہلے سال میں آذر کے والد آقا خان بیگدلی لار اور سواحل فارس کی حکومت پر فائز کیے گئے۔[2][3] اِسی زمانے میں آذر شیراز آئے اور 2 سال بعد 1738ء میں بندر عباس کے قریب اُن کے والد آقا خان بیگدلی کا اِنتقال ہو گیا تو وہ اپنے چچا حاجی محمد بیگ کے ہمراہ حج کی ادائیگی کے لیے عراق کے راستے سے حجاز روانہ ہو گئے۔ ادائیگی حج سے واپسی پر مشہدِ مقدس میں امام علی ابن موسیٰ الرضا کے مزار کی زیارت کی۔ اِسی زمانے میں نادر شاہ ہندوستان پر اپنے مشہور حملے کے بعد لزگیوں کے خلاف لشکرکشی کے لیے جا رہا تھا کہ مشہد میں وارد ہوا اور آذر اُس کے ہمراہ ماژندران کے راستے آذربائیجان چلے گئے۔ یہ سفر غالباً مارچ 1741ء میں مشہد سے شروع ہوا تھا۔ آذر عراقِ عجم واپس آئے تو اپنے آبائی شہر اصفہان میں مقیم ہو گئے۔[4]

اواخر عمر[ترمیم]

جون 1747ء میں نادر شاہ کے قتل کے بعد آذر اُس کے جانشینوں کی ملازمت کرتے رہے جن میں علی شاہ افشار، ابراہیم شاہ افشار، شاہ اسماعیل افشار، شاہ سلیمان دؤم شامل ہیں۔ 1751ء میں جب کریم خان زند شاہِ ایران بن گیا تو آذر دربارِ شاہی سے الگ ہو گئے اور خود کو علمی کاوشوں کے لیے مختص کرتے ہوئے قم آگئے اور یہیں مقیم ہو گئے۔اواخر عمر میں جامۂ فقر پہن لیا یعنی وہ تصوف کی جانب مائل ہو گئے اور خود کو حکومتی اور شاہی کاموں سے الگ کر لیا۔

وفات[ترمیم]

آذر بیگدِلی کی وفات تقریباً 59 سال کی عمر میں 1781ء میں ہوئی۔

شعرگوئی[ترمیم]

آذر کے متعلق کہا جاتا ہے کہ اُنہوں نے سات ہزار اشعار کہے اور اِنہیں باقاعدہ مُدَوَّن بھی کیا مگر جب نادر شاہ کے عہد میں اصفہان لوٹا گیا تو اُن کا یہ مجموعہ کلام بھی ضائع ہو گیا۔ بعد میں اپنا کلام دوبارہ مرتب کیا۔ دیوانِ آذر کے نسخے بہت کمیاب ہیں اور کتب خانہ رام پور میں ایک دیوان جو آذر کا ہے، 64 اوراق پر مشتمل ہے جس میں تقریباً 200 غزلیں موجود ہیں۔[5][6]

مزید دیکھیے[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. آذر بیگدلی: تذکرۂ آتش کدہ، صفحہ 363۔ مطبوعہ تہران، 1958ء
  2. سائیکس: جلوسِ نادری، جلد 2، صفحہ 254۔
  3. لاک ہارٹ: نادر شاہ، صفحہ 96۔
  4. اردو دائرہ معارف اسلامیہ: جلد 1ول، صفحہ 22۔
  5. اورئینٹل کالج میگزین، لاہور، اگست 1930ء، صفحہ 67۔
  6. فہرست خطی رضا لائبریری، رام پور، شمارہ 3734۔