روشن ماہنامہ

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے

روشن ماہنامہ
ذاتی معلومات
مکمل نامروشن سری وردنے مہاناما
پیدائش31 مئی 1966ء (عمر 56 سال)
کولمبو, ڈومنین سیلون
عرفماہا
بلے بازیدائیں ہاتھ کا بلے باز
حیثیتبلے باز
بین الاقوامی کرکٹ
قومی ٹیم
پہلا ٹیسٹ (کیپ 36)14 مارچ 1986  بمقابلہ  پاکستان
آخری ٹیسٹ27 مارچ 1998  بمقابلہ  جنوبی افریقہ
پہلا ایک روزہ (کیپ 45)2 مارچ 1986  بمقابلہ  پاکستان
آخری ایک روزہ30 مئی 1999  بمقابلہ  کینیا
ملکی کرکٹ
عرصہٹیمیں
1988/89–1992کولمبو کرکٹ کلب
1994/95–1998/99بلوم فیلڈ کرکٹ اور ایتھلیٹک کلب
کیریئر اعداد و شمار
مقابلہ ٹیسٹ ایک روزہ فرسٹ کلاس لسٹ اے
میچ 52 213 137 253
رنز بنائے 2,576 5,162 6,698 6,472
بیٹنگ اوسط 29.27 29.49 34.40 30.96
100s/50s 4/11 4/35 12/31 6/42
ٹاپ اسکور 225 119* 225 119*
گیندیں کرائیں 36 2 36 2
وکٹ 0 0 0
بالنگ اوسط
اننگز میں 5 وکٹ
میچ میں 10 وکٹ
بہترین بولنگ
کیچ/سٹمپ 56/– 109/– 136/- 121/–
ماخذ: ESPNCricinfo، 30 نومبر 2015

دیشبندو روشن سری وردنے ماہنامہ (سنہالا: රොෂාන් මහානාම؛ (پیدائش:31 مئی 1966ء کولمبو) ایک سابق سری لنکن کرکٹر اور آئی سی سی کے سابق میچ ریفری ہیں۔ وہ 1996ء کے عالمی کپ کو جیتنے والی کرکٹ ٹیم کے کلیدی رکن بھی تھے۔

سکول کرکٹ[ترمیم]

روشن ماہنامہ نے نالندہ کالج کی نمائندگی کرتے ہوئے اسکول کی سطح پر کرکٹ کھیلنا شروع کی اور اپنی اسکول کی کرکٹ ٹیم کے کپتان رہے وہ جلد ہی ایک مشہور سکول بوائے کرکٹر کے طور پر مشہور ہو گئے جس نے روایتی حریف آنند کالج کے خلاف سالانہ بگ میچ میں 145 رنز کی ناقابل شکست اننگز کھیلی۔ اسکول کرکٹ میں ان کی پرفارمنس نے انہیں 1983ء اور 1984ء میں لگاتار دو سالوں کے لیے آبزرور اسکول بوائے کرکٹ آف دی ایئر کا ایوارڈ حاصل کرنے کا اہل بنا دیا

بین الاقوامی کیریئر[ترمیم]

روشن ماہنامہ سری لنکا کے 36 ویں ٹیسٹ کیپ پہننے والے کھلاڑی ہیں جہاں انہوں نے 1985/86ء میں کولمبو میں پاکستان کے خلاف یہ اعزاز حاصل کیا تھا۔ حالانکہ ٹیسٹ کرکٹ میں اس کی اوسط 30 سے ​​کم تھی، لیکن انہوں نے چار سنچریاں اسکور کیں جن میں سری لنکن کرکٹ ٹیم کے لیے بھارت کے خلاف کولمبو میں 225 کا ٹاپ سکور بھی شامل ہے۔جہاں انہوں نے سنتھ جے سوریا کے ساتھ دوسری وکٹ کی 576 رنز کی اس وقت کی عالمی ریکارڈ کی حامل شراکت میں حصہ لیا۔ یہ ریکارڈ جولائی 2006ء میں ٹیسٹ میچ کی تاریخ کی سب سے بڑی شراکت داری کے طور پر سری لنکا ہی کے سٹار بلے بازوں کمار سنگاکارا اور مہیلا جے وردھنے نے بنایا جنہوں نے جنوبی افریقہ کے خلاف 624 رنز بنائے تاہم جے سوریا اور روشن مہاناما کے درمیان شراکت داری اب بھی ٹیسٹ کرکٹ میں دوسری وکٹ کی سب سے بڑی شراکت ہے۔ روشن مہاناما نے اپنے آپ کو 1980ء کی دہائی کے آخر اور 1990ء کی دہائی کے اوائل میں اروندا ڈی سلوا کی کپتانی میں اسٹائلش اوپننگ بلے باز کے طور پر نمایاں کیا۔ 1992ء کے کرکٹ ورلڈ کپ میں، روشن مہاناما کو M.A.R کے ساتھ بطور اوپننگ بلے باز منتخب کیا گیا۔ سماراسیکرا اور یو سی ہتھورسنگھا نے 89 گیندوں پر 59 رنز بنائے۔ زمبابوے، 131 گیندوں پر 80 رنز بمقابلہ نیوزی لینڈ اور121 گیندوں پر 68 رنز بمقابلہ جنوبی افریقہ.انہوں نے 1994ء کے آسٹریلییشیا کپ میں سری لنکا کی ٹیم کی کپتانی کی جو شارجہ میں منعقد ہوا تھا جب کہ اروندا ڈی سلوا اور ارجن راناٹنگا جیسے اہم کھلاڑی ذاتی وجوہات کی بنا پر ٹورنامنٹ سے باہر ہو گئے تھے۔ انہوں نے 1996ء میں آئی سی سی کرکٹ ورلڈ کپ ایونٹ میں سری لنکا کی پہلی فتح میں اہم کردار ادا کیا جہاں سری لنکا نے فائنل میں آسٹریلیا کو 6 وکٹوں سے شکست دے کر ٹورنامنٹ کے ناقابل شکست فاتح کے طور پر تاج پہنایا جو کہ قذافی اسٹیڈیم، لاہور میں منعقد ہوا تھا۔

ماہنامہ کی سوانح عمری[ترمیم]

ریٹائرڈ ہرٹ کرکٹ میں عام بات ہے، لیکن روشن مہاناما نے اپنی سوانح عمری کے لیے یہی نام منتخب کیا، جو 1999ء کے عالمی کپ میں ٹیم کے لیے اچھی کارکردگی کے بعد ون ڈے اور ٹیسٹ میں سلیکشن کے لیے منتخب نہ ہونے کے بعد ان کے جذبات کی عکاسی کرتا ہے کیونکہ سری لنکا میں کرکٹ حکام نے روشن مہاناما کو بتایا تھا کہ اسے نوجوان ٹیلنٹ کو تیار کرنے کے لیے زیر غور نہیں لایا گیا لیکن حیرت انگیز طور پر اس سے بڑی عمر کے کھلاڑیوں کو ٹیم میں جگہ مل گئی اور روشن مہانامہ کو اس کے تمام تر تجربے لو نظر انداز کر دیا تھا اس ناانصافی نے اسے مایوس ہونے پر مجبور کر دیا چناں چہ اس نے اصول اور عزت نفس کے پیش نظر ریٹائر ہونے کا فیصلہ کیا۔ ان حقائق کا تذکرہ مشہور آسٹریلوی اسپورٹس کرینیکلر کین پیسی کی لکھی ہوئی کتاب 'ریٹائرڈ ہرٹ' میں کیا گیا ہے، جو روشن کے میدان کے اندر اور باہر کے تجربے پر 40 گھنٹے کی ٹیپ شدہ بیانیہ پر مبنی ہے۔1996ء اور 1999ء تک کے انٹرنیشنل کیرئیر میں اس کا یہ فیصلہ اس کے مداحوں کو مایوسی کی انتہا پر لے گیا

بطور ریفری[ترمیم]

1999ء میں بین الاقوامی کرکٹ سے ریٹائرمنٹ کے بعد، روشن مہاناما نے بین الاقوامی کرکٹ کونسل کے میچ ریفری بننے کا فیصلہ کر لیا انہوں نے 2004ء میں کنگسٹن کے مقام پر ویسٹ انڈیز اور بنگلہ دیش کے درمیان ون ڈے میچ میں بطور میچ ریفری ڈیبیو کیا۔ اسی سیریز میں انہوں نے ٹیسٹ ڈیبیو بھی کیا اور آج تک وہ 61 ٹیسٹ میں ریفری کر چکے ہیں۔ 21 اکتوبر 2014ء کو نیوزی لینڈ اور جنوبی افریقہ کے درمیان ون ڈے سیریز کے دوران، روشن مہاناما نے میچ ریفریوں کے ایلیٹ گروپ میں شمولیت اختیار کی یعنی وہ اس گروپ کا حصہ بن گئے جنہوں نے 200 یا اس سے زائد میچوں کو سپروائز کیا تھا۔ بلاآخر روشن مہاناما نے بین الاقوامی کرکٹ سے میچ ریفری کے عہدے سے بھی سبکدوش ہونے کا فیصلہ کر لیا اور آخری بار 2015ء میں نیوزی لینڈ اور آسٹریلیا کے درمیان آخری ٹیسٹ میچ میں شرکت کی تھی۔ وہ 2004ء میں ایلیٹ پینل میں شامل ہوئے اور 61 ٹیسٹ، 222 ون ڈے اور 35 ٹی ٹونٹی مقابلوں میں بطور ریفری شرکت کر چکے ہیں۔ بشمول تین ورلڈ کپ اور 2009ء کی چیمپئنز ٹرافی۔ مہاناما کو یہ اعزاز بھی حاصل ہوا کہ وہ کھیل کی تاریخ میں ڈے نائٹ ٹیسٹ میچ میں خدمات انجام دینے والے پہلے میچ ریفری بن گئے جہاں پہلی بار گلابی گیند بھی استعمال کی گئی۔ انہوں نے 2020ء پاکستان سپر لیگ اور 2021ء پاکستان سپر لیگ میں بھی بطور میچ ریفری خدمات انجام دیں۔ ستمبر 2015ء میں روشن مہاناما نے کہا کہ وہ سال کے آخر میں آئی سی سی کے میچ ریفری پینل سے دستبردار ہو جائیں گے۔ وہ اپنا وقت اپنے خاندان اور اپنے کاروبار کے ساتھ گزاریں گے۔ان کا شمار بین الاقوامی کرکٹ کے بہترین میچ ریفریوں میں ہوتا تھا اور اپنے کھیل کے دنوں میں انہیں بہترین فیلڈرز میں سے ایک سمجھا جاتا تھا۔ وہ سری لنکا کے جونٹی رہوڈز کے نام سے مشہور تھے۔ 2021ء میں انہیں سری لنکا کرکٹ کی سلیکشن کمیٹی اور اروندا ڈی سلوا کی قیادت میں قائم ٹیکنیکل ایڈوائزری کمیٹی پینل کے ممبرز میں سے ایک کے طور پر مقرر کیا گیا۔

کوچنگ[ترمیم]

2001ء میں انہیں سری لنکا اے ٹیم اور ڈویلپمنٹ اسکواڈ کا مینیجر اور ہیڈ کوچ بھی مقرر کیا گیا۔

بین الاقوامی سنچریاں[ترمیم]

کیریئر کے ابتدائی چند سالوں میں ایک اوپنر کے طور پر، مہاناما کو بعد میں نئے اوپنرز رومیش کالوویتھرانا اور سنتھ جے سوریا کے ساتھ مڈل آرڈر کے سخت بلے بازوں میں منتقل کر دیا گیا جس نے بلے بازی کے انقلابی ڈسپلے کی وجہ سے انہیں مستقل ابتدائی پوزیشن حاصل کر دی۔ ویسے بھی ریٹائرمنٹ تک مہاناما نے 4 ٹیسٹ سنچریاں اور 4 ون ڈے سنچریاں اسکور کر رکھی تھیں۔

کرکٹ کے علاوہ سرگرمیاں[ترمیم]

