سرن

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
یہاں جائیں: رہنمائی، تلاش کریں
یورپین آرگنائزیشن
فور نیوکلیئر ریسرچ
Organisation européenne
pour la recherche nucléaire
فائل:CERN official logo.jpg
CERN member states .svg
رکن ممالک
تشکیل 29 ستمبر، 1954؛ 63 سال قبل (1954-09-29)[1]
صدر دفتر Meyrin، کینٹن جنیوا، سویٹزرلینڈ
رکنیت
سرکاری زبانیں
انگریزی اور فرانسیسی
صدر کونسل
Sijbrand de Jong[2]
Fabiola Gianotti
ویب سائٹ home.cern

جوہری تحقیق کے لیے یورپی تنظیم جسے انگریزی میں یورپین آرگنائزیشن فور نیوکلیئر ریسرچ اور (فرانسیسی: Organisation européenne pour la recherche nucléaire) میں کہا جاتا ہے، یہ تنظیم سرن کے نام سے جانی جاتی ہے (/ˈsɜrn/; فرانسیسی تلفظ: [sɛʁn]; سرن "Conseil Européen pour la Recherche Nucléaire" کا مخف ہے; دیکھیے تاریخ)، سرن یورپی تحقیقی تنظیم (ادارہ) ہے، جس نے 1954ء سے جنیوا میں دنیا کی سب سے بڑی ذراتی طبیعیات کی تجربہ گاہ قائم کی ہوئی ہے۔ یہ تجربہ گاہ جنیوا کے شمال مغربی مضافاتی علاقے میں فرانس سوئس سرحد پر قائم ہے، (46°14′3″N 6°3′19″E / 46.23417°N 6.05528°E / 46.23417; 6.05528) اس وقت اس کے 21 رکن ممالک ہیں۔[3] اسرائیل پہلا (اور اب تک کا واحد) غیر یورپی ملک ہے، جسے مکمل رکنیت دی گئی ہے۔[4] جب کہ پاکستان اور ترکی معاون رکن ہیں۔

عام طور پر سرن کی اصطلاح اس تجربہ گاہ کے لیے استعمال کی جاتی ہے جس میں 2013ء تک 608 جامعات و تحقیقی اداروں کا،[5] 2،513 افراد پر مشتمل عملہ، 12,313 معاونین عملہ، شاگرد، مہمان سائنسدان اور انجینئرز شریک ہو چکے تھے۔[6]

شمولیت اور مالی امداد[ترمیم]

شریک ممالک اور بجٹ[ترمیم]

Member states of CERN and current enlargement agenda
  CERN full members
  Accession in progress
  Associate members and Candidate for Accession

1954ء میں سرن کے قیام کے وقت صرف 12 ممالک اس کے رکن تھے، سرن باقاعدگی سے نئے اراکین کو قبول کرتا رہا ہے۔ تمام نئے اراکین اپنے الحاق کے بعد مسلسل تنظیم میں رہے ہیں، سوائے ہسپانیا (اسپین) اور یوگوسلاویہ کے۔ ہسپانیا پہلی بار 1961ء میں شامل ہوا، اور 1969ء میں نکل گیا، 1983ء میں دوبارہ شمولیت اختیار کی۔ یوگوسلاویہ 12 بانی اراکین میں سے تھا لیکن 1961ء میں نکل گیا۔اسرائیل 6 جنوری 2014ء سے مکمل رکن ہے۔[7] پہلا (اور اب تک کا واحد) غیر یورپی ملک۔[8]

