مزار شریف میں ایرانی سفارت کاروں کا قتل

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
مزار شریف میں ایرانی سفارت کاروں کا قتل
مقاممزار شریف Edit this on Wikidata
تاریخلوا خطا ماڈیول:WikidataIB میں 388 سطر پر: attempt to index local 'fdate' (a nil value)۔


مزار شریف میں ایرانی قونصل خانے میں ایرانی سفارت کاروں کا قتل 8 اگست 1998 کو طالبان فورسز کے شہر پر قبضے کے بعد ہوا تھا۔ ابتدائی طور پر آٹھ سفارت کاروں کی ہلاکت کی اطلاع دی گئی تھی۔ دو سفارت کاروں اور ایک اور صحافی کی ہلاکت کی بعد میں تصدیق کی گئی۔ ایران نے سفارت کاروں کے قتل کا الزام طالبان پر عائد کیا ہے لیکن اس گروپ نے اس وقت دعویٰ کیا تھا کہ یہ ہلاکتیں "من مانی قوتوں" نے کی ہیں۔[1] یہ بھی کہا جاتا ہے کہ یہ ہلاکتیں آئی آر جی سی فورسز کی طرف سے کی گئیں، ایک پاکستانی سنی گروپ جو ممکنہ طور پر پاکستان کی انٹیلی جنس اور سیکورٹی سروسز سے منسلک ہے، نیز محمد عمر اور طالبان سے براہ راست ریڈیو لنکس۔ [2] اس قتل عام میں ہلاک ہونے والوں کی لاشوں کی بے عزتی کی گئی اور انہیں قتل عام کے بعد عمارت کے قریب دفن کر دیا گیا۔ اس وقت اسٹیٹ ڈپارٹمنٹ کے حکام نے اس واقعے کے جواب میں افغانستان پر ایرانی فوجی حملے کی منظوری دینے کی کوشش کی۔ کہا جاتا ہے کہ سید علی خامنہ ای کی آخری لمحات میں مخالفت کے باعث قرارداد کو مسترد کر دیا گیا اور ایران نے طالبان کے ساتھ جنگ نہیں کی[3]۔ ایرانی سفارت کاروں کا قتل طالبان کے ہاتھوں مزار شریف کے سقوط کے پہلے دن ہوا، جو طالبان کے ہاتھوں ہزاروں شیعوں اور عام شہریوں کے قتل کے موقع پر ہوا۔ [4][5]

پس منظر[ترمیم]

اس سے پہلے ایران نے افغانستان میں احمد شاہ مسعود کی سربراہی میں برہان الدین ربانی کی زیر قیادت افغان زیر قبضہ افغان حکومتی افواج کی حمایت کی تھی اور مزار شریف سرکاری افغان سرکاری افواج کا ہیڈ کوارٹر بن چکا تھا۔ اس کے برعکس اس وقت تین ممالک سعودی عرب، پاکستان اور متحدہ عرب امارات نے طالبان کو بطور حکومت تسلیم کیا تھا۔ ان برسوں کے دوران میں طالبان افغانستان کے اہم حصوں پر قبضہ کرنے میں کامیاب رہے[6]۔ پشتون طالبان کے مزار شریف پر قبضے کے بعد ہزاروں ازبک، تاجک اور ہزارہ جن میں زیادہ تر شیعہ تھے، مارے گئے۔ [7]

تہران میں بہشت زہرا کے 29ویں حصے میں مزار شریف میں دہشت گردی کے واقعے میں ہلاک ہونے والے ایرانی سفارت کار حیدر علی باقری کا مقبرہ

واقعات[ترمیم]

