پی آئی اے پرواز 544

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
پی آئی اے پرواز 544
PIA-F27-Lahore-30861.JPG
پی آئی اے کا فوکر، اسی جیسا جہاز اغوا ہوا
اغوا
تاریخ25 مئی 1998
خلاصہگوادر انٹرنیشنل ایئرپورٹ سے بلوچ اسٹوڈنٹس آرگنائزیشن سے تعلق رکھنے والے تین مسلح افراد نے اغوا کیا تھا۔
مقامگوادر بین الاقوامی ہوائی اڈا، پاکستان
ہوائی جہاز
ہوائی جہاز قسمفوکر F-27
آئی اے ٹی اے پرواز نمبر.PK544
آئی سی اے او پرواز نمبر.PIA544
پرواز نمبرپاکستان 544
مقام پروازگوادر بین الاقوامی ہوائی اڈا، پاکستان
منزل مقصودجناح بین الاقوامی ہوائی اڈا، پاکستان
کل افراد38
مسافر33
عملہ5
اموات0
زخمی0

پی آئی اے کی پرواز PK-544، پاکستان انٹرنیشنل ایئر لائنز کا ایک فوکر F27 مئی25، 1998 کو، گوادر انٹرنیشنل ایئرپورٹ سے پرواز کے فورا بعد ہی ،بلوچ اسٹوڈنٹس آرگنائزیشن سے تعلق رکھنے والے تین مسلح افراد نے انھیں اغوا کر لیا تھا۔ طیارہ، جن میں 33 مسافر اور عملے کے 5 ارکان شامل تھے، صرف گوادر انٹرنیشنل ایئرپورٹ، بلوچستان سے پہنچا تھا، اور اسے حیدرآباد ایئرپورٹ، سندھ میں لینڈ کرنا تھا۔ ہائی جیکرز نے مطالبہ کیا کہ ہوائی جہاز کو نئی دہلی، ہندوستان روانہ کیا جائے۔ پاک فوج کے اسپیشل سروس گروپ کی حیدری کمپنی، ساتویں کمانڈو ضرار بٹالین، ایس ایس جی ڈویژن، پاکستان رینجرز کے ممبروں کے ہمراہ، طیارے میں دھاوا بولی، جب کہ پاکستان پولیس نے طیارے کو گھیرے میں لے لیا۔ آپریشن کا اختتام ان تینوں ہائی جیکرز کے ساتھ ہوا جن کو پاکستان نے گرفتار کیا اور اسے موت کی سزا سنائی -[1]

پی آئی اے ہوائی جہاز کا اغوا[ترمیم]

یہ واقعہ اس وقت شروع ہوا جب طیارہ پرواز کررہا تھا، جہاز کے عملے کے 5 ممبروں کے ساتھ 33 مسافر سوار تھے۔ کراچی جانے والی پی آئی اے فوکر ایئرکرافٹ، فلائٹ پی کے 554، کو 25 مئی 1998 کو شام 5 بج کر 35 منٹ پر گوادر سے روانہ ہونے کے فورا بعد ہی ہائی جیک کر لیا گیا۔[2]

واقعہ[ترمیم]

پرواز کا محاصرہ 544[ترمیم]

طیارہ رات گئے حیدرآباد پہنچا۔ ہوائی اڈے کے منیجر نے حیدرآباد کی لائٹس اور نشانات بند کردیئے تھے۔ بعد ازاں رات کے وقت، ہائی جیکرز نے اڑان کے انجینئر سجاد چوہدری کو بھارت سے نئی دہلی جانے والے طیارے میں ایندھن کے لئے حکام سے بات کرنے کے لئے رہا کیا۔ پاکستان پولیس کے اعلیٰ عہدیداروں کی سربراہی میں سات گھنٹے تک جاری رہنے والے مذاکرات کے بعد یہ تعطل ختم ہوا۔ عہدیداروں میں پولیس کے سینئر سپرنٹنڈنٹ پولیس اختر گورچانی، اسسٹنٹ سپرنٹنڈنٹ پولیس عثمان انور، ڈپٹی کمشنر اینڈ ڈسٹرکٹ مجسٹریٹ حیدرآباد سہیل اکبر شاہ اور پاکستان رینجرز میجر عامر ہاشمی شامل تھے۔ اغوا کاروں نے طیارے کے لئے خوراک، پانی اور ایندھن کا مطالبہ کیا۔

حملے کی تیاری[ترمیم]

رینجرز اور فوج کے جوانوں نے پورے ہوائی اڈے کو گھیرے میں لے لیا تھا۔ حیدری کمپنی، ساتویں کمانڈو ضرار بٹالین، ایس ایس جی ڈویژن سے تعلق رکھنے والے کمانڈوز کو طیارے کے ممکنہ طوفان کی وجہ سے الرٹ کردیا گیا تھا۔ ہوائی اڈے کی تمام لائٹس بند کردی گئی تھیں اور ہوائی اڈے سے ملنے والے روڈ لنک سیل کردیئے گئے تھے۔ پانی اور کھانا پہنچانے کے لئے، پاکستان پولیس گورچانی اور انور نے رضاکارانہ خدمات انجام دیں اور اس طرح پولیس غیر مسلح ہونے کے باوجود طیارے تک پہنچنے میں کامیاب ہوگئی۔

جب افسران ہائی جیکرز کو مشغول کرنے کے لئے طیارے میں موجود تھے، اسپیشل سروس گروپ نے مشن کے لئے تیار کیا۔ اس دوران میں، افسروں نے ایک دوسرے سے ہندی بولی اور ہائی جیکرز کو راضی کیا کہ وہ ہندوستانی شہری ہیں، جیسا کہ اغوا کاروں نے سوچا تھا کہ وہ ہندوستانی ہوائی اڈے پر ہیں۔ وہ دو ہائی جیکرز جنہوں نے اپنی شناخت صابر اور شبیر کے نام سے کی تھی ان کے جسموں پر دستی بم باندھے باہر آئے تھے۔ پولیس افسران نے وقت گزارنے کے لئے، اغوا کاروں کو بتایا کہ پاکستانی سفارتخانے کے لوگوں کو ان سے بات کرنے کے لئے طلب کیا گیا ہے، لیکن ساتھ ہی انہوں نے اصرار کیا کہ وہ مسافروں کو تکلیف نہ دیں اور خواتین اور بچوں کو جانے دیں۔

حوالہ جات[ترمیم]

  1. "Pakistan Executes Eight Death Row Convicts". Indian Express. 28-05-2015. اخذ شدہ بتاریخ 31/5/2020. 
  2. "PIA Fokker hijackers sent to gallows after 17 years". Dawn. 28-05-2015. اخذ شدہ بتاریخ 31 مئی 2020.