اوبر

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
اوبر ٹیکنالوجیز انکارپوریشن
سابقہ
اوبر کیب
UberCab
(2009–2011)
پرائیویٹ
صنعت
قیام مارچ 2009؛ 10 برس قبل (2009-03)
بانی ٹراوس کالانک
گارٹ کیمپ
صدر دفتر سان فرانسسکو، کیلی فورنیا
علاقہ خدمت
بین الاقوامی، 633 شہروں میں[1]
کلیدی افراد
مصنوعات موبائل ایپلیکیشن، ویب سائٹ
خدمات
آمدنی Increase2.svg امریکی ڈالر 6.5 ارب (2016)[3]
کم امریکی ڈالر -2.8 ارب (2016)[4]
ملازمین کی تعداد
12,000 سے زائد[5]
ڈویژن اوبر ایٹس، اوٹو
ویب سائٹ www.uber.com
ٹراوس کالانک, اوبر کا سابقہ سی ای او 2013ء میں

اوبر (انگریزی: Uber Technologies Inc) امریکی کمپنی ہے جس کا صدر دفتر سان فرانسسکو، کیلیفورنیا میں واقع ہے۔ یہ کمپنی بین الاقوامی طور پر 633 مختلف شہروں میں کام کرتی ہے۔ یہ کمپنی کرایہ پر کاروں کی فراہمی اور کاروباری اشیاء کی ڈیلیوری کا کاروبار کرتی ہے۔ اوبر کے ڈرائیور اپنی ذاتی کاریں اس کمپنی کے ساتھ مل کر چلا سکتے ہیں۔ [6]

مئی 2017 میں اوبر ایپلیکیشن کا لوگو

نفع[ترمیم]

2016 میں اوبر کو منافع حاصل نہیں ہوا بلکہ 2.8 ارب امریکی ڈالر کا نقصان ہوا۔ [7]

سال 2014 2015 پہلی سہ ماہی'16 دوسری سہ ماہی '16
خالص ریونیو امریکی ڈالر 495.3ملین [8] امریکی ڈالر 1.5ارب امریکی ڈالر 960ملین[9] امریکی ڈالر 1.1ارب[9]
نقصان -امریکی ڈالر671ملین [10] اعلان نہیں کیا گیا -امریکی ڈالر 520ملین[9] -امریکی ڈالر 750ملین[9]

بیرونی روابط[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. "اوبر جن ممالک میں کام کرتی ہے"۔ www.uber.com۔ مورخہ 24 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 16 جولائی 2017۔
  2. "اوبر کا سی ای او، دارا خسروشاہی"۔ cnbc.com۔ مورخہ 24 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔
  3. کارسن بز (2017-04-14)۔ "2016 میں اوبر نے اربوں کا کاروبار اور اربوں کا ہی نقصان اٹھایا"۔ بزنس انسائیڈر۔ مورخہ 24 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔
  4. نقص حوالہ: ٹیگ <ref>‎ درست نہیں ہے؛ اوبر 2016 کا مالیاتی تجزیہ نامی حوالہ کے لیے کوئی مواد درج نہیں کیا گیا۔ (مزید معلومات کے لیے معاونت صفحہ دیکھیے)۔
  5. کارسن بز (2017-06-07)۔ "اوبر نے 20افراد کو برخاست کر دیا"۔ بی بی سی۔ مورخہ 24 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔
  6. ایولین رسلی (6 جون 2014)۔ "اوبر ٹرپس"۔ دی وال سٹریٹ جرنل۔ مورخہ 24 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 7 نومبر 2014۔
  7. "اوبر فنانشلز 2016"۔ مورخہ 5 جنوری 2019 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 14 اپریل 2017۔
  8. برائن سولومون۔ "اہم خبر، اوبر کی منافع کی بجائے نقصان کا سامنا"۔ مورخہ 24 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔
  9. ^ ا ب پ ت ناتھن میک الون (25 اگست 2016)۔ "2016 میں اوبر کے نفع نقصان کا تجزیہ"۔ بزنس انسائیڈر۔ مورخہ 24 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 9 فروری 2017۔
  10. میٹ روسوف (22 جنوری 2016)۔ "اوبر کے اخراجات"۔ بزنس انسائیڈر۔ مورخہ 24 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 9 فروری 2017۔