ابو الفتوح الرازی

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search


ابو الفتوح الرازی
معلومات شخصیت
پیدائش سنہ 1087  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں تاریخ پیدائش (P569) ویکی ڈیٹا پر
رے  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں مقام پیدائش (P19) ویکی ڈیٹا پر
وفات سنہ 1157 (69–70 سال)  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں تاریخ وفات (P570) ویکی ڈیٹا پر
رے  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں مقام وفات (P20) ویکی ڈیٹا پر
شہریت Black flag.svg خلافت عباسیہ  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں شہریت (P27) ویکی ڈیٹا پر
عملی زندگی
قابل ذکر شاگرد شیخ الصدوق،  ابن شہر آشوب  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں شاگرد (P802) ویکی ڈیٹا پر
پیشہ الٰہیات دان،  مفسر قرآن  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں پیشہ (P106) ویکی ڈیٹا پر
پیشہ ورانہ زبان فارسی  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں زبانیں (P1412) ویکی ڈیٹا پر
شعبۂ عمل الٰہیات،  تفسیر قرآن  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں شعبۂ عمل (P101) ویکی ڈیٹا پر
کارہائے نمایاں روض الجنان و الروح الجنان  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں کارہائے نمایاں (P800) ویکی ڈیٹا پر
P islam.svg باب اسلام

ابوالفتوح الرازی یا جمال الدین حسین بن علی نیشابوری رازی (پیدائش: 1087ء— وفات: 1157ء) شیعی، عالم، محدث و مفسر تھے۔ وہ شیعی محدثین شیخ ابوجعفر محمد بن علی بن بابویہ القمی، ابن شہر آشوب اور ابوحمزہ طوسی کے اُستاد تھے۔

سوانح[ترمیم]

نام و نسب[ترمیم]

ابو الفتوح کا دعویٰ تھا کہ اُن کا تعلق بدیل بن ورقا، صحابی ٔ رسول (صلی اللہ علیہ وسلم) سے ہے۔ ابو الفتوح کے جد نافع بن بدیل بن ورقا تھے۔ نسب کے اعتبار سے تعلق قبیلہ بنو خزاعہ سے تھا۔[1] اُن کے خاندان کے تمام افراد صاحبان علم و فضل ہیں اور انہیں معروف خاندان اور سلسلہ کے عنوان سے یاد کیا جاتا ہے۔[2]

سال پیدائش[ترمیم]

ابو الفتوح کی تاریخ پیدائش کے متعلق کوئی حوالہ یا تذکرہ کسی کتاب سے دستیاب نہیں ہو سکا البتہ قرائن و آثار کی روشنی میں کہا جاسکتا ہے کہ وہ 480ھ مطابق 1087ء کے قریب قریب پیدا ہوئے ہوں گے۔ مقام پیدائش رے ہے۔ الششتری صاحب مجالس المؤمنین کے قول کے مطابق ابو الفتوح علامہ ابو القاسم محمود الزمخشری کے معاصرین میں سے تھے۔ علامہ ابو القاسم محمود الزمخشری کی وفات 12 جون 1144ء کو ہوئی ۔

شیوخ[ترمیم]

ابو الفتوح نے جن شیوخ سے علم حاصل کیا، وہ یہ ہیں:

  • علی بن محمد نیشابوری رازی؛ ابو الفتوح رازی کے والد اور مسائل المعدوم و دقائق الحقایق جیسی کتابوں کے مولف۔
  • عبد الرحمن بن احمد خزاعی نیشابوری؛ مفید ثانی کے نام سے معروف۔
  • شیخ عبد الجبار بن مقری رازی؛ مفید رازی کے نام شے مشہور۔
  • قاضی حسن استر آبادی۔
  • سید ابو صمصام ذو الفقار۔
  • شیخ ابو علی حسن بن محمد طوسی؛ شیخ طوسی کے فرزند۔[3]
  • علامہ ابو القاسم محمود الزمخشری : ابوالفتوح رازی کے غیر شیعہ استاد اور تفسیر کشاف کے مولف ہیں۔ ابو الفتوح نے اپنی تفسیر میں انہیں اپنے استاد کے عنوان سے یاد کیا ہے۔[4]

