صحیح (اصطلاح حدیث)

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search

علم مصطلح الحديث

اقسامِ حدیث باعتبار مُسند الیہ

حدیث قدسی  · حدیث مرفوع
حدیث موقوف  ·
حدیث مقطوع

اقسامِ حدیث باعتبار تعدادِ سند

حدیث متواتر  · حدیث احاد

اقسامِ اُحاد باعتبار تعدادِ سند

حدیث مشہور  · حدیث عزیز  · حدیث غریب

اقسامِ اُحاد باعتبار قوت و ضعف

حدیثِ مقبول  · حدیثِ مردود

اقسامِ حدیثِ مقبول

حدیثِ صحیح  · حدیثِ صحیح لذاتہٖ · حدیثِ صحیح لغیرہٖ
حدیثِ حسن  ·
حدیثِ حسن لذاتہٖ · حدیثِ حسن لغیرہٖ

اقسامِ حدیثِ مردود

حدیث ضعیف
حدیثِ مردود بوجہ سقوطِ راوی
حدیثِ مردود بوجہ طعنِ راوی

اقسامِ حدیثِ مردود بوجہ سقوطِ راوی

حدیث مُعلق  · حدیث مُرسل
حدیث مُعضل  ·
حدیث منقطع
حدیث مدلس  ·
حدیث مرسل خفی
حدیث معنعن

اقسامِ حدیثِ مردود بوجہ طعنِ راوی

حدیث موضوع  · حدیث متروک
حدیث منکر  ·
حدیث معلل

اقسامِ حدیثِ معلل

حدیث مدرج  · حدیث مقلوب
حدیث مزید فی متصل الاسناد  ·
حدیث مضطرب
حدیث مصحف  ·
حدیث شاذ

طعنِ راوی کے اسباب

مخالفتِ ثقات  · جہالۃ بالراوی
بدعت  ·
سوءِ حفظ

اقسامِ کتبِ حدیث

اربعین  · سنن  · جامع  · مستخرج  · جزو  · مستدرک  · معجم

دیگر اصطلاحاتِ حدیث

اعتبار  · شاہد  · متابع
متصل  ·
متفق علیہ  · مسند · واضح
مسلسل بالید  ·
مسلسل بالاولیہ  · مسلسل بالحلف

علم حدیث میں اس سے مراد وہ حدیث ہے جس کے تمام راوی عادل، ثقہ، معتبر، متقی، کامل الضبط اور قوت حافظہ کے مضبوط ہوں۔ اس حدیث کی سند متصل ہو، معلل و شاذ ہونے سے محفوظ ہو نیز کسی قوی حدیث کے مخالف نہ ہو۔

شرائط[ترمیم]

  • اتصال سند: یعنی سند کی ابتداءسے انتہاءتک ہر راوی نے دوسرے سے بلاواسطہ حدیث حاصل کی ہو اور کسی جگہ بھی کوئی راوی ساقط نہ ہو۔
  • راویوں کا عادل ہونا: یعنی ہر راوی مسلمان ہو‘عاقل بالغ ہو اور اس میں فسق و فجور نہ پایا جائے بالفاظ دیگر پاکیزہ کردار کا شخص ہو۔
  • راویوں کا حافظہ: راویوں میں ہر راوی کا حافظہ بہت پختہ اور مضبوط ہو‘ اور وہ حدیث کو یاد رکھنے میں کسی قسم کی غفلت یا بے احتیاطی کا مظاہرہ نہ کرتاہو
  • حدیث میں کوئی علت نہ ہو یعنی منفی قسم کا عیب یا نقص نہ پایا جاتا ہو
  • شاذ نہ ہو یعنی کوئی ثقہ راوی اپنے سے زیادہ ثقہ راوی کے خلاف روایت نہ کرے“

مثال :عبداللہ بن یوسف نے ہم سے بیان کیا ہے کہ انہیں مالک نے ابن شہاب سے یہ خبر دی ہے کہ ابن شہاب کو محمد بن جبیر نے اپنے والد مطعم بن جبیر سے روایت کی کہ: میں نے رسول اکرمﷺکومغربکی نماز میں سورة طور پڑھتے سنا ہے۔ یہ حدیث صحیح ہے اور اس میں تمام شرائط موجود ہیں

صحیح حدیث کا حکم[ترمیم]

صحیح حدیث پر عمل کرنا واجبہے اور ایسی حدیث شرعی دلائل میں سے ایک دلیل ہے۔