وہ سری لنکا میں فارماسیوٹیکل ڈسٹری بیوشن کا کاروبار چلاتے تھے اور زامون سمیت متعدد اسٹارٹ اپس کے مالک بھی ہیں جو ایک ایسی ایپ جو صارفین کو منسلک کیفے سے کافی اور کھانا آرڈر کرنے کے قابل بناتی ہے۔انہیں ہیمس آؤٹ ریچ فاؤنڈیشن کا برانڈ ایمبیسیڈر مقرر کیا گیا تھا۔2017ء میں، مہاناما کی درخواست پر سری لنکا کی فوج نے واونیا میں روشن مہاناما پرائمری اسکول کے قیام کی سرپرستی کی۔

کتاب کے واقعہ پر تنازعہ[ترمیم]

2001ء میں شائع ہونے والی اپنی سوانح عمری ریٹائرڈ ہرٹ میں، انہوں نے دعویٰ کیا کہ سابق آسٹریلوی فاسٹ باؤلر گلین میک گرا نے 1996ء میں سری لنکا اور آسٹریلیا کے درمیان ون ڈے میچ کے دوران تجربہ کار سری لنکن اوپنر سنتھ جے سوریا کو "کالا بندر" کہہ کر نسلی طور پر گالی دی تھی۔ گلین میک گرا اور کرکٹ آسٹریلیا نے نسلی زیادتی کے الزامات کی تردید کی جبکہ میک گرا نے روشن مہاناما کو دھمکی بھی دی کہ وہ کتاب کی ریلیز کے خلاف قانونی کارروائی کریں گے۔ سابق آسٹریلوی کرکٹرز مارک ٹیلر اور سٹیووا نے بھی روشن مہاناما کے دعوے کو پبلسٹی سٹنٹ قرار دیتے ہوئے ان الزامات کو مسترد کر دیا تھا۔

ٹیسٹ سنچریاں[ترمیم]

درج ذیل جدول میں روشن مہاناما کی ٹیسٹ سنچریوں کا خلاصہ دکھایا گیا ہے۔

روشن ماہنامہ کی ٹیسٹ سنچریاں
رنز مارچ اگست شہر, ملک مقام Start date نتیجہ
[1] 153 15  نیوزی لینڈ موراتووا, سری لنکا ٹائرون فرنینڈو اسٹیڈیم 27 نومبر 1992ء سانچہ:ڈرا
[2] 109 16  نیوزی لینڈ کولمبو, سری لنکا سنہالی اسپورٹس کلب گراؤنڈ 6 دسمبر 1992ء سانچہ:جیتا
[3] 151 20  بھارت کولمبو, سری لنکا پیکیا سوتھی سراوانامتو اسٹیڈیم 4 اگست 1993ء ڈرا
[4] 225 44  بھارت کولمبو, سری لنکا آر پریماداسا اسٹیڈیم 2 اگست 1997ء ڈرا

ون ڈے سنچریاں[ترمیم]

مندرجہ ذیل جدول میں روشن مہاناما کی ون ڈے سنچریوں کا خلاصہ دکھایا گیا ہے۔

ODI Centuries of Roshan Mahanama
سکور میچ اگست City, Country Venue تاریخ نتیجہ
[1] 107 72  نیوزی لینڈ کولمبو, سری لنکا آر پریماداسا اسٹیڈیم 13 دسمبر 1992 فاتح
[2] 119* 108  زمبابوے ہرارے, زمبابوے ہرارے اسپورٹس کلب 3 نومبر 1994 فاتح
[3] 108 109  زمبابوے ہرارے, زمبابوے ہرارے اسپورٹس کلب 5 نومبر 1994 فاتح
[4] 101 124  ویسٹ انڈیز شارجہ, متحدہ عرب امارات شارجہ کرکٹ اسٹیڈیم 11 اکتوبر 1995 فاتح

بین الاقوامی میچ ریفری کے اعدادوشمار[ترمیم]

30 مارچ 2016 تک:

پہلا تازہ مجموعہ
ٹیسٹ ویسٹ انڈیز بمقابلہ بنگلہ دیش بمقام ڈیرن سیمی نیشنل کرکٹ اسٹیڈیم, 28 مئی 2004 آسٹریلیا بمقابلہ نیوزی لینڈ بمقام ایڈیلیڈ اوول, 27 نومبر 2015 61
ایک روزہ ویسٹ انڈیز بمقابلہ بمقام بنگلہ دیش بمقام آرونس ویل اسٹیڈیم, 15 مئی 2004 جنوبی افریقہ بمقابلہ نیوزی لینڈ بمقام کنگزمیڈ کرکٹ گراؤنڈ, 26 اگست 2015 222
ٹی ٹونٹی انٹرنیشنل آسٹریلیا بمقابلہ نیوزی لینڈ بمقام مغربی آسٹریلیا کرکٹ ایسوسی ایشن گراؤنڈ, 11 دسمبر 2007 جنوبی افریقہ بمقابلہ نیوزی لینڈ بمقام سپراسپورٹ پارک, 16 اگست 2015 35

ایک روزہ بین الاقوامی کرکٹ[ترمیم]

مین آف دی میچ ایوارڈز[ترمیم]

نمبر شمار مخالف بمقام تاریخ میچ کی کارکردگی نتیجہ
1 بھارت قومی کرکٹ ٹیم وانکھیڈے اسٹیڈیم, ممبئی 17 جنوری 1987 1 Ct. ; 98 (91 balls: 7x4)  بھارت won by 10 runs.[1]
2 نیوزی لینڈ قومی کرکٹ ٹیم بیللیریو اوول, ہوبارٹ 12 جنوری 1988 1 Ct. ; 58 (83 balls: 4x4, 1x6)  سری لنکا won by 4 wickets.[2]
3 پاکستان قومی کرکٹ ٹیم بنگابندو قومی اسٹیڈیم, ڈھاکہ 27 اکتوبر 1988 3 Ct. ; 55 (92 balls: 3x4)  سری لنکا won by 5 wickets.[3]
4 نیوزی لینڈ قومی کرکٹ ٹیم پایکیاسوتھی ساراواناموتو اسٹیڈیم, کولمبو 12 دسمبر 1992 2 Ct. ; 84* (109 balls: 7x4, 1x6)  سری لنکا won by 8 wickets.[4]
5 نیوزی لینڈ قومی کرکٹ ٹیم آر پریماداسا اسٹیڈیم, کولمبو 13 دسمبر 1992 107 (132 balls: 7x4)  سری لنکا won by 31 runs.[5]
6 بھارت قومی کرکٹ ٹیم ڈی سویسا اسٹیڈیم, موراتووا 14 اگست 1993 1 Ct. ; 92 (143 balls: 8x4)  سری لنکا won by 4 wickets.[6]
7 زمبابوے قومی کرکٹ ٹیم ہرارے اسپورٹس کلب, ہرارے 3 نومبر 1994 119* (142 balls: 8x4)  سری لنکا won by 56 runs.[7]
8 ویسٹ انڈیز کرکٹ ٹیم شارجہ کرکٹ اسٹیڈیم, شارجہ 11 اکتوبر 1995 101 (153 balls: 5x4, 1x6)  سری لنکا won by 6 runs.[8]

مزید دیکھیے[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. "1986–1987 India v Sri Lanka – 5th Match – Mumbai (Bombay)". 
  2. "1987–1988 Benson & Hedges World Series Cup – 7th Match – New Zealand v Sri Lanka – Hobart". 
  3. "1988–1989 Wills Asia Cup – 1st Match – Pakistan v Sri Lanka – Dhaka (Dacca)". 
  4. "1992–1993 Sri Lanka v New Zealand – 2nd Match – Colombo". 
  5. "1992–1993 Sri Lanka v New Zealand – 3rd Match – Colombo". 
  6. "1993–1994 Sri Lanka v India – 3rd Match – Moratuwa". 
  7. "1994–1995 Zimbabwe v Sri Lanka – 1st Match – Harare". 
  8. "1995–1996 Singer Champions Trophy – 1st Match – Sri Lanka v West Indies – Sharjah". 
Midori Extension.svg یہ ایک نامکمل مضمون ہے۔ آپ اس میں اضافہ کر کے ویکیپیڈیا کی مدد کر سکتے ہیں۔