مقام علمیت[ترمیم]

ابو الفتوح اپنے زمانہ کے بعض متداول علوم میں استاد کی حیثیت رکھتے تھے اور ان کی تفسیر ان کے علم نحو، قرات، حدیث، فقہ، اصول فقہ و تاریخ میں تبحر اور مہارت کو بیان کرتی ہے۔[2]

  • محمد باقر خوانساری، حسین بن علی خزاعی جو ابو الفتوح رازی کے نام سے مشہور ہیں، کو فارسی کی مشہور تفسیر کا مولف، تفسیر و علم کلام کے بارز علما، ادب کے ماہر ترین و بزرگ ترین علما اور علم حدیث کے بلند پایہ راویوں کے طور پر متعارف کراتے ہیں۔[5]
  • مرزا حسین نوری طبرسی (متوفی یکم اکتوبر 1902ء) ان کے بارے میں کہتے ہیں: استاد و پیشوائے مفسرین، کلام الہی کے ترجمان، جمال الدین ابو الفتوح حسین بن علی خزاعی رازی، مشہور بہ ابو الفتوح رازی دانشمند فاضل، فقیہ مفسر اور ادیب خبیر تھے اور کسب علم میں کمال کی منزلوں پر فائز تھے۔[6]

وعظ و خطابت[ترمیم]

ابو الفتوح اہل منبر تھے اور اس سے قلبی لگاو رکھتے تھے یہاں تک کہ ان کے اس ذوق کا آشکارا اثر ان کی تفسیر میں بھی دکھائی دیتا ہے۔ ان کی مجالس اور خطابت مقبول عام تھی اور ایک خاص موقعیت کی حامل تھی جس پر بعض لوگ رشک کرتے تھے۔ حاسدوں کی بدگوئی کی وجہ سے وہ کچھ عرصہ اس سے محروم رہے۔[2]

شاگرد[ترمیم]

  • ابن شہر آشوب، کتاب مناقب آل ابی طالب کے مولف۔
  • شیخ منتجب الدین رازی؛ کتاب الفہرست کے مولف۔
  • ابن حمزه طوسی
  • تاج الدین محمد بن :  حسین ابو الفتوح رازی کے فرزند۔[3]

وفات[ترمیم]

اُن کی خود نوشت تحریر کے مطابق، جو قطعہ وفات کی صورت میں موجود ہے اور جسے ریاض العلماء نے اپنی کتاب میں درج کیا ہے، وہ 552ھ تک زندہ تھے اور ان کی وفات سن 552ھ یا 556ھ میں ہوئی ہے۔انہیں ان کی وصیت کے مطابق اُنہیں رے شہر میں حمزہ بن موسیٰ بن جعفر کے صحن میں عبد العظیم حسنی کے مزار میں دفن کیا گیا۔[7]

مزید دیکھیے[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. ابوالفتوح الرازی: روض الجنان و الروح الجنان فی تفسیر القرآن، جلد 5، صفحہ 148، ذیل آیت 25، سورہ فتح۔ مطبوعہ نشر آستانِ قدس رضوی، مشہد۔
  2. ^ ا ب پ عرب زاده، شرح حال ابو الفتوح رازی ، 1384 شمسی ہجری،  شمارہ  94۔
  3. ^ ا ب محمد بن حسن امین العاملی: اعیان الشیعہ، جلد 6، صفحہ 125۔ مطبوعہ دارالتعارف، بیروت، 1414ھ
  4. منتجب الدین الرازی: روض الجنان، جلد 16، صفحہ 170، ذیل آیت 80، سورہ یٰس۔ مطبوعہ انتشارات مرعشی نجفی، قم، 1366 شمسی ہجری۔
  5. محمد باقر خوانساری: روضات الجنات، جلد 2، صفحہ 314۔ مطبوعہ قم، ایران
  6. مرزا حسین نوری طبرسی : خاتمہ مستدرک الوسائل،جلد 3، صفحہ 72۔ مطبوعہ قم، 1415ھ
  7. محمد بن حسن امین العاملی: اعیان الشیعہ، جلد 6، صفحہ 124۔ مطبوعہ دارالتعارف، بیروت، 1414ھ