مچل سینٹنر

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
مچل سینٹنر
Mitchell Santner.jpg
ذاتی معلومات
مکمل ناممچل جوزف سینٹنر
پیدائش5 فروری 1992ء (عمر 30 سال)
ہیملٹن، وائکاٹو، نیوزی لینڈ
قد1.81 میٹر (5 فٹ 11 انچ)
بلے بازیبائیں ہاتھ کا بلے باز
گیند بازیبائیں ہاتھ کا سلو گیند باز
حیثیتآل راؤنڈر
بین الاقوامی کرکٹ
قومی ٹیم
پہلا ٹیسٹ (کیپ 268)27 نومبر 2015  بمقابلہ  آسٹریلیا
آخری ٹیسٹ2 جون 2021  بمقابلہ  انگلینڈ
پہلا ایک روزہ (کیپ 184)9 جون 2015  بمقابلہ  انگلینڈ
آخری ایک روزہ15 جولائی 2022  بمقابلہ  آئرلینڈ
ایک روزہ شرٹ نمبر.74
پہلا ٹی20 (کیپ 66)23 جون 2015  بمقابلہ  انگلینڈ
آخری ٹی2018 جولائی 2022  بمقابلہ  آئرلینڈ
ملکی کرکٹ
عرصہٹیمیں
2011/12– تاحالناردرن ڈسٹرکٹس
2016–2017وورسٹر شائر
2019– تاحالچنائی سپر کنگز
2020بارباڈوس ٹرائیڈنٹس
کیریئر اعداد و شمار
مقابلہ ٹیسٹ ایک روزہ ٹی 20 آئی فرسٹ کلاس
میچ 24 77 63 56
رنز بنائے 766 947 360 2,344
بیٹنگ اوسط 24.70 27.05 14.40 29.30
100s/50s 1/2 0/2 0/0 3/14
ٹاپ اسکور 126 67 37 126
گیندیں کرائیں 4,037 3,505 1,274 8,274
وکٹ 41 80 68 86
بالنگ اوسط 45.63 35.56 22.80 47.22
اننگز میں 5 وکٹ 0 1 0 0
میچ میں 10 وکٹ 0 0 0 0
بہترین بولنگ 3/53 5/50 4/11 4/111
کیچ/سٹمپ 16/– 30/– 27/– 46/–
ماخذ: ESPNcricinfo، 18 جولائی 2022

مچل جوزف سینٹنر (پیدائش:5 فروری 1992ء) نیوزی لینڈ کے ایک بین الاقوامی کرکٹ کھلاڑی ہیں جو ہر طرح کے کھیل کھیلتے ہیں۔ ڈومیسٹک طور پر وہ ناردرن ڈسٹرکٹس لاع کی کرکٹ ٹیم کے لیے کھیلتا ہے۔ وہ ایک باؤلنگ آل راؤنڈر ہے جو بائیں ہاتھ سے بلے بازی کرتا ہے اور بائیں ہاتھ سے اسپن کو سلو بولتا ہے۔ وہ ٹیسٹ میں نیوزی لینڈ کے لیے ساتویں وکٹ کی سب سے زیادہ شراکت میں شامل رہے ہیں۔ سینٹنر کو 2014-15ء کے گھریلو سیزن کے بعد نیوزی لینڈ کی ٹیم کی طرف بڑھا دیا گیا۔ انہیں 2015ء کے عالمی کپ کے بعد ڈینیل ویٹوری کی ریٹائرمنٹ کے بعد انگلینڈ کے دورے کے لیے ایک روزہ اسکواڈ میں شامل کیا گیا تھا کیونکہ نیوزی لینڈ نے بائیں ہاتھ کے سپن کے ایک اور آپشن کی تلاش کی تھی۔ اس کے بعد سینٹنر کو دورہ انگلینڈ کے آغاز میں انڈین پریمیئر لیگ میں کھلاڑیوں کی عدم موجودگی کو پورا کرنے کے لیے ٹورنگ سکواڈ میں شامل کیا گیا اور سمرسیٹ کے خلاف اچھی طرح سے 94 رنز بنا کر فوری تاثر بنایا۔ اسے ایجبسٹن میں اپنا ایک روزہ بین الاقوامی ڈیبیو سونپا گیا جس نے ناردرن ڈسٹرکٹس کے لیے صرف 19 لسٹ اے میچ کھیلے۔ نومبر 2020ء میں سینٹنر نے پہلی بار کسی بین الاقوامی میچ میں نیوزی لینڈ کی کپتانی کی، جس نے ویسٹ انڈیز کے خلاف تیسرے ٹوئنٹی 20 انٹرنیشنل میچ میں ٹیم کی قیادت کی۔ [1] انہوں نے پاکستان کے خلاف پہلے ٹی ٹوینٹی انٹرنیشنل میچ میں ایک بار پھر ایسا کیا۔ [2]

بین الاقوامی کیریئر[ترمیم]

اپریل 2015ء میں سینٹنر کو دورہ انگلینڈ کے لیے نیوزی لینڈ کے محدود اوورز کے سکواڈ میں شامل کیا گیا۔ [3] انہوں نے 9 جون 2015ء کو نیوزی لینڈ کے لیے ایک روزہ بین الاقوامی کرکٹ میں ڈیبیو کیا۔ [4] ان کی پہلی بین الاقوامی وکٹ تھی جب انہوں نے ساتھی ڈیبیو کرنے والے سیم بلنگز کو 3 رنز پر پھنسایا۔ اسی سیریز کے چوتھے ایک روزہ کے دوران انہوں نے ایک اوور میں عادل رشید کی گیند پر 28 رنز بنائے جو انگلینڈ میں پوسٹ کیے گئے ایک اوور میں دوسرے سب سے زیادہ رنز ہیں۔ انہوں نے 23 جون 2015ء کو اسی سیریز میں اپنا ٹوئنٹی 20 انٹرنیشنل ڈیبیو کیا [5] 27 نومبر 2015ء کو سینٹنر نے آسٹریلیا کے خلاف اپنے پہلے ٹیسٹ میچ میں ڈیبیو کیا۔ وہ میچ بھی پہلا ڈے/نائٹ ٹیسٹ تھا۔ وہ تاریخ کے پہلے کھلاڑی بھی بن گئے جنہوں نے ڈے نائٹ ٹیسٹ میچ میں اپنا ٹیسٹ ڈیبیو کیا جہاں انہوں نے آسٹریلیا کے خلاف اپنا ڈیبیو کیا۔ انہوں نے اپنے ٹیسٹ کیریئر کی پہلی گیند پر چوکا مارا۔ [6]

2016ء کا عالمی ٹی ٹوئنٹی[ترمیم]

سینٹنر کو نیوزی لینڈ کے اسکواڈ میں بطور پریمیئر سپن بولر نیتھن میک کولم کے ساتھ منتخب کیا گیا تھا جو اپنا آخری بین الاقوامی دورہ کھیل رہے تھے۔ میزبان بھارت کے خلاف پہلے میچ میں سینٹنر نے شاندار باؤلنگ کا مظاہرہ کرتے ہوئے مین آف دی میچ کا ایوارڈ جیتا جس کی وجہ سے ان کی ٹیم 47 رنز سے جیت گئی۔ عالمی ٹی ٹوئنٹی میں بھی نیوزی لینڈ کے سپنر کی جانب سے 11 رن پر 4 وکٹوں کی ان کی باؤلنگ کی بہترین کارکردگی ہے۔ [7] [8] انہیں ائی سی سی، کرک انفو اور کرک بز نے 2016ء کے ٹی ٹوینٹی عالمی کپ کے لیے 'ٹیم آف دی ٹورنامنٹ میں نامزد کیا تھا۔ [9] [10] [11]

2017ء میں جنوبی افریقہ[ترمیم]

سینٹنر اور جیتن پٹیل جنوبی افریقہ کے خلاف ایک روزہ میچ میں بولنگ کا آغاز کرنے والے اسپنرز کی پہلی جوڑی بن گئے۔

2018ء کا کرکٹ سیزن[ترمیم]

16 جنوری 2018ء کو سینٹنر نے پاکستانی کرکٹر فخر زمان کو ایک ایسی گیند پع بولڈ کیا جس پر وہ کچھ عرصے سے کام کر رہے تھے لیکن حال ہی میں اپنے بین الاقوامی سطح ہر آزمایا۔ مارچ 2018ء میں سینٹنر گھٹنے کی انجری میں مبتلا ہونے کے بعد انگلینڈ کے خلاف ٹیسٹ سیریز سے باہر ہو گئے تھے جس کی وجہ سے وہ چھ سے 9 ماہ تک ایکشن میں نظر نہیں آئے اس چوٹ کا مطلب یہ تھا کہ سینٹنر کا انگلش کاؤنٹی کرکٹ میں ڈربی شائر اور انڈین پریمیئر لیگ کے ساتھ 2018ء کے دوران منصوبہ بند سپیل کو منسوخ کرنا پڑا۔ مئی 2018ء میں وہ ان 20 کھلاڑیوں میں سے ایک تھے جنہیں نیوزی لینڈ کرکٹ نے 2018-19ء کے سیزن کے لیے ایک نیا معاہدہ دیا تھا۔ [12]

