چاند ستارہ

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
سبز ہلال و تارا

ہلال و ستارہ یا چاند ستارہ قدیم دنیا سے آج تک انسانی تہذیبوں میں پہچان رکھنے والی ایک مشہور علامت ہے۔ یہ جنوبی یورپ، فارس سے لے کر وسط ایشیا کے خطوں تک معروفیت رکھتی ہے۔[1]

اس علامت کو اس وقت بہت زیادہ شہرت ملی جب عثمانیوں نے 19 ویں صدی میں مغربیت (تنظیمات) جیسی اصلاحات شروع کی۔ 1844ء میں سرخ پس منظر پر بنے ہلال اور ستارہ والا جھنڈا آج بھی ہلکی سے تبدیلی کے بعد ترکی کا جھنڈا ہے۔ جبکہ وہ ممالک جو کبھی عثمانی خلافت کا حصہ رہی تھیں آج بھی ان کے جھنڈے میں یہ علامت دیکھی جاسکتی ہے جیسے لیبیاء، تونس، الجزیرہ وغیرہ۔ اسی طرح 20 ویں صدی میں آزاد ہونے والے ممالک جیسے کہ آذربائیجان، پاکستان، ملائیشیا اور موریطانیہ کے جھنڈوں میں بھی یہ علامت ملتی ہیں۔

1950ء تا 60 کی دہائی میں اسے اسلامی علامت کے طور پر دیکھا جانے لگا ۔[2] اور 1970 میں میں کئی عرب اسلامی تحریکوں میں اس علامت کو استعمال کیا گئی ۔.[3] اسلامی تعلق کو اسلامی کیلینڈر سے دیکھا جاتا ہے جو ہلال نظر آنے پر شروع ہوتی ہے۔

چاند ستارے والے پرچم[ترمیم]

چاند اور متعدد ستارے
صرف چاند
سابقہ ریاستیں

حوالہ جات[ترمیم]

  1. In the Near East and Eastern Mediterranean, see for example the 'Ur-Nammu stela' of ca. 2100-2200 BCE: "Over the king's head, at the top of the stela, is a very large star or radiant sun-disc, floating free within a crescent." Jeanny Vorys Canby, The "Ur-Nammu" Stela, University of Pennsylvania Museum of Archaeology, 2006, p18; In Central Asia and India see, for example, a coin issue of Chashtana (probably dating to the late first or early second century AD): "A rare type with crescent and star alone on the reverse is probably Chashtana's earliest issue, struck before he extended his power into Malwa." H.H. Dodwell (Ed.), The Cambridge Shorter History of India, Cambridge University Press, 1935, p83; early Mesopotamian and, much later, Sassