نورمین اور قرون وسطی کا لندن

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
تاریخ لندن
مزید دیکھیے
باب لندن
لندن کا نقشہ 1300ء
1471ء میں لندن کے خاندان لنکاسٹر کے محاصرے پر خاندان یورک کا حملہ

ہسٹنگز کی جنگ جیتنے کے بعد ولیم، ڈیوک نارمنڈی کی انگلستان کے بادشاہ کے طور پر 1066ء کو کرسمس کے دن نئے مکمل ہونے والے ویسٹ منسٹر ایبے میں تاج پوشی ہوئی۔ [1] ولیم فاتح نے ٹاور آف لندن میں تعمیر کروایا۔ یہ انگلستان میں بہت سے نورمن قلعوں میں سے پہلا جو شہر کے جنوب مشرقی کونے میں مقامی باشندوں پر رعب ڈالنے کے لئے پتھروں سے دوبارہ تعمیر کیا گیا۔ [2] 1097ء میں ولیم دوم ویسٹ منسٹر ہال کی عمارت کا آغاز کیا جو ویسٹ منسٹر ایبے کے قریب اسی کا ہم نام تھا۔ یہی ہال ایک نئے محل ویسٹ منسٹر پیلس کی بنیاد بنا۔ [3][4]

بارہویں صدی میں مرکزی حکومت کے ادارے جس میں اب تک شاہی انگریزی عدالت بھی شامل تھی ملک بھر میں گھومتے رہتے تھے۔ لیکن حجم اور تضلیل و تدلیس بڑھنے سے یہ ایک جگہ پر مستحکم ہو گئے۔ زیادہ تر مقاصد کے لئے ویسٹ منسٹر کا انتخاب کیا گیا، حالانکہ شاہی خزانے ونچسٹر سے منتقل ہونے کے بعد ٹاور میں قائم ہوا۔ ویسٹ منسٹر شہر سرکاری لحاظ سے ایک حقیقی دار الحکومت کی شکل اختار کر گیا۔ اس کا ہمسایہ لندن شہر انگلستان کا سب سے بڑا شہر اور مرکزی تجارتی مرکز رہا اور اس کی اپنی منفرد انتظامیہ، کارپوریشن آف لندن کے تحت ترقی ہوئی۔ 1100ء میں اس کی آبادی 18،000 کے قریب تھی، 1300ء تک یہ بڑھ کر 100،000 ہو چکی تھی۔ [5] چودہویں صدی کے وسط میں لندن میں سیاہ موت کی شکل میں تباہی مچ گئی جس سے لندن نے اپنی آبادی کا ایک تہائی حصہ گنوا دیا۔ [6] 1381ء میں کسانوں کے بغاوت کا محور لندن تھا۔ [7]

1290ء میں ایڈورڈ اول سے ان کے ملک بدر کرنے سے پہلے لندن انگلستان کی یہودی آبادی کا ایک مرکز تھا۔ یہودیوں کے خلاف تشدد کا آغاز 1190ء میں ہوا، جب یہ افواہ پھیلائی گئی کہ نئے بادشاہ نے ان کے قتل عام کا حکم دیا تھا کیونکہ انہوں نے اس کے تاجپوشی پر خود کو پیش کیا تھا۔ [8] بارونس کی دوسری جنگ کے دوران میں 1264ء میں سائمن ڈی مونٹفورٹ کے باغیوں نے قرضوں کا ریکارڈ ضبط کرنے کی کوشش کے دوران میں 500 یہودیوں کو ہلاک کر دیا۔ [9]

قرون وسطی کا لندن تنگ اور گھومتی گلیوں سے بنا تھا اور زیادہ تر عمارتیں لکڑی اور تنکے جیسے آتش گیر مادے سے بنی تھیں، جس نے آگ کو مستقل خطرہ بنا دیا، جبکہ شہروں میں صفائی ستھرائی کا معیار بہت معمولی تھا۔

حوالہ جات[ترمیم]

  1. "History – 1066 – King William". BBC. 22 ستمبر 2009 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 5 مئی 2008. 
  2. Tinniswood، Adrian. "A History of British Architecture — White Tower". BBC. 13 فروری 2009 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 5 مئی 2008. 
  3. "UK Parliament — Parliament: The building". UK Parliament. 9 نومبر 2007. 11 مارچ 2008 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 27 اپریل 2008. 
  4. "Palace of Westminster". UK Parliament. 4 اپریل 2008 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 27 اپریل 2008. 
  5. Schofield، John؛ Vince، Alan (2003). Medieval Towns: The Archaeology of British Towns in Their European Setting. Continuum International Publishing Group. صفحہ 26. ISBN 978-0-8264-6002-8. 
  6. "Black Death". BBC History. مورخہ 30 اپریل 2011 کو اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 3 نومبر 2008.  Check date values in: |access-date=, |archive-date= (معاونت)
  7. "Richard II (1367–1400)". BBC. 30 اپریل 2011 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 12 اکتوبر 2008. 
  8. Jacobs، Joseph (1906). "England". یہودی دائرۃ المعارف. JewishEncyclopedia.com. 
  9. Robin R. Mundill (2010)، The King's Jews، London: Continuum، صفحات 88–99، ISBN 978-1-84725-186-2، LCCN 2010282921، OCLC 466343661، OL 24816680M