عزیز (اصطلاح حدیث)

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search

علم مصطلح الحديث

اقسامِ حدیث باعتبار مُسند الیہ

حدیث قدسی  · حدیث مرفوع
حدیث موقوف  ·
حدیث مقطوع

اقسامِ حدیث باعتبار تعدادِ سند

حدیث متواتر  · حدیث احاد

اقسامِ اُحاد باعتبار تعدادِ سند

حدیث مشہور  · حدیث عزیز  · حدیث غریب

اقسامِ اُحاد باعتبار قوت و ضعف

حدیثِ مقبول  · حدیثِ مردود

اقسامِ حدیثِ مقبول

حدیثِ صحیح  · حدیثِ صحیح لذاتہٖ · حدیثِ صحیح لغیرہٖ
حدیثِ حسن  ·
حدیثِ حسن لذاتہٖ · حدیثِ حسن لغیرہٖ

اقسامِ حدیثِ مردود

حدیث ضعیف
حدیثِ مردود بوجہ سقوطِ راوی
حدیثِ مردود بوجہ طعنِ راوی

اقسامِ حدیثِ مردود بوجہ سقوطِ راوی

حدیث مُعلق  · حدیث مُرسل
حدیث مُعضل  ·
حدیث منقطع
حدیث مدلس  ·
حدیث مرسل خفی
حدیث معنعن

اقسامِ حدیثِ مردود بوجہ طعنِ راوی

حدیث موضوع  · حدیث متروک
حدیث منکر  ·
حدیث معلل

اقسامِ حدیثِ معلل

حدیث مدرج  · حدیث مقلوب
حدیث مزید فی متصل الاسناد  ·
حدیث مضطرب
حدیث مصحف  ·
حدیث شاذ

طعنِ راوی کے اسباب

مخالفتِ ثقات  · جہالۃ بالراوی
بدعت  ·
سوءِ حفظ

اقسامِ کتبِ حدیث

اربعین  · سنن  · جامع  · مستخرج  · جزو  · مستدرک  · معجم

دیگر اصطلاحاتِ حدیث

اعتبار  · شاہد  · متابع
متصل  ·
متفق علیہ  · مسند · واضح
مسلسل بالید  ·
مسلسل بالاولیہ  · مسلسل بالحلف

علم حدیث کی اصطلا ح میں عزیز اس حدیث کو کہتے ہیں جس کے جملہ سند کے کسی بھی طبقہ میں سے کسی میں بھی دو سے کم راوی نہ ہوں۔ لغوی اعتبار سے اس کا مطلب ہے قلیل ہونا یا پھرقوی اور طاقتور ہونا۔ اسے یہ نام اس کے قلیل اور نادر ہونے کے باعث دیا گیا ہے۔ یہ ایسی حدیث ہے جو کسی اور سند کے باعث قوت پکڑتی ہے (لیکن بذات خود یہ ایک ایسی روایت ہوتی ہے جس کے راوی کم ہوتے ہیں۔)[1]

یعنی طبقات سند میں سے کسی ایک طبقہ میں بھی دو سے کم راوی نہ ہوں، لیکن اگر کسی طبقہ میں تین یا اس سے زائد راوی پائے جائیں تو بھی مضر نہیں بشرطیکہ کسی ایک طبقہ میں کم از کم دو ضرور باقی رہ جائیں ،اس لیے کہ طبقات سند میں کم از کم اعتبار ضرور ہوتا ہے۔

حافظ ابن حجر کی رائے کے مطابق یہی تعریف راجح ہے مگر بعض دیگر علماءنے کہا ہے کہ عزیز وہی حدیث ہے جس کو دو یا تین راویوں نے روایت کیا ہو۔ اس میں انہوں نے بعض صورتوں میں عزیز کو مشہور سے مہمیز نہیں کیا۔

یہ حدیث بھی حدیثِ صحیح، حدیثِ حسن، حدیث ضعیف، حدیث مُرسل اور حدیث موضوع ہو سکتی ہے۔ صرف وہی حدیث قابل عمل ہو گی جوصحیح شرائط پر پوری اترے۔ البتہ اس بارے میں اختلاف بھی موجود ہےابوالجبائی معتزلی کا موقف ہے کہ خبر صحیح کے لیے کم از کم عزیز کے درجے پر ہونا ضروری ہے۔ اس کی تائید امام حاکم نے علوم الحدیث میں اشارۃ کی ہے

عزیز حدیث پر مشہور ترین تصانیف[ترمیم]

حدیث عزیز کے موضوع پر علماءکی تصانیف موجود نہیں، بظاہر اس کی وجہ یہی معلوم ہوتی ہے کہ اس طرح کی احادیث کی تعداد بہت کم ہے اس لیے اس پر تصنیف کا کوئی فائدہ بھی نہیں تھا۔

حوالہ جات[ترمیم]

  1. تیسیر مصطلح الحدیث،ڈاکٹر محمود طحان
علم مصطلح الحديث
متواتر متفق عليہ مشہور عزيز غريب حسن
متصل صحیح منکر
مسند ← من حيث السند علم الحديث من حيث المتن متروک
خبر آحاد ضعيف مدرج
منقطع مضطرب مدلس موقوف منقطع موضوع