شہر پر طالبان کے قبضے کے بعد مزار شریف میں ایرانی قونصل خانے پر حملہ کیا گیا اور سفارت کاروں کو غائب کر دیا گیا۔ بعد میں سفارت کاروں کی ہلاکت کی اطلاع ملی۔ تاہم طالبان نے دعویٰ کیا ہے کہ یہ قتل باغیوں نے کیا ہے۔ یہ بھی اطلاع ہے کہ قونصل خانے کے کچھ عملے کو یرغمال بنایا گیا اور بعد میں چھوڑ دیا گیا۔ محمد حسین جعفریان اور امیرفرشاد ابراہیمی مزار شریف میں ایرانی ہاؤس آف کلچر کے مشیروں میں شامل تھے جو حملے کے وقت قونصل خانے کی عمارت کے باہر تھے اور حملے کے بعد خفیہ طور پر ایران واپس چلے گئے تھے۔ اسلامی انقلابی دستاویزی مرکز کے مطابق، مزار شریف میں اسلامی جمہوریہ ایران کے قونصلیٹ جنرل کے رکن اللہ مدد شاہسوند اس واقعے کے واحد گواہ ہیں جو اس واقعے میں زندہ بچ گئے۔ [8]

ان کا کہنا ہے کہ طالبان کے شہر میں داخل ہونے کے بعد ان کا ایک گروپ قونصل خانے میں آیا۔"شہید فلاح ان سے بات کرنے گئے اور دروازہ کھول دیا۔ طالبان اور مسلح افراد جیسی شخصیات کے لوگ اندر آگئے، اسلحہ اور دیگر فورسز کی تلاش میں، زیادہ تر شہداء ریگی نے ان کے سوالوں کے جواب دیے، سفارت خانے کو چیک کرنے کے بعد گاڑیوں کے سوئچ منگوائے اور کاریں باہر لے گئے۔ انہوں نے کہا، "نصیری اور میں ایک ساتھ کھڑے تھے، ان کے رویے کے باوجود، ہمارے دوستوں نے پرامن سلوک کیا۔" یہاں تک کہ انہیں پھل اور چائے بھی پیش کی گئی۔ طالبان نے ہم سب کی تلاشی لی، ہماری قیمتی رقم اور سامان لے لیا، پھر بھی مجھے یقین ہے کہ یہ لوگ چور نہیں تھے اور فریم ورک کے اندر رہتے ہوئے کام کرتے تھے، گویا ان کی قیادت باہر سے کی جا رہی تھی اور کوئی خاص چیز تلاش کر رہے تھے۔ انہوں نے کہا کہ جب ان کے ساتھ موجود سبھی لوگ کمرے میں داخل ہوئے اور ہمیں دیوار کے ساتھ کھڑے ہونے کو کہا تو انہوں نے اپنی بندوقیں اٹھائیں اور ہم پر فائرنگ شروع کر دی۔ شاید انہوں نے بچوں پر 50 یا 60 کے قریب گولیاں چلائیں، آوازیں بند ہونے کے بعد میں نے ان کی حرکت دیکھی، میں نے ایک لمحے کے لیے آنکھیں کھولیں اور ان میں سے ایک کا جوتا دیکھا، کچھ ہی لمحوں بعد جب آوازیں بالکل بند ہوگئیں تو میں اٹھا۔ ایک لمحے کے لیے اور چلا گیا۔ میں باہر تھا۔ » [9]

ہلاک ہونے والوں کے نام[ترمیم]

  • ناصر ریگی
  • محمد ناصر ناصری
  • نوراللہ نوروزی
  • رشید پاریاو فلاح
  • مجید نوری نیارکی (لاش نہیں ملی)
  • کریم حیدریان
  • محمد علی قیاسی
  • حیدرعلی باقری
  • محمود صارمی (نامہ نگار) [10]

اس واقعہ کے بارے میں تجزیہ[ترمیم]

  • فلنٹ اور ہلیری لورٹ کی لکھی ہوئی کتاب " تہران کی روانگی " میں اس وقت کی امریکی حکومت میں ایران کے مسائل پر دو ماہرین کا ذکر کیا گیا ہے:

۔۔ ۔ اسلامی جمہوریہ جنگ میں نہیں گیا۔ جیسا کہ اس وقت کے نائب وزیر خارجہ محسن امین زادہ نے بعد میں وضاحت کی، ایران کے سپریم لیڈر آیت اللہ سید علی خامنہ ای کی رائے یہ تھی کہ "افغانستان ایک دلدل کی طرح ہے۔ جو داخل ہوا وہ وقار کے ساتھ نہیں نکل سکتا۔ اس کا خیال تھا کہ ایک ردعمل ضروری ہے، لیکن ہمیں مسلح ردعمل کے لیے تمام شرائط پر غور کرتے ہوئے چوکنا رہنا چاہیے۔ آخر میں، ایرانی پالیسی سازوں نے یہ نتیجہ اخذ کیا کہ مسلح مداخلت "ایران کے لیے ایک دیرینہ مسئلہ بن سکتی ہے، یہ سوچے سمجھے تھے اور ایسا نہیں ہونا چاہیے تھا۔" ساتھ ہی انہوں نے محسوس کیا کہ "مزار شریف میں ایرانی قونصل خانے پر حملہ بین الاقوامی سطح پر ایران کے لیے ایک نیا اور مختلف موقع لا سکتا ہے"۔ ’’وہ اور ان کے ساتھیوں کا خیال ہے کہ مزار شریف کے واقعے نے زیادہ توجہ مبذول کرائی ہے اور ایران کو ایک موقع فراہم کیا ہے کہ وہ افغانستان میں ایسے واقعات سے نمٹنے کے لیے عالمی برادری کے ساتھ مل کر کام شروع کرے۔ درحقیقت یہ ہوا کہ اسلامی جمہوریہ نے سفارت کاری اور اقوام متحدہ کے ذریعے نام نہاد 2+6 فریم ورک کے آغاز میں مدد کرنے کی کوشش کی جو افغانستان کے چھ پڑوسیوں (چین، ایران، پاکستان، تاجکستان، ترکمانستان اور ازبکستان) کو ساتھ لے کر آتا ہے۔ اور روس ملک کے اندرونی انتشار سے پیدا ہونے والے سیکورٹی خدشات کو دور کرنے کے لیے پالیسیاں بنانے کے لیے اکٹھے ہوئے۔ [11][12]

  • اس قتل عام کے بعد ایران سے توقع کی جا رہی تھی کہ وہ فوجی طاقت کا استعمال کرتے ہوئے افغانستان پر حملہ کر دے گا۔ تقریباً 270,000 ایرانی فوجی افغان سرحد پر تعینات تھے۔ اقوام متحدہ کی مداخلت سے ایرانی مغویوں کو رہا کر دیا گیا اور حملہ پسپا کر دیا گیا۔ اگلے سال فروری (1999) میں ایران اور طالبان کے درمیان مذاکرات ہوئے جس سے تعلقات بہتر ہونے میں مدد نہیں ملی۔

ہرات میں 2001 کی بغاوت کے دوران، IRGC کی قدس فورس نے ہرات کو فتح کرنے اور شہر میں طالبان کی حکومت کا تختہ الٹنے میں امریکی افواج کی مدد کی۔ ایرانی افواج کی کمانڈ ایرانی جنرل رحیم صفوی کر رہے تھے۔ سی آئی اے کے ایجنٹوں نے آپریشنز کنٹرول فورسز کے ساتھ مل کر تہران میں آپریشن کی براہ راست نگرانی کی۔ [13][14][15][16]

ثقافت پر اثرات[ترمیم]

اس واقعے میں جاں بحق ہونے والے صحافی محمود صارمی کے اعزاز میں 8 اگست کو ایرانی کیلنڈر میں صحافیوں کا دن قرار دیا گیا ہے۔

لاشوں کی واپسی۔[ترمیم]

