قمر علی عباسی

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
قمر علی عباسی
معلومات شخصیت
پیدائش 13 جون 1938  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں تاریخ پیدائش (P569) ویکی ڈیٹا پر
امروہہ،  برطانوی ہند  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں مقام پیدائش (P19) ویکی ڈیٹا پر
وفات 31 مئی 2013 (75 سال)  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں تاریخ وفات (P570) ویکی ڈیٹا پر
نیویارک شہر،  ریاستہائے متحدہ امریکا  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں مقام وفات (P20) ویکی ڈیٹا پر
شہریت Flag of Pakistan.svg پاکستان  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں شہریت (P27) ویکی ڈیٹا پر
عملی زندگی
مادر علمی جامعہ سندھ  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں تعلیم از (P69) ویکی ڈیٹا پر
تعلیمی اسناد ماسٹر آف آرٹس  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں تعلیمی اسناد (P512) ویکی ڈیٹا پر
استاذ غلام مصطفیٰ خان  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں استاد (P1066) ویکی ڈیٹا پر
پیشہ ادیب اطفال،  سفرنامہ نگار  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں پیشہ (P106) ویکی ڈیٹا پر
پیشہ ورانہ زبان اردو  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں زبانیں (P1412) ویکی ڈیٹا پر
ملازمت ریڈیو پاکستان،  جنگ گروپ آف نیوزپیپرز  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں نوکری (P108) ویکی ڈیٹا پر
P literature.svg باب ادب

قمر علی عباسی (پیدائش: 13 جون، 1938ء - وفات: 31 مئی، 2013ء) پاکستان سے تعلق رکھنے والے نامور صحافی، عالمی شہرت یافتہ سفرنامہ نگار اور کالم نگار تھے۔

حالات زندگی[ترمیم]

قمر علی عباسی 13 جون 1938ء کو امروہہ، اترپردیش، برطانوی ہندوستان میں پیدا ہوئے ہوئے۔[1][2] تقسیم ہند کے بعد انہوں نے مری میں سکونت اختیار کی جہاں ان کے والد سروے آفیسر کی حیثیت سے خدمات انجام دے رہے تھے۔ مری میں اپنی پرائمری تعلیم مکمل کرنے کے بعد وہ حیدرآباد، سندھ پہنچے جہاں انہوں نے سندھ یونیورسٹی سے بی اے (آنرز)، ایم اے (معاشیات) اور ایم اے (ارد و) کی ڈگریاں حاصل کیں۔ متروکہ وقف املاک بورڈ حکومت پاکستان میں ملازمت سے ابتدا کی، بعد ازاں کچھ عرصہ نیشنل کالج کراچی میں معاشیات کے استاد مقرر ہوئے۔ 1976ء میں وفاقی پبلک سروس کمیشن کا امتحان امتیازی نمبروں سے پاس کرنے کے بعد انہوں نے ریڈیو پاکستان میں ملازمت اختیار کی۔ وہ ریڈیو پاکستان خضداراور کراچی میں اسٹیشن ڈائریکٹر کے منصب پر فائز رہے اور ریڈیو پاکستان کے شعبہ مطبوعات میں بھی ا ہم ذمہ داریا ں انجام دیں اور ریڈیو پاکستان کا ادبی مجلہ آہنگ انہی کی نگرانی میں جاری ہوتا تھا۔ 1998ء میں ریڈیو پاکستان کی ملازمت سے سبکدوشی کے بعد انہوں نے انفو لائن جنگ کراچی کے مدیر اعلیٰ کی حیثیت سے کام کیا۔ بعض نا مساعد حالات کے باعث قمر علی عباسی 1999ء میں امریکا منتقل ہو گئے جہاں انہوں نے ہفت روزہ عوام نیو یارک کے چیف ایڈیٹر کی حیثیت سے خدمات انجام دیں ۔[1][2]

ادبی خدمات[ترمیم]

پاکستان میں قمر علی عباسی وہ ادیب ہیں جنہوں نے سب سے زیادہ سفر نامے لکھے۔ ان کے سفر ناموں میں لندن لندن، دلی دور ہے، چلا مسافر سنگا پور، امریکا مت جائیو، برطانیہ چلیں، واہ برطانیہ، ایک بار چلو وینس، نیل کے ساحل، بغداد زندہ باد، لر نا کا آیا، لا پیرس، قرطبہ قرطبہ، جاناں سوئٹزر لینڈ اور دیوار گرگئی، ترکی میں عباسی، کینیڈا انتظار میں،شو نار بنگلہ، ماریشس میں دھنک، میکسیکو کے میلے،سنگاپور کی سیر،عمان کے مہمان،صحرا میں شام ،سات ستارے صحرا میں، شام تجھے سلام، ہندوستان ہمارا،لنکا ڈھائے ،ساحلوں کا سفر ،ناسو ہرا ہے ،ذکر جل پری کا اور ہوا ہوائی کے نام شامل ہیں۔[1]

