قاضی احمد میاں اختر جوناگڑھی

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
قاضی احمد میاں اختر جوناگڑھی
معلومات شخصیت
پیدائش سنہ 1897  ویکی ڈیٹا پر (P569) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
جوناگڑھ،  برطانوی ہند  ویکی ڈیٹا پر (P19) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
وفات 6 اگست 1956 (58–59 سال)  ویکی ڈیٹا پر (P570) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
حیدرآباد،  پاکستان  ویکی ڈیٹا پر (P20) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
شہریت British Raj Red Ensign.svg برطانوی ہند
Flag of Pakistan.svg پاکستان  ویکی ڈیٹا پر (P27) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
عملی زندگی
پیشہ محقق،  نقاد،  شاعر  ویکی ڈیٹا پر (P106) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
پیشہ ورانہ زبان اردو  ویکی ڈیٹا پر (P1412) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
P literature.svg باب ادب

قاضی احمد میاں اختر جوناگڑھی (پیدائش: 1897ء - وفات: 6 اگست 1956ء) پاکستان سے تعلق رکھنے والے اردو کے نامور نقاد، شاعر، محقق، سوانح نگار اور ماہر اقبالیات تھے۔

حالات زندگی[ترمیم]

قاضی احمد میاں اختر جوناگڑھی 1897ء کو جوناگڑھ، برطانوی ہندوستان میں پیدا ہوئے۔[1][2]۔ 1927ء سے 1935ء تک مسلم ایجوکیشن سوسائٹی کاٹھیاوار کے بانی چیئرمین اور جمعیت المسلمین کاٹھیاوار کے صدر رہے۔ وہ اردو کے صف اول کے محقق اور نقاد تھے۔ قیام پاکستان کے بعد انجمن ترقی اردو پاکستان کے نائب معتمد اعزازی بھی رہے، کچھ عرصہ انجمن ترقی اردو پاکستان کے سہ ماہی جریدے اردو کی ادارت بھی کی۔ ان کی تصانیف میں اقبالیات کا تنقیدی جائزہ، حیات نظامی، اسلامی کتب خانے، طبقات الامم، اسلام کا اثر یورپ پر، زر گل، سیپارۂ دل، علم اور اسلام اور علامہ شبلی بحیثیت شاعر سر فہرست ہیں۔[2]

تصانیف[ترمیم]

  • مقالاتِ اختر
  • اہلِ دہلی ( سرسید احمد خاں) ( مرتب)
  • طبقات الامم ( مرتب)
  • سیپارہ دل
  • اقبالیات کا تنقیدی جائزہ
  • سر سید کا علمی سرمایہ
  • علامہ شبلی بحیثیت شاعر
  • حیات نظامی
  • زر گل
  • لمحات اختر
  • علم اور اسلام
  • اسلامی کتب خانے
  • اسلام کا اثر یورپ پر

وفات[ترمیم]

قاضی احمد میاں اختر جوناگڑھی 6 اگست 1956ء کو حیدرآباد، پاکستان میں وفات پا گئے۔[1][2][3]

حوالہ جات[ترمیم]