ایک ماہ سے زیادہ عرصہ گزرنے کے بعد قونصل خانے کے اردگرد دفن سفارت کاروں کی لاشیں مل گئیں اور انہیں ایران منتقل کر دیا گیا۔ [17]

یادگار[ترمیم]

تہران میں بہشت زہرا کے سیکشن 29 میں دہشت گردی کے اس واقعے میں مارے گئے لوگوں کی کئی یادگاری قبریں موجود ہیں۔

رد عمل[ترمیم]

سید علی خامنہ ای:

عام شہریوں کا قتل عام اور سیاسی اور اخباری ملازمتوں میں مصروف ایران کے پاکباز اور پرہیزگار نوجوانوں کی شہادت اپنے آپ میں ایک انوکھی تباہی تھی جس کی وجہ سے مسلم حکومتوں اور اقوام کو اس جنونی، وحشی اور بیگانگی کے خلاف سنجیدگی سے قدم اٹھانا چاہیے۔ دنیا کے عمومی قوانین سے بے خبر اسلام کی روشن تعلیمات نے جنم لیا۔ [18]

متعلقہ مضامین[ترمیم]

ذرائع[ترمیم]

  1. "طالبان 22 سال پیش با شهروندان مزار شریف و دیپلمات‌های ایرانی چہ کردند؟" (بزبان فارسی). 
  2. رشید، احمد (2٠٠٠)، طالبان: اسلام مبارز، نفت و بنیادگرایی در آسیای میانہ، نیوهیون: انتشارات دانشگاہ ییل، ISBN 978-0-300-08340-8
  3. "چرا ایران از حملہ بہ افغانستان در دورہ دولت اصلاحات منصرف شد؟/ چند روایت از طرح فرماندہ وقت سپاہ برای حملہ بہ هرات". 
  4. "طالبان 22 سال پیش با شهروندان مزار شریف و دیپلمات‌های ایرانی چہ کردند؟" (بزبان فارسی). 
  5. "MMP: Afghan Taliban". 
  6. "طالبان 22 سال پیش با شهروندان مزار شریف و دیپلمات‌های ایرانی چہ کردند؟" (بزبان فارسی). 
  7. "کشتار دیپلمات‌های ایرانی از زبان تنها شاهد حادثہ". 10 ژوئیہ 2016 میں اصل |archive-url= بحاجة لـ |url= (معاونت) سے آرکائیو شدہ. 
  8. "طالبان 22 سال پیش با شهروندان مزار شریف و دیپلمات‌های ایرانی چہ کردند؟" (بزبان فارسی). 
  9. "پشت پردہ قتل دیپلمات‌های ایرانی در مزارشریف". تابناک. 
  10. عزیمت بہ تهران، ص 63 و 64، نشر مهرگان خرد
  11. "مزارشریف و بازخوانی تاریخی". رجا نیوز. 
  12. 34 Years of Getting to No with Iran – POLITICO Magazine۔ Politico Magazine۔ Barbara Slavin. نومبر 19, 2013. Permanent Archived Link۔ at WebCite۔ اخذکردہ بتاریخ and archived on جولائی 4, 2016.
  13. USATODAY.com – Iran helped overthrow Taliban, candidate says۔ USA Today۔ Posted 6/9/2005 10:00 PM and Updated 6/9/2005 11:37 PM. Permanent Archived Link
  14. Iranian Special Forces Reportedly Fight Alongside US in Battle for Herat۔ Permanent Archived Link
  15. "uprising in Herat 2001. ویکی‌پدیای انگلیسی۔ نسخہ 14 ژوئیہ 2016۔". 
  16. "ناگفته‌های شهادت دیپلمات‌های ایران در مزارشریف/ ویژگی‌های خاص شهید صارمی/ داعش و تداوم ناامنی‌ها". خبرگزاری فارس. 18 نوامبر 2016 میں اصل |archive-url= بحاجة لـ |url= (معاونت) سے آرکائیو شدہ. 
  17. "حادثہ مزار شریف". خبرآنلاین.