قمر علی عباسی نے بچوں کے لیے بھی متعدد کتابیں تحریر کیں جن میں رحم دل ڈاکو، بہادر شہزادہ، شیشے کی آنکھ، ایک تھا مرغا، بہادر علی، شرارتی خرگوش، سمندر کا بیٹا، کائیں کائیں، میاؤں میاؤں، ہمارا پاکستان، عزم عالی شان، قوت عوام، منزل مراد، چوہدری رحمت علی، علامہ اقبال اور قائد اعظم محمد علی جناح شامل ہیں۔ قمر علی عباسی کی خود نوشت سوانح عمری پر مشتمل دو کتب شائع ہو چکی ہیں جن کے نام 32 ناٹ آؤٹ اور اک عمر کا قصہ ہیں۔ ان کے کالموں کا مجموعہ بھی دل دریا کے عنوان سے شائع ہو چکا ہے۔[1]

خانگی زندگی[ترمیم]

ان کی شادی نیلو فر عباسی سے ہوئی تھی جنہوں نے پاکستان ٹیلی ویژن کی یادگار سیریل شہزوری میں ناقابل فراموش کردار ادا کرکے بے پناہ مقبولیت اور پزیرائی حاصل کی تھی۔[1]

تصانیف[ترمیم]

سفرنامے[ترمیم]

  • لندن لندن
  • دلی دور ہے
  • چلا مسافر سنگا پور
  • امریکا مت جائیو
  • برطانیہ چلیں
  • واہ برطانیہ
  • ایک بار چلو وینس
  • نیل کے ساحل
  • بغداد زندہ باد
  • لر نا کا آیا
  • لا پیرس
  • قرطبہ قرطبہ
  • جاناں سوئٹزر لینڈ
  • اور دیوار گرگئی
  • ترکی میں عباسی
  • کینیڈا انتظار میں
  • شو نار بنگلہ
  • ماریشس میں دھنک
  • میکسیکو کے میلے
  • سنگاپور کی سیر
  • عمان کے مہمان
  • صحرا میں شام
  • سات ستارے صحرا میں
  • شام تجھے سلام
  • ہندوستان ہمارا
  • لنکا ڈھائے
  • ساحلوں کا سفر
  • ناسو ہرا ہے
  • ذکر جل پری کا
  • ہوا ہوائی

بچوں کا ادب[ترمیم]

  • رحم دل ڈاکو
  • بہادر شہزادہ
  • شیشے کی آنکھ
  • ایک تھا مرغا
  • بہادر علی
  • شرارتی خرگوش
  • سمندر کا بیٹا
  • کائیں کائیں
  • میاؤں میاؤں
  • ہمارا پاکستان
  • عزم عالی شان
  • قوت عوام
  • منزل مراد
  • چوہدری رحمت علی
  • علامہ اقبال
  • قائد اعظم محمد علی جناح

خود نوشت سوانح[ترمیم]

  • 32 ناٹ آؤٹ
  • اک عمر کا قصہ

کالم[ترمیم]

  • دل دریا

اعزازات[ترمیم]

قمر علی عباسی کی علمی ،ادبی اور قومی خدمات کے اعتراف میں انھیں متعدد اعزازات سے نوازا گیا تھا جن میں آل پاکستان نیوز پیپر سوسائٹی کا بہترین کالم نگار ایوارڈ اور حکومت پاکستان کا عطا کردہ تمغا امتیاز سر فہرست ہیں ۔[1]

ناقدین کی رائے[ترمیم]

معروف کالم نگار دوست محمد فیضی قمر علی عباسی کے فن اسلوب کے بارے میں کہتے ہیں کہ:

قمرعلی عباسی نے اپنے مخصوص انداز تحریر سے سفرنامہ نگاری میں ایک نیا اور موثر انداز اختیار کیا۔ وہ سفرناموں میں ان علاقوں کی ثقافت اور تہذیبی اقدار کو بھی عمدگی سے بیان کرتے تھے۔ اسی انفرادیت نے قمرعلی عباسی کے سفرناموں کو مقبول بنایا۔ جس کے باعث انہوں نے 32 سفرنامہ لکھے اور اردو میں ایک ریکارڈ قائم کیا ۔ ان کے سفرناموں کی منظر کشی اور شگفتگی بھی ان کی مقبولیت کا بڑا سبب ہیں۔[3]۔

وفات[ترمیم]

قمر علی عباسی 31 مئی، 2013ء کو نیویارک، ریاستہائے متحدہ امریکا میں وفات پاگئے۔[1][2]

حوالہ جات[ترمیم]