مرفوع (اصطلاح حدیث)

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search

علم مصطلح الحديث

اقسامِ حدیث باعتبار مُسند الیہ

حدیث قدسی  · حدیث مرفوع
حدیث موقوف  ·
حدیث مقطوع

اقسامِ حدیث باعتبار تعدادِ سند

حدیث متواتر  · حدیث احاد

اقسامِ اُحاد باعتبار تعدادِ سند

حدیث مشہور  · حدیث عزیز  · حدیث غریب

اقسامِ اُحاد باعتبار قوت و ضعف

حدیثِ مقبول  · حدیثِ مردود

اقسامِ حدیثِ مقبول

حدیثِ صحیح  · حدیثِ صحیح لذاتہٖ · حدیثِ صحیح لغیرہٖ
حدیثِ حسن  ·
حدیثِ حسن لذاتہٖ · حدیثِ حسن لغیرہٖ

اقسامِ حدیثِ مردود

حدیث ضعیف
حدیثِ مردود بوجہ سقوطِ راوی
حدیثِ مردود بوجہ طعنِ راوی

اقسامِ حدیثِ مردود بوجہ سقوطِ راوی

حدیث مُعلق  · حدیث مُرسل
حدیث مُعضل  ·
حدیث منقطع
حدیث مدلس  ·
حدیث مرسل خفی
حدیث معنعن

اقسامِ حدیثِ مردود بوجہ طعنِ راوی

حدیث موضوع  · حدیث متروک
حدیث منکر  ·
حدیث معلل

اقسامِ حدیثِ معلل

حدیث مدرج  · حدیث مقلوب
حدیث مزید فی متصل الاسناد  ·
حدیث مضطرب
حدیث مصحف  ·
حدیث شاذ

طعنِ راوی کے اسباب

مخالفتِ ثقات  · جہالۃ بالراوی
بدعت  ·
سوءِ حفظ

اقسامِ کتبِ حدیث

اربعین  · سنن  · جامع  · مستخرج  · جزو  · مستدرک  · معجم

دیگر اصطلاحاتِ حدیث

اعتبار  · شاہد  · متابع
متصل  ·
متفق علیہ  · مسند · واضح
مسلسل بالید  ·
مسلسل بالاولیہ  · مسلسل بالحلف

علم حدیث کی اصطلاح میں مرفوع حدیث سے مراد، وہ قول، فعل، تقریر اور صفت ہے جس کی نسبت پیغمبر محمد کی جانب گئی ہو۔ حدیث مرفوع بھی حدیث قدسی کی طرح حسن، ضعیف اور موضوع ہو سکتی ہے۔

تعریف[ترمیم]

لغوی اعتبار سے مرفوع رفع کا اسم مفعول ہے جس کے معنی ہیں بلند ہونا۔ حدیث کو یہ نام دینے کی وجہ یہ ہے کہ اس حدیث کی نسبت اس ہستی کی طرف ہے جن کا درجہ بلند ہے یعنی پیغمبر محمد۔ اصطلاحی مفہوم میں ایسی حدیث کو مرفوع کہا جاتا ہے جس کی نسبت پیغمبر محمد کی جانب کی گئی ہو۔ اس حدیث میں آپ کا ارشاد، عمل، صفت یا تقریر (یعنی خاموشی کے ذریعے کسی کام کی اجازت دینے) کو بیان کیا جاتا ہے۔

وضاحت[ترمیم]

مرفوع ایسی حدیث کو کہا جاتا ہے جس میں کسی قول، عمل، صفت یا تقریر (یعنی خاموش رہ کر اجازت دینے) کی نسبت پیغمر محمد سے کی گئی ہو۔ یہ نسبت کسی صحابی نے بیان کی ہو یا کسی اور نے، اس سے کوئی فرق نہیں پڑتا۔ حدیث کی سند خواہ متصل ہو یا منقطع، وہ مرفوع ہی کہلائے گی۔ اس تعریف کے اعتبار سے مرفوع میں موصول، مرسل، متصل، منقطع ہر قسم کی روایت شامل ہو جاتی ہے۔ یہ تعریف مشہور ہے۔

اقسام[ترمیم]

تعریف کے اعتبار سے مرفوع حدیث کی چار اقسام ہیں:

  • مرفوع قولی: جس میں کسی قول کی نسبت حضور صلی اللہ علیہ و اٰلہ وسلم سے کی گئی ہو۔
  • مرفوع فعلی: جس میں کسی فعل یا عمل کی نسبت حضور صلی اللہ علیہ و اٰلہ وسلم سے کی گئی ہو۔
  • مرفوع تقریری: جس میں یہ بیان کیا گیا ہو کہ کوئی کام حضور صلی اللہ علیہ و اٰلہ وسلم کے سامنے کیا گیا تو آپ نے اس سے روکا نہیں۔ اس سے اس کام کا جائز ہونا ثابت کیا جا سکتا ہے۔
  • مرفوع وصفی: جس میں کسی صفت کی نسبت حضور صلی اللہ علیہ و اٰلہ وسلم سے کی گئی ہو۔[1]

حدیث مرفوع کی دو اقسام ہیں[ترمیم]

  • متصل: اس میں ہر راوی اپنے شیخ یا استاد سے بلا انقطاع روایت کرے۔
  • غیر متصل: اس میں ایک یا ایک سے زیادہ راویوں کا ذکر نہیں ہوتا۔ یعنی سند منقطع ہو جاتی ہے۔

حوالہ جات[ترمیم]

  1. ڈاکٹر محمود طحان، تیسیر مصطلح الحدیث، مکتبہ قدوسیہ