رکن ممالک حیثیت از شراکت
(ملین سی ایچ ایف از 2014)
شراکت
(کل حصہ کے لیے 2014)
Contribution per capita[note 1]
(CHF/person for 2014)
بانی ارکان[note 2]
Flag of Belgium (civil).svg بلجئیم 29 ستمبر 1954 30.5 2.5% 2.7
Flag of Denmark.svg ڈنمارک 29 ستمبر 1954 19.3 1.6% 3.4
Flag of France.svg فرانس 29 ستمبر 1954 169.2 14.0% 2.6
Flag of Germany.svg جرمنی 29 ستمبر 1954 222.9 18.5% 2.8
Flag of Greece.svg یونان 29 ستمبر 1954 18.0 1.5% 1.6
Flag of Italy.svg اطالیہ 29 ستمبر 1954 126.2 10.5% 2.1
Flag of the Netherlands.svg نیدرلینڈز 29 ستمبر 1954 50.6 4.2% 3.0
Flag of Norway.svg ناروے 29 ستمبر 1954 28.0 2.3% 5.4
Flag of Sweden.svg سویڈن 29 ستمبر 1954 28.7 2.4% 3.0
 سوئٹزرلینڈ 29 ستمبر 1954 40.0 3.3% 4.9
Flag of the United Kingdom.svg مملکت متحدہ 29 ستمبر 1954 152.6 12.7% 2.4
Flag of SFR Yugoslavia.svg یوگوسلاویہ 29 ستمبر 1954[12][13] 0 0% 0
منظور اراکین[note 3]
Flag of Austria.svg آسٹریا 1 جون 1959 24.4 2.0% 2.9
Flag of Spain.svg ہسپانیہ 1 جنوری 1983[13][15] 91.1 7.6% 2.0
Flag of Portugal.svg پرتگال 1 جنوری 1986 13.2 1.1% 1.3
Flag of Finland.svg فن لینڈ 1 جنوری 1991 15.3 1.3% 2.8
Flag of Poland.svg پولینڈ 1 جولائی 1991 29.3 2.4% 0.8
Flag of Hungary.svg مجارستان 1 جولائی 1992 7.1 0.6% 0.7
Flag of the Czech Republic.svg چیک جمہوریہ 1 جولائی 1993 11.3 0.9% 1.1
Flag of Slovakia.svg سلوواکیہ 1 جولائی 1993 5.5 0.5% 1.0
Flag of Bulgaria.svg بلغاریہ 11 جولائی 1999 3.1 0.3% 0.4
Flag of Israel.svg اسرائیل 6 جنوری 2014[7] 22.1 1.8% 2.7
رکنیت کے لیے پہلے مرحلے میں ایسوسی ایٹ اراکین[note 4]
Flag of Serbia.svg سربیا 15 مارچ 2012[16] 1.0 0.1% 0.1
ایسوسی ایٹ ارکان
Flag of Turkey.svg ترکی 6 مئی 2015[17]  %
Flag of Pakistan.svg پاکستان 31 جولائی 2015[18]  %
شمولیت کے لیے امیدوار
Flag of Romania.svg رومانیہ 11 فروری 2010[19] 7.9 0.7% 0.4
zaاراکین کی تعداد، امیدوار اور ایسوسی ایٹ 1,117.3[20] 92.8%
  1. Based on the population in 2014.[9]
  2. 12 founding members drafted the Convention for the Establishment of a European Organization for Nuclear Research which entered into force on 29 ستمبر 1954.[10][11]
  3. Acceded members become CERN member states by ratifying the CERN convention.[14]
  4. Additional contribution from Candidates for Accession and Associate Member States.[14]

توسیع[ترمیم]

ایسوسی ایٹ ارکان، امیدوار:

  •  ترکی نے 12 مئی 2014ء کو ایسوسی ایٹ رکنیت کے معاہدے پر دستخط کیے۔[21]
  •  پاکستان نے 19 دسمبر 2014ء کو ایسوسی ایٹ رکنیت کے معاہدے پر دستخط کیے۔[22][23][24]

بین الاقوامی تعلقات[ترمیم]

A world map highlighting the nature of relations of nations with CERN.
  CERN member states: 21 c.
  Accession in progress: 2 c.
  Associate members and Candidates: 4 c.
  Observers: 4 c. + EU + UNESCO + JINR
  Cooperation agreement: 35 c. + Slovenia, Cyprus, Turkey
  Scientific contacts: 19 c.

