سڈنی شیلڈن

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
سڈنی شیلڈن
(انگریزی میں: Sidney Sheldon ویکی ڈیٹا پر (P1559) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
معلومات شخصیت
پیدائش 11 فروری 1917[1][2][3][4][5][6][7]  ویکی ڈیٹا پر (P569) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
شکاگو[8][9][10][11]  ویکی ڈیٹا پر (P19) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
وفات 30 جنوری 2007 (90 سال)[1][2][3][4][5][6][7]  ویکی ڈیٹا پر (P570) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
ریںچو میراج، کیلیفورنیا[12][13][14][15]  ویکی ڈیٹا پر (P20) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
وجہ وفات نمونیا  ویکی ڈیٹا پر (P509) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
طرز وفات طبعی موت  ویکی ڈیٹا پر (P1196) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
شہریت Flag of the United States (1795-1818).svg ریاستہائے متحدہ امریکا  ویکی ڈیٹا پر (P27) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
عارضہ بائی پولر ڈس آرڈر  ویکی ڈیٹا پر (P1050) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
عملی زندگی
مادر علمی نارتھ ویسٹرن یونیورسٹی  ویکی ڈیٹا پر (P69) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
پیشہ مصنف،  منظر نویس،  ناول نگار،  ڈراما نگار،  فلم ہدایت کار[16]،  اداکار[17][18][19]،  ٹی وی پروڈیوسر[20][21]،  نثر نگار،  فلم ساز  ویکی ڈیٹا پر (P106) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
پیشہ ورانہ زبان انگریزی[22]  ویکی ڈیٹا پر (P1412) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
عسکری خدمات
لڑائیاں اور جنگیں دوسری جنگ عظیم  ویکی ڈیٹا پر (P607) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
IMDb logo.svg
IMDB پر صفحات  ویکی ڈیٹا پر (P345) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
سڈنی شیلڈن

پیدائش : 11 فروری 1917ء

انتقال:30 جنوری 2007ء

معروف امریکی ناول نگار اور ٹیلی ویژن لکھاری۔Naked Face, Rage of Angles, Bloodline اور The Other side of Midnight جیسے معروف ناولوں کے مصنف۔ شکاگو میں پیدا ہوئے۔

فنی زندگی[ترمیم]

اُن کے ذاتی حالات بھی کسی ناول کے پلاٹ سے کم دلچسپ نہیں تھے۔ اُن کا بچپن امریکی تاریخ کا بدترین اقتصادی دور تھا جسے آج ہم مہا مندی یا Great Depression کے نام سے یاد کرتے ہیں۔ 1934ء میں جب وہ سترہ برس کے تھے تو بھوک اور بیکاری سے تنگ آکر انھوں نے خودکشی کا منصوبہ بنایا لیکن اس سے پہلے کہ گلے میں پھندا ڈالتے انھیں ہالی وڈ سے ایک پیغام موصول ہوا جس میں ایک فلم کا سکرین پلے لکھنے کی دعوت دی گئی تھی۔

بلڈ لائن

اور یوں زندگی سے بیزار یہ نوجوان ہالی وُڈ اور براڈوے کا ایک مقبول ڈراما نگار بن گیا۔ دوسری جنگِ عظیم کے دوران سڈنی شیلڈن نے ایک جنگی پائلٹ کے طور پر محاذ کا تجربہ بھی حاصل کیا اور خاتمۂ جنگ پر پھر سے ڈرامے اور سکرین پلے لکھنے شروع کر دیے۔ انہیں سن 1948ء میں ’دی بیچلر اینڈ دی بابی سوکسر‘ جیسی معروف فلم کے لیے اکیڈمی ایوارڈ سے نوازا گیا۔

یہ امر قابلِ ذکر ہے کہ انھوں نے پہلا ناول 1970ء میں لکھا جب اُن کی عمر 53 برس ہو چُکی تھی۔ اس سے پہلے وہ ڈرامے، سکرین پلے اور ٹی وی سیریل ہی لکھتے رہے تھے۔

گِنز بُک آف ورلڈ ریکارڈز نے انھیں 1990ء کے عشرے کے آخر میں دنیا کا سب سے زیادہ ترجمہ کیا جانے والا مصنف قرار دیا کیونکہ اُن کے ناول 51 زبانوں میں ترجمہ ہوکر دنیا کے 108 ممالک میں پڑھے جاتے ہیں۔

