اسکیتیا

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search

اسکیتیا یا سكيثيا (انگریزی: Scythia) کلاسیکی عہد میں وسطی یوریشیا کا ایک علاقہ تھا جس پر مشرقی ایرانی اسکیتیائیوں کا قبضہ تھا۔[1][2][3] یہ علاقہ وسطی ایشیاء، دریائے وسٹولا کے مشرق یورپ کا حصہ تھا۔ قدیم یونانیوں نے یورپ کے شمال مشرق اور بحیرہ اسود کے شمالی ساحل کے تمام علاقوں کو اسکیتیا (Scythia) کا نام دیا تھا۔ آہنی دور کے دوران، اس خطے میں اسکیتیائی ثقافت پھلی پھولی۔

اسکیتیائی- ابتدائی طور پر خانہ بدوش افراد کے نام سے یونانیوں کا نام - یہ لوگ کم از کم 11 ویں صدی قبل مسیح سے لیکر دوسری صدی عیسوی تک اسکیتیا میں آباد تھا۔[4] ساتویں صدی قبل مسیح میں، اسکیتیائیوں نے یوریشیا بھر میں بحیرہ اسود سے لے کر سائبریا کے پار سے چین کی حدود تک، کے بہت بڑے علاقوں پر قبضہ حاصل کیا۔[5][6] اسکیتیائیوں کے مقام اور وسعت وقت کے ساتھ مختلف ہوتی رہی۔ کچھ ذرائع دستاویز کرتے ہیں کہ اسکیتیائی ؤرجاوان لیکن پُر امن لوگ تھے۔[7] ان کے بارے میں زیادہ معلومات نہیں ہے۔

Scythia-Parthia 100 BC.png

جغرافیہ[ترمیم]

اس علاقے کو کلاسیکی مصنفین اسکیتیا کے نام جانتے ہیں جن میں یہ بھی شامل ہیں:

نقشہ[ترمیم]

فائل:Scythia in the VII–III Cen. B.C.jpg
سكيثيا، 7 سے 3 ویں صدی قبل مسح میں

پہلی اسکیتیائی سلطنت[ترمیم]

ساتویں صدی قبل مسیح میں، اسکیتیائی قفقاز کے اس پار بحیرہ اسود کے شمالی علاقوں سے داخل ہوئے۔

دوسری اسکیتیائی سلطنت[ترمیم]

5 ویں صدی قبل مسیح کے اختتام پر اور چوتھی صدی قبل مسیح میں سكيثيا کی معاشرتی ترقی یونانیوں کے ساتھ تجارت کی اس کے مراعات یافتہ مقام سے منسلک تھی۔

بعد میں اسکیتیائی کی سلطنتیں[ترمیم]

قرون وسطی میں رومی سلطنت کے خاتمے کے بعد 5 ویں صدی میں جرمینک قبیلوں کی زد میں آ گیا تھا اس کے بعد سابقہ ​​سكيثيا خانہ بدوشوں نے اپنے خانہ بدوش طرز زندگی کو ترک کر دیا، تھریس میں زرعی آبادی پر اپنا اقتدار برقرار رکھتے ہوئے سكيثيا معمولی (Scythia Minor) کو آباد کیا گیا۔

دوسری صدی قبل مسیح کے اختتام پر، اولبیا کو سكيثيا کے تسلط سے آزاد کرا لیا گیا لیکن وہ پرتھیا کے میتریڈیٹس اول کے تابع ہو گیا۔

حوالہ جات[ترمیم]

  1. Editors of Encyclopædia Britannica (2014-11-14). "Scythian – ancient people". دائرۃ المعارف بریٹانیکا. 27 مارچ 2017 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 08 مئی 2018.  سانچہ:VnEditors of Encyclopædia Britannica (2014-04-16). "Scythian". دائرۃ المعارف بریٹانیکا. 21 مئی 2014 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 16 مئی 2015.  سانچہ:Vn"Scythia (historical empire)". دائرۃ المعارف بریٹانیکا. اخذ شدہ بتاریخ 11 ستمبر 2018. THIS IS A DIRECTORY PAGE. Britannica does not currently have an article on this topic. 
  2. "Scythia". Columbia Electronic Encyclopedia. Columbia University Press. اخذ شدہ بتاریخ 16 مئی 2015. 
  3. "The Scythians". history-world.org. 28 مارچ 2015 میں اصل سے آرکائیو شدہ. 
  4. Thomas A. Lessman (2004). "World History Maps". Talessman's Atlas. Thomas Lessman. 08 دسمبر 2013 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 23 اکتوبر 2013. 
  5. Bell-Fialkoff، Andrew Villen، ویکی نویس (2000). The role of migration in the history of the Eurasian steppe : sedentary civilization vs. "barbarian" and nomad (ایڈیشن 1st). New York: St. Martin's Press. صفحہ 190. ISBN 0312212070. OCLC 909840823. 
  6. Kennedy، Maev (2017-05-30). "British Museum to go more than skin deep with Scythian exhibition". the Guardian (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 12 اکتوبر 2018. 
  7. electricpulp.com. "SCYTHIANS – Encyclopaedia Iranica". www.iranicaonline.org (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 23 اکتوبر 2018. 
  8. Sinor، Denis (1990). The Cambridge History of Early Inner Asia. Cambridge University Press. ISBN 978-0-521-24304-9. 
  9. Unterländer, 2017