چار ممالک مبصر کی حیثیت رکھتے ہیں:[25]

  •  روس – 1993 سے
  •  جاپان – 1995 سے
  •  امریکہ – 1997 سے
  •  بھارت – 2002 سے

اس کے علاوہ مندرجہ ذیل مبصرین بین الاقوامی تنظیمیں ہیں:

غیر رکن ممالک (with dates of Co-operation Agreements) currently involved in CERN programmes are:

  • سانچہ:Country data الجیریا
  •  ارجنٹائن – 11 مارچ 1992
  •  آرمینیا – 25 مارچ 1994
  •  آسٹریلیا – 1 نومبر 1991
  •  آذربائیجان – 3 دسمبر 1997
  •  بیلاروس – 28 جون 1994
  •  بولیویا
  •  برازیل – 19 فروری 1990 اور اکتوبر 2006
  •  کینیڈا – 11 اکتوبر 1996
  •  چلی – 10 اکتوبر 1991
  •  چین – 12 جولائی 1991, 14 اگست 1997 اور 17 فروری 2004
  •  کولمبیا – 15 مئی 1993
  •  کروشیا – 18 جولائی 1991
  •  قبرص – 14 فروری 2006
  •  ایکواڈور
  •  مصر – 16 جنوری 2006
  • سانچہ:Country data ایسٹونیا – 23 اپریل 1996
  •  جارجیا – 11 اکتوبر 1996
  •  آئس لینڈ – 11 ستمبر 1996
  •  ایران – 5 جولائی 2001
  •  اردن - 12 جون 2003.[26] MoU with Jordan and SESAME، in preparation of a cooperation agreement signed in 2004.[27]
  • سانچہ:Country data لتھوانیا – 9 نومبر 2004
  •  مقدونیہ – 27 اپریل 2009[28]
  •  مالٹا – 10 جنوری 2008[29][30]
  •  میکسیکو – 20 فروری 1998
  •  مونٹینیگرو – 12 اکتوبر 1990
  •  مراکش – 14 اپریل 1997
  •  نیوزی لینڈ – 4 دسمبر 2003
  •  پیرو – 23 فروری 1993
  •  سعودی عرب – 21 جنوری 2006
  •  سلووینیا – 7 جنوری 1991
  •  جنوبی افریقہ – 4 جولائی 1992
  •  جنوبی کوریا – 25 اکتوبر 2006.
  •  یوکرین – 2 اپریل 1993
  •  متحدہ عرب امارات – 18 جنوری 2006
  •  ویتنام

سرن نے مندرجہ ذیل ممالک کے ساتھ سائنسی رابطے قائم کیے ہیں:[31]

  •  کیوبا
  •  گھانا
  •  آئرلینڈ
  •  Latvia
  •  لبنان
  •  مڈغاسکر
  •  ملیشیا
  •  موزمبیق
  •  فلسطین
  •  فلپائن
  •  قطر
  •  روانڈا
  •  سنگاپور
  •  سری لنکا
  •  تائیوان
  •  تھائی لینڈ
  •  تونس
  •  ازبکستان
  •  وینزویلا

[32]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. Cite error: حوالہ بنام foundation کے لیے کوئی متن فراہم نہیں کیا گیا ().
  2. "Professor Sijbrand de Jong elected as next President of CERN Council"۔ CERN press office۔ CERN۔ اخذ کردہ بتاریخ 18 جنوری 2016۔ 
  3. "Member States"۔ International relations۔ CERN۔ اخذ کردہ بتاریخ 25 نومبر 2015۔ 
  4. The boycott movement is losing the battle – for now
  5. "A global endeavour". CERN. 15 جولائی 2015. http://public-archive.web.cern.ch/public-archive/en/About/Global-en.html. 
  6. "CERN Annual Report 2013 – CERN in Figures"۔ CERN۔ اخذ کردہ بتاریخ 4 ستمبر 2014۔ 
  7. ^ 7.0 7.1 "CERN International Relations – Israel"۔ اخذ کردہ بتاریخ 5 جولائی 2014۔ 
  8. Rahman, Fazlur. (2013-11-11) Israel مئی become first non-European member of nuclear research group CERN – Diplomacy and Defense Israel News۔ Haaretz. Retrieved on 2014-04-28.
  9. List of countries by population
  10. ESA Convention (6th ed.)۔ European Space Agency۔ ستمبر 2005۔ http://www.esa.int/esapub/sp/sp1300/sp1300EN1.pdf۔ 
  11. "CONVENTION FOR THE ESTABLISHMENT OF A EUROPEAN ORGANIZATION FOR NUCLEAR RESEARCH"۔ CERN Council website۔ CERN۔ اخذ کردہ بتاریخ 16 جولائی 2012۔ 
  12. "Member States"۔ International relations۔ CERN۔ اخذ کردہ بتاریخ 25 نومبر 2015۔ 
  13. ^ 13.0 13.1 "Member States"۔ CERN timelines۔ CERN۔ اخذ کردہ بتاریخ 25 نومبر 2015۔ 
  14. ^ 14.0 14.1 "CERN Member States"۔ CERN Council website۔ CERN۔ اخذ کردہ بتاریخ 16 جولائی 2012۔ 
  15. "Member States: Spain"۔ International Relations۔ CERN۔ اخذ کردہ بتاریخ 25 نومبر 2015۔ 
  16. "CERN Associate Members"۔ CERN۔ 16 مارچ 2012۔ اخذ کردہ بتاریخ 5 جولائی 2014۔ 
  17. "Turkey"۔ cern.ch۔ اخذ کردہ بتاریخ 28 اگست 2015۔ 
  18. http://international-relations.web.cern.ch/International-Relations/nms/pakistan.html
  19. International Relations۔ "Candidate for accession: Romania"۔ CERN website۔ CERN۔ اخذ کردہ بتاریخ 21 اکتوبر 2015۔ 
  20. "Member States' Contributions – 2014"۔ CERN website۔ CERN۔ اخذ کردہ بتاریخ 6 جولائی 2014۔ 
  21. "Turkey to become Associate Member State of CERN"۔ CERN press release۔ CERN۔ 12 مئی 2014۔ اخذ کردہ بتاریخ 5 جولائی 2014۔ 
  22. "Pakistan Becomes the First Associate CERN Member from Asia"۔ Government of Pakistan press releases۔ Ministry of Foreign Affairs, Government of Pakistan۔ 20 جون 2014۔ اخذ کردہ بتاریخ 5 جولائی 2014۔ 
  23. "Pakistan becomes Associate Member State of CERN | CERN"۔ home.web.cern.ch۔ اخذ کردہ بتاریخ 2015-08-01۔ 
  24. "Pakistan officially becomes an associate member of CERN – The Express Tribune"۔ اخذ کردہ بتاریخ 2015-08-01۔ 
  25. "Observers"۔ International Relations۔ CERN۔ اخذ کردہ بتاریخ 15 دسمبر 2015۔ 
  26. "CERN International Relations – Jordan"۔ International-relations.web.cern.ch۔ اخذ کردہ بتاریخ 4 جولائی 2012۔ 
  27. "CERN International Relations – SESAME"۔ International-relations.web.cern.ch۔ 17 اکتوبر 2011۔ اخذ کردہ بتاریخ 4 جولائی 2012۔ 
  28. "''Macedonia joins CERN (SUP)''"۔ Mia.com.mk۔ اخذ کردہ بتاریخ 20 نومبر 2010۔ 
  29. "Prime Minister of Malta visits CERN"۔ CERN Bulletin۔ 10 جنوری 2008۔ اخذ کردہ بتاریخ 23 مئی 2014۔ 
  30. "Malta signs agreement with CERN"۔ Times of Malta۔ 11 جنوری 2008۔ اخذ کردہ بتاریخ 23 مئی 2014۔ 
  31. "Member states"۔ CERN۔ اخذ کردہ بتاریخ 23 مئی 2014۔ 
  32. Quevedo، Fernando (جولائی 2013). "The Importance of International Research Institutions for Science Diplomacy". Science & Diplomacy 2 (3). http://www.sciencediplomacy.org/perspective/2013/importance-international-research-institutions-for-science-diplomacy.