جس طرح پاک و ہند میں تیرتھ رام فیروزپوری، ابن صفی، گلشن نندہ، دت بھارتی اور رضیہ بٹ کو لاکھوں افراد پڑھتے ہیں لیکن ناقدینِ ادب انھیں مصنف ہی نہیں سمجھتے، اسی طرح انگریزی ادب کے سکّہ بند نقادوں نے سڈنی شیلڈن کو کبھی سنجیدگی سے نہیں لیا اور ہمیشہ ان کی مقبولیت پر ناک بھوں چڑھائی ہے۔

لیکن سِڈنی بھی عرُفی کیطرح غوغائے رقیباں سے بے نیاز آخری دم تک اپنے قارئین کو دلچسپ تحریروں سے محظوظ کرتے رہے۔کیلی فورنیا میں ان کا انتقال ہوا۔

  1. ^ ا ب ربط : https://d-nb.info/gnd/11805340X  — اخذ شدہ بتاریخ: 26 اپریل 2014 — اجازت نامہ: CC0
  2. ^ ا ب http://data.bnf.fr/ark:/12148/cb119246377 — اخذ شدہ بتاریخ: 10 اکتوبر 2015 — مصنف: Bibliothèque nationale de France — اجازت نامہ: آزاد اجازت نامہ
  3. ^ ا ب ایس این اے سی آرک آئی ڈی: https://snaccooperative.org/ark:/99166/w6zc8s0v — بنام: Sidney Sheldon — اخذ شدہ بتاریخ: 9 اکتوبر 2017
  4. ^ ا ب انٹرنیٹ بروڈوے ڈیٹا بیس پرسن آئی ڈی: https://www.ibdb.com/broadway-cast-staff/8678 — بنام: Sidney Sheldon — اخذ شدہ بتاریخ: 9 اکتوبر 2017
  5. ^ ا ب فائنڈ اے گریو میموریل شناخت کنندہ: https://www.findagrave.com/cgi-bin/fg.cgi?page=gr&GRid=17759833 — بنام: Sidney Sheldon — اخذ شدہ بتاریخ: 9 اکتوبر 2017
  6. ^ ا ب ڈسکوجس آرٹسٹ آئی ڈی: https://www.discogs.com/artist/3753406 — بنام: Sidney Sheldon — اخذ شدہ بتاریخ: 9 اکتوبر 2017
  7. ^ ا ب بنام: Sidney Sheldon — فلم پورٹل آئی ڈی: https://www.filmportal.de/2a1569150da548f4bc76745c93d78d4e — اخذ شدہ بتاریخ: 9 اکتوبر 2017
  8. ربط : https://d-nb.info/gnd/11805340X  — اخذ شدہ بتاریخ: 11 دسمبر 2014 — اجازت نامہ: CC0
  9. http://ibdb.com/person.php?id=8678
  10. http://news.bbc.co.uk/2/hi/6315875.stm
  11. http://writersalmanac.publicradio.org/index.php?date=2004/02/11
  12. ربط : https://d-nb.info/gnd/11805340X  — اخذ شدہ بتاریخ: 30 دسمبر 2014 — اجازت نامہ: CC0
  13. http://www.encyclopedia.com/doc/1G2-2506300153.html
  14. http://www.startribune.com/dynamic/mips_mobile_story.php?story=970849
  15. http://www.usatoday.com/life/people/2007-01-30-sidney-sheldon-obit_x.htm?POE=LIFISVA
  16. http://www.nytimes.com/movies/movie/86310/The-Buster-Keaton-Story/overview
  17. http://www.broadwayworld.com/article/Kelli-OHara-Judy-Kuhn-More-to-Join-Seth-Rudetsky-for-Book-Launch-1022-20141021
  18. http://www.broadwayworld.com/article/Seth-Rudetsky-to-Release-New-BROADWAY-DIARY-this-Fall-20140909
  19. http://www.listal.com/viewimage/270963
  20. http://www.dnaindia.com/report.asp?NewsID=1077232
  21. http://www.latimes.com/books/jacketcopy/la-et-jc-to-write-and-rest-in-peace-in-la-2014-005-photo.html
  22. http://data.bnf.fr/ark:/12148/cb119246377 — اخذ شدہ بتاریخ: 10 اکتوبر 2015 — مصنف: Bibliothèque nationale de France — اجازت نامہ: آزاد اجازت نامہ