رعد مجيد حمدانی

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
رعد مجيد حمدانی
Hamdani.png
 

معلومات شخصیت
پیدائش 20 جون 1951 (70 سال)  ویکی ڈیٹا پر (P569) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
بغداد  ویکی ڈیٹا پر (P19) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
شہریت Flag of Iraq.svg عراق  ویکی ڈیٹا پر (P27) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
عملی زندگی
پیشہ عسکری قائد  ویکی ڈیٹا پر (P106) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
عسکری خدمات
وفاداری عراق  ویکی ڈیٹا پر (P945) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
عہدہ لیفٹیننٹ جنرل  ویکی ڈیٹا پر (P410) کی خاصیت میں تبدیلی کریں

رعد مجيد رشید ہمدانی ( عربی: رعد مجيد الحمداني ) عراقی ریپبلکن گارڈ کے ایک جنرل تھے، اور صدام حسین کے پسندیدہ افسروں میں شامل تھے۔[1]

حالات زندگی[ترمیم]

ہمدانی نے بغداد میں عراقی ملٹری کالج سے 1970ء میں فوجی سائنس میں بی اے کیا تھا۔[2]

انہوں نے 71 ویں بریگیڈ میں پہلے لیفٹیننٹ کی حیثیت سے خدمات انجام دیا، جس نے یوم کپور جنگ کے دوران تیسری بکتر بند ڈویژن کے حصے کے طور پر سطح مرتفع گولان کی پہاڑیوں پر کارروائی دیکھی۔[3] جنگ کے بعد انہوں نے 1978ء سے 1980ء تک بکر یونیورسٹی میں عراقی اسٹاف کالج سے ملٹری سائنس میں ایم اے کی سند حاصل کی۔[2][4]

ایران – عراق جنگ[ترمیم]

ایران – عراق جنگ کے دوران ہمدانی نے بکتر بند اور جاسوسی کے مختلف یونٹوں میں عملہ کے افسر کی حیثیت سے خدمات انجام دیا اور 1982ء میں ریپبلکن گارڈ میں شامل ہوئے، اس کے بعد 1987ء اور 1989ء کے درمیان ایک سینئر تربیتی افسر(senior training officer) کے طور پر خدمات انجام دیا۔ [2] رعد الحمدانی نے صدام حسین کے دونوں بیٹے عدی صدام حسین اور قصی صدام حسین، طارق عزیز کے بیٹے کو اپنی بٹالین میں افسر کی حیثیت سے خدمات انجام دینے کے لئے استقبال کیا۔ یہ ایک سیاسی اسٹنٹ کی حیثیت سے کیا گیا تھا، لہذا صدام اور طارق عزیز دعویٰ کرسکتے تھے کہ ان کے بیٹے جنگ میں لڑ رہے ہیں۔ تاہم، ہمدانی سے کہا گیا تھا کہ وہ کسی بھی بیٹے کو مرنے نہ دیں۔[5]

عراق جنگ[ترمیم]

ہمدانی دوسرے ریپبلیکن گارڈ کور کے کمانڈر کے طور پر

دوسرے ریپبلکن گارڈ کور کے کمانڈر کی حیثیت سے، ہمدانی کو کربلا کے خطے کی ذمہ داری سونپی گئی تھی۔ ہمدانی کو مزید یونٹوں سے کھینچ لیا گیا جب قصی صدام حسین کے خیال کے بعد کہ جنوب پر امریکی حملہ ایک معمولی بات تھی۔[6] ہمدانی کو امریکی مسلسل پیش قدمی کے جواب میں جوابی کارروائی کا حکم دیا گیا، جس کے نتیجے میں 2-3 اپریل کو ایک رات کا حملہ ہوا جس میں بھاری جانی نقصان ہوا۔ اگلی صبح امریکی جوابی کارروائی نے ریپبلکن گارڈ فورس کو مکمل طور پر منتشر کردیا۔


ذاتی زندگی[ترمیم]

رعد الحمدانی ایک سنی مسلمان ہیں جو بغداد میں پیدا ہوئے تھے۔ وہ ایک سیکولر خیالات کے تھے، اور اسے اپنے مزاح اور مزاح نگاری کے احساس کے لئے بھی جانے جاتے ہیں۔ وہ انگریزی پڑھ سکتے ہیں، لیکن روانی سے نہیں بول سکتے۔ 2009ء تک، وہ اردن کے عمان میں رہائش پذیر تھے اور اسی سال عراقی تناظر پروجیکٹ کے لئے ان کا انٹرویو لیا گیا تھا۔ [7] انہوں نے قصی صدام حسین سے قریبی تعلقات استوار کیے، جنھوں نے ایران - عراق جنگ میں اپنی بٹالین میں خدمات انجام دیں۔ ہمدانی کا خیال ہے کہ 1990ء کے دہائیوں کے دوران ممکنہ طور پر اس تعلقات نے انہیں جیل سے دور رکھا اور جب انہوں نے صدام کے خیالات کے برخلاف مشورہ دیا تو قصی صدام حسین نے رعد کو بچایا۔ [5] 1992ء میں انہوں نے عراقی وار کالج سے ملٹری سائنس میں پی ایچ ڈی کی ڈگری حاصل کی۔[2]

ہمدانی نے آر ٹی عربی کے لئے بنائے گئے ایک تاریخی ٹیلی ویژن پروگرام میں شامل تھے، جس میں جنگ یوم کپور، [8] خلیجی جنگ، [9] اور 2003ء میں عراق پر حملے کے بارے میں تفصیل سے لکھا گیا تھا۔[10] انہوں نے 2007ء میں اس سے قبل اپنی یادداشتیں شائع کیں، جس کا عنوان Before History Leaves Us ہے۔

حوالہ جات[ترمیم]

  1. "Iraqi general tells of Arab armies' admiration for IDF". Haaretz. 7 June 2009. 
  2. ^ ا ب پ ت Woods، Kevin M. (2011) [2010]. Saddam's Generals: Perspectives of the Iran-Iraq War. 4850 Mark Center Drive, Alexandria, Virginia: Institute for Defense Analyses. صفحہ 29. 
  3. Woods، Kevin M. (2009). Saddam's War: An Iraqi Military Perspective of the Iran-Iraq War. Washington, D.C.: Institute for National Strategic Studies, National Defence University. صفحہ 22. ISSN 1071-7552. 
  4. Woods، Kevin M. (2009). Saddam's War: An Iraqi Military Perspective of the Iran-Iraq War. Washington, D.C.: Institute for National Strategic Studies, National Defence University. صفحہ 24. ISSN 1071-7552. 
  5. ^ ا ب Woods، Kevin M. (2009). Saddam's War: An Iraqi Military Perspective of the Iran-Iraq War. Washington, D.C.: Institute for National Strategic Studies, National Defence University. صفحہ 12. ISSN 1071-7552. 
  6. Interview with Lt. Gen. Raad al-Hamdani | PBS Frontline
  7. Woods، Kevin M. (2009). Saddam's War: An Iraqi Military Perspective of the Iran-Iraq War. Washington, D.C.: Institute for National Strategic Studies, National Defence University. صفحہ 2. ISSN 1071-7552. 
  8. https://www.youtube.com/watch?v=GHnqIkKl3T4
  9. "آرکائیو کاپی". 13 اگست 2012 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 18 نومبر 2020. 
  10. https://www.youtube.com/watch?v=wPCDNkZVDAo