وائی ایس راجشیکھر ریڈی

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
وائی ایس راجشیکھر ریڈی
Y. S. Rajasekhara Reddy, 2008.jpg
 

معلومات شخصیت
پیدائش 8 جولا‎ئی 1949  ویکی ڈیٹا پر (P569) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
پلیویندلہ  ویکی ڈیٹا پر (P19) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
وفات 2 ستمبر 2009 (60 سال)[1]  ویکی ڈیٹا پر (P570) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
آندھرا پردیش  ویکی ڈیٹا پر (P20) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
شہریت Flag of India.svg بھارت (26 جنوری 1950–)
Flag of India.svg ڈومنین بھارت  ویکی ڈیٹا پر (P27) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
جماعت انڈین نیشنل کانگریس  ویکی ڈیٹا پر (P102) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
اولاد وائی ایس جگن موہن ریڈی  ویکی ڈیٹا پر (P40) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
مناصب
رکن نویں لوک سبھا   ویکی ڈیٹا پر (P39) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
رکن مدت
2 دسمبر 1989  – 13 مارچ 1991 
منتخب در بھارت عام انتخابات، 1991ء 
حلقہ انتخاب کڈپہ لوک سبھا حلقہ 
پارلیمانی مدت نویں لوک سبھا 
وزیر اعلیٰ آندھرا پردیش   ویکی ڈیٹا پر (P39) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
برسر عہدہ
14 مئی 2004  – 2 ستمبر 2009 
Fleche-defaut-droite-gris-32.png چندر بابو نائڈو 
  Fleche-defaut-gauche-gris-32.png
عملی زندگی
مادر علمی جامعہ سری وینکٹیشورا  ویکی ڈیٹا پر (P69) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
پیشہ سیاست دان  ویکی ڈیٹا پر (P106) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
مادری زبان تیلگو  ویکی ڈیٹا پر (P103) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
پیشہ ورانہ زبان تیلگو،  ہندی،  انگریزی  ویکی ڈیٹا پر (P1412) کی خاصیت میں تبدیلی کریں

ڈاکٹر وائی۔ ایس۔ راج شیکھر ریڈی : Yeduguri Sandinti Rajasekhara Reddy (جولائی 8، 1949 - 2 ستمبر 2009 ) : بھارت کی ریاست آندھرا پردیش کے وزیر اعلیٰ رہ چکے ہیں۔ ان کا تعلق کانگریس پارٹی سے ہے۔ شہرہ یافتہ راجشیکھر ریڈی عوامی دوست اور کسان دوست کے نام سے جانے جاتے ہیں۔ بالخصوص یہ مسلم دوست اور اردو نواز رہ چکے ہیں۔ کڈپہ ضلع کے گاؤں “پلی ویندلہ“ سے تعلق رکھتے ہیں۔

انتقال[ترمیم]

2 ستمبر 2009،صبح 9:35 بجے شہر حیدرآباد دکن سے ہیلی کاپٹر سے چتور ضلع روانہ ہوئے۔ مگر راستے میں کرنول ضلع کے ایک گاؤں ردراکونڈا کی پہاڑیوں میں ہیلی کاپٹر حادثہ کا شکار ہو گیا، اس حادثے میں ان کے ساتھ موجود چار افراد بھی مارے گئے۔ یہ پہاڑیاں نلہ ملا پہاڑیاں ہیں۔[2][3]. اس علاقے میں شدید بارش ہونے کی وجہ سے یہ حادثہ پیش آیا اور ان کا حال 24 گھنٹوں تک معلوم نہ ہو سکا۔ چوبیس گھنٹے کی تلاشی کے بعد ہی اس حادثہ کی خبر ملی۔ یہ تلاشی آپریشن بھارت کا سب سے بڑا تلاشی آپریشن مانا جا رہا ہے۔ جس میں انڈین ایرفورس، ملٹری، سی۔ آر۔ پی۔ ایف، گرے ہونڈس اور علاقائی پولس شامل رہے۔[4][5]

خدمات - عہدے[ترمیم]

  • وزیر برائے ترقی قصبات (1980-82)
  • وزیر برائے ایکسائز (1982)
  • وزیر برائے تعلیمات (1982-83)
  • وزیر اعلیٰ (2004–2009)

حوالہ جات[ترمیم]

  1. http://articles.timesofindia.indiatimes.com/2009-09-03/india/28065464_1_ysr-reddy-helicopter-crash-y-s-rajasekhara-reddy
  2. "Panic, anxiety grips YSR's followers". دی ٹائمز آف انڈیا. 2009-09-02. 06 ستمبر 2009 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 02 ستمبر 2009. 
  3. 5000 CRPF personnel involved in search for Andhra CM - Indian Express
  4. "Andhra CM's fate uncertain, IAF deploys Sukhoi to locate YSR's chopper". The Economic Times. 2009-09-02. 26 دسمبر 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 02 ستمبر 2009. 

بیرونی روابط[ترمیم]

وائی یس راجشیکھر ریڈی