2019ء کے سیزن میں[ترمیم]

سینٹنر نے سری لنکا کے خلاف 11 جنوری 2019ء کو فریقین کے درمیان واحد ٹی ٹوینٹی انٹرنیشنل میں بین الاقوامی واپسی کی اس سے پہلے ہندوستان کے خلاف پانچ میں سے چار ایک روزہ میچوں کے ساتھ ساتھ تینوں ٹی ٹوینٹی انٹرنیشنل اور پھر بنگلہ دیش کے خلاف تین میں سے دو ایک روزہ میچز کھیلے اسی موسم گرما. اپریل 2019ء میں انہیں 2019ء کرکٹ عالمی کپ کے لیے نیوزی لینڈ کی ٹیم میں شامل کیا گیا۔ [13] [14] سینٹنر کو چنئی سپر کنگز نے 2019ء میں 50 لاکھ انڈین روپے میں خریدا اور اس کے بعد اسی سال آئی پی ایل میں ڈیبیو کیا۔ [15] چنئی سپر کنگز کے لیے کھیلتے ہوئے اس نے میچ کی آخری گیند پر چھکا مار کر راجستھان رائلز کو شکست دی۔ [16] اگست 2021ء میں سینٹنر کو 2021ء کے ائی سی سی مینز ٹی 20 عالمی کپ کے لیے نیوزی لینڈ کی ٹیم میں شامل کیا گیا۔ [17] فروری 2022ء میں انہیں چنئی سپر کنگز نے 2022ء کے انڈین پریمیئر لیگ ٹورنامنٹ کے لیے نیلامی میں خریدا۔ [18]

مزید دیکھیے[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. "No Southee, Taylor, Jamieson as New Zealand aim for clean sweep". International Cricket Council. اخذ شدہ بتاریخ 30 نومبر 2020. 
  2. "Debutant Jacob Duffy and Tim Seifert the difference as New Zealand guts it past Pakistan". ESPNcricinfo (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 19 دسمبر 2020. 
  3. "Guptill, Henry in NZ Test squad for England". ESPNcricinfo. اخذ شدہ بتاریخ 05 اپریل 2015. 
  4. "New Zealand tour of England, 1st ODI: England v New Zealand at Birmingham, Jun 9, 2015". ESPNcricinfo. ESPN Sports Media. 9 June 2015. اخذ شدہ بتاریخ 09 جون 2015. 
  5. "New Zealand tour of England, Only T20I: England v New Zealand at Manchester, Jun 23, 2015". ESPNcricinfo. ESPN Sports Media. 23 June 2015. اخذ شدہ بتاریخ 23 جون 2015. 
  6. "Mitchell Santner poised for surprise debut as Black Caps turn to spin in Adelaide test". Fairfax Digital. Fairfax New Zealand Ltd. 26 November 2015. اخذ شدہ بتاریخ 27 نومبر 2015. 
  7. "World T20, 13th Match, Super 10 Group 2: India v New Zealand at Nagpur, 15 March 2016". ESPNcricinfo. اخذ شدہ بتاریخ 18 مارچ 2016. 
  8. "NZ spin trio routs India on raging turner". اخذ شدہ بتاریخ 17 مارچ 2016. 
  9. "ICC names WT20 Teams of the Tournament". Cricket Australia. اخذ شدہ بتاریخ 25 نومبر 2020. 
  10. "ESPNcricinfo's team of the 2016 World T20". ESPNcricinfo. 
  11. "Cricbuzz Team of the ICC World T20, 2016". Cricbuzz. 
  12. "Todd Astle bags his first New Zealand contract". ESPN Cricinfo. اخذ شدہ بتاریخ 15 مئی 2018. 
  13. "Sodhi and Blundell named in New Zealand World Cup squad". ESPN Cricinfo. اخذ شدہ بتاریخ 03 اپریل 2019. 
  14. "Uncapped Blundell named in New Zealand World Cup squad, Sodhi preferred to Astle". International Cricket Council. اخذ شدہ بتاریخ 03 اپریل 2019. 
  15. "New Zealand Players in IPL". 3 April 2021. 
  16. "Mitchell Santner smashes final-ball six to seal dramatic IPL win for Super Kings". Stuff. 11 April 2019. اخذ شدہ بتاریخ 25 نومبر 2020. 
  17. "Black Caps announce Twenty20 World Cup squad, two debutants for leadup tours with stars absent". Stuff. 9 August 2021. اخذ شدہ بتاریخ 09 اگست 2021. 
  18. "IPL 2022 auction: The list of sold and unsold players". ESPN Cricinfo. اخذ شدہ بتاریخ 13 فروری 2022.