سید شہاب الدین سلفی فردوسی

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
سید شہاب الدین سلفی فردوسی
سید شہاب الدین سلفی فردوسی

معلومات شخصیت
تاریخ پیدائش 1956ء بمطابق 1375ھ
وفات 2 اپریل 2018 (62 سال)  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں تاریخ وفات (P570) ویکی ڈیٹا پر
پونے  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں مقام وفات (P20) ویکی ڈیٹا پر
شہریت Flag of India.svg بھارت  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں شہریت (P27) ویکی ڈیٹا پر
مذہب اسلام
عملی زندگی
مادر علمی دارالعلوم احمدیہ سلفیہ، دربھنگہ، بہار
پیشہ فاضل،  مصنف،  جنگ مخالف کارکن  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں پیشہ (P106) ویکی ڈیٹا پر
P islam.svg باب اسلام

مولانا سید شہاب الدین سلفی فردوسی (ولادت: 1956ء) ایک مشہور عالم دین، مصنف اور سماجی خدمتگار تھے۔ شہرشولاپورمیں واقع اطہر بلڈ بینک اور مسجد السلام کے بانی اور چیرمین تھے۔[1][2] آپ نے اردو میں نبی صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم کی سیرت سمیت کئی کتابیں لکھی تھیں۔[3][4]

حالات زندگی[ترمیم]

مولانا سید شہاب الدین سلفی فردوسی کی ولادت 1956ء میں ضلع دربھنگہ، بہار کے ایک گاوٗں بابو سلیم پورمیں مذہبی گھرانے میں ہوئی۔ آپ کا تعلق شیخ تاج الدین مداری دربھنگوی کے خاندان سے ہے جن کا شمار بہار کے قدیم صوفیائے کرام میں ہوتا ہے۔ 1971ء میں دارلعلوم احمدیہ سلفیہ سے فراغت حاصل کی۔ اور1981ء میں شولاپور منتقل ہو جانے کے بعد ایک کتابچہ 'میری نماز' لکھی۔[5]

نمایاں کام[ترمیم]

مولانا سید شہاب الدین سلفی فردوسی نے شہرشولاپور میں 'اطہراقلیتی سماجی اور ویلفیئر ایسوسی ایشن' کے زیر اہتمام اطہر بلڈ بینک کی بنیاد رکھی۔ اس وقت کے ہندوستانی وزیر توانائ سشیل کمار شندے کے ہاتھوں 02 جون، 2012ء کو بلڈ بینک کاافتتاح ہوا۔ انہوں نے امبیڈکرنگر، شولاپورمیں 'مسجدالسلام' کے نام سے ایک مسجد بھی تعمیر کی۔[1]

آپ نے مندرجہ ذیل کتابیں تصنیف کیں،

  • سیرت بدرالدجیٰ - نبی صلی اللہ علیہ وسلم کی سیرت
  • طلاق طلاق طلاق - اسلام میں نکاح، طلاق اور حلالہ کی تفصیل
  • میری نماز - طریقۂ نماز

اصغرعلی انجینئر نے اکتوبر 2002 میں شولاپورفسادات کے دوران مولانا فردوسی کی طرف سے ادا کردہ کردار کی پرزور تعریف کی۔ انھوں نے 'سیکولر پرسپیکٹیو' نومبر 2002 کے شمارہ میں لکھا ہے، "اس کا بھی ذکر کیا جانا چاہیے کہ مولانا شہاب الدین سلفی کی جانب سے ادا کردہ کردار بہت قابل تعریف تھا۔ انھوں نے سہارا نگر اور آسرا نگر علاقے کے مسلم نوجوانوں کو روکا وگرنہ صورت حال دوسری ہوتی اور مسلمانوں کو زیادہ نقصان پہنچتا۔ مسلم نوجوانوں نے اپنے رویے میں بہت سختی کا اظہار کیا تھا۔ یہ مولانا اور پولیس کمشنر مورے کی حکمت عملی تھی جس نے حالات کو سنبھالا۔ مولانا نے ان علاقوں میں بہت سے ہندوؤں کی حفاظت بھی کی۔[6][7][8] مولانا فردوسی مسلم معاشرے میں سماجی مسائل اور خواتین پرظلم کے بارے میں کافی نکتہ چیں رہے اور یکبارگی تین طلاق اور حلالہ کی مذمت کرتے ہو ےٗ انہیں غیر اسلامی اور خواتین پرظلم ڈھانا کہا ہے۔[9][10] w

