حدیث قدسی

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search

علم مصطلح الحديث

اقسامِ حدیث باعتبار مُسند الیہ

حدیث قدسی  · حدیث مرفوع
حدیث موقوف  ·
حدیث مقطوع

اقسامِ حدیث باعتبار تعدادِ سند

حدیث متواتر  · حدیث احاد

اقسامِ اُحاد باعتبار تعدادِ سند

حدیث مشہور  · حدیث عزیز  · حدیث غریب

اقسامِ اُحاد باعتبار قوت و ضعف

حدیثِ مقبول  · حدیثِ مردود

اقسامِ حدیثِ مقبول

حدیثِ صحیح  · حدیثِ صحیح لذاتہٖ · حدیثِ صحیح لغیرہٖ
حدیثِ حسن  ·
حدیثِ حسن لذاتہٖ · حدیثِ حسن لغیرہٖ

اقسامِ حدیثِ مردود

حدیث ضعیف
حدیثِ مردود بوجہ سقوطِ راوی
حدیثِ مردود بوجہ طعنِ راوی

اقسامِ حدیثِ مردود بوجہ سقوطِ راوی

حدیث مُعلق  · حدیث مُرسل
حدیث مُعضل  ·
حدیث منقطع
حدیث مدلس  ·
حدیث مرسل خفی
حدیث معنعن

اقسامِ حدیثِ مردود بوجہ طعنِ راوی

حدیث موضوع  · حدیث متروک
حدیث منکر  ·
حدیث معلل

اقسامِ حدیثِ معلل

حدیث مدرج  · حدیث مقلوب
حدیث مزید فی متصل الاسناد  ·
حدیث مضطرب
حدیث مصحف  ·
حدیث شاذ

طعنِ راوی کے اسباب

مخالفتِ ثقات  · جہالۃ بالراوی
بدعت  ·
سوءِ حفظ

اقسامِ کتبِ حدیث

اربعین  · سنن  · جامع  · مستخرج  · جزو  · مستدرک  · معجم

دیگر اصطلاحاتِ حدیث

اعتبار  · شاہد  · متابع
متصل  ·
متفق علیہ  · مسند · واضح
مسلسل بالید  ·
مسلسل بالاولیہ  · مسلسل بالحلف

علم حدیث کی اصطلاح میں ’حدیث قدسی‘ رسول اللہﷺسے منسوب اس روایت کو کہتے ہیں جس میں رسول اللہﷺروایت کو اللہ تعالیٰ سے منسوب کرتے ہیں، یعنی اس کی سند اللہ تعالیٰ تک بیان کی جاتی ہے۔ حدیثِ قدسی میں اللہ تعالٰی کے لیے ”متکلّم“ کا صیغہ استعمال کیا جاتا ہے۔ احادیث ِ قدسیہ کی تعداد دو سو سے زیادہ نہیں ہے ۔[1]

حدیث قدسی اور قرآن میں فرق[ترمیم]

حدیث قدسی اور قرآن میں فرق بہت واضح ہے، چند مشہور فروق میں شامل ہیں:

  1. قرآن مجیدکے الفاظ اورمعانی دونوں اللہ تعالیٰ کی طرف سے ہوتے ہیں۔ جبکہ حدیث قدسی کے معانی اللہ کی جانب سے اور الفاظ رسول اکرم ﷺ کی جانب سے ہوتے ہیں۔
  2. قرآن کی تلاوت بطور عبادت کی جاتی ہے، جبکہ حدیث قدسی کی تلاوت بطور عبادت نہیں کی جاتی۔
  3. قرآن مجید کی تمام آیات متواتر حدیث ہیں، جبکہ حدیث قدسی احاد حدیث بھی ہو سکتی ہے۔[2]

الفاظ روایت[ترمیم]

حدیث قدسی روایت کرنے والے راوی دو (2) طرح کے الفاظ استعمال کرتے ہیں:

  1. بسا اوقات راوی حدیث قدسی روایت کرتے ہوئے کہتا ہے: ’’قال رسول اللہ فیما یرویہ عن ربہ‘‘ یعنی رسول اللہ ﷺ نے اپنے رب سے روایت کرتے ہیں۔
  2. بعض اوقات راوی حدیث قدسی کو اس طرح بیان کرتا ہے: ’’قال اللہ تعالیٰ فیما رواہ عنہ رسولہ‘‘ یعنی اللہ تعالیٰ نے فرمایا جسے اس کے رسول ﷺ نے راویت کیا۔

حدیث قدسی سے متعلق مشہور تصنیف[ترمیم]

اس ضمن میں عبد الروؤف المناوی کی "الاتحافات السنیۃ بالاحادیث القدسیۃ" تصنیف کی گئی ہے۔ اس میں انہوں نے 272 احادیث جمع کی ہیں ۔۔[3]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. خلیل الرحمان چشتی،حدیث کی ضرورت و اہمیت، الفوز اکیڈمی، اسلام آباد صفحہ114َ
  2. الطحان، ڈاکٹر،محمود، تیسیرمصطلح الحدیث: 130، مکتبہ قدوسیہ
  3. الطحان، ڈاکٹر،محمود، تیسیرمصطلح الحدیث، مکتبہ قدوسیہ