وفات[ترمیم]

مولانا فردوسی کا 2 اپریل، 2018 کو دورہ قلب کے بند ہو جانے کے باعث پونہ کی رہائش گاہ پر انتقال ہو گیا۔ انھیں شہر پونہ کے کونڈوا گوٹھان مسلم قبرستان میں سپرد لحد کیا گیا۔[11][12]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. ^ ا ب TwoCircles.net۔ "Maulana Syed Shahabuddin Salfi Firdausi: A cleric who built a Blood Bank in Solapur | TwoCircles.net"۔ twocircles.net (انگریزی زبان میں)۔ مورخہ 25 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 2017-06-20۔
  2. "प्राइम टाइम : तीन तलाक बराबरी के हक़ का उल्‍लंघन? वीडियो - हिन्दी न्यूज़ वीडियो एनडीटीवी ख़बर"۔ khabar.ndtv.com۔ مورخہ 25 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 2017-06-20۔
  3. "कुरान में एक साथ 'तीन तलाक' का कहीं जिक्र नहीं: मौलाना फिरदौसी"۔ aajtak.intoday.in (ہندی زبان میں)۔ مورخہ 25 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 2017-06-20۔
  4. Sayyed Shahabuddin Salfi Firdausi (2015)۔ Seerat e Badr-Ud-Duja (اشاعت 1ST۔)۔ Seerat e Badr-Ud-Duja۔ مورخہ 25 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔
  5. "Biography"۔ Syed Shahabuddin Salfi Firdausi (امریکی انگریزی زبان میں)۔ 2015-12-26۔ مورخہ 25 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 2017-06-20۔
  6. "RECENT RIOTS IN MAHARASHTRA Asghar Ali Engineer (Nov 2002)"۔ www.sacw.net۔ مورخہ 25 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 2017-06-20۔
  7. عزیز اعجاز (نومبر 17, 2002)۔ "سولاپور : ذکات دینے والے ہاتھ ذکات لینے پر مجبور۔"۔ Urdu Times۔
  8. جاوید جمال الدین (اکتوبر 20, 2002)۔ "سولاپورفساد : ذمہ دار کون؟"۔ The Inquilab۔
  9. "Triple talaq, halala marriage is cruelty to women: Cleric – Times of India"۔ The Times of India۔ مورخہ 25 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 2017-06-20۔ |archiveurl= اور |archive-url= ایک سے زائد مرتبہ درج ہے (معاونت); |archivedate= اور |archive-date= ایک سے زائد مرتبہ درج ہے (معاونت)
  10. "Modi government is shedding crocodile tears in the name of Muslim women's rights – The Inquilab"۔ The Inquilab۔ مورخہ 25 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 2017-06-20۔
  11. Abdul Hai Ansari؛ Saeed Ahmed Khan (2018-04-02)۔ "روحانی شخصیت، معروف عالم دین مولانا سید شہاب الدین سلفی فردوسی کی رحلت" (پی‌ڈی‌ایف)۔ The Inquilab۔ Mumbai۔ اخذ شدہ بتاریخ 2018-05-08۔
  12. "Maulana Shahabuddin – Maharashtra's first Muslim owned Blood Bank founder passes away"۔ The Shahab (امریکی انگریزی زبان میں)۔ 2018-04-03۔ مورخہ 25 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 2018-05-08۔

بیرونی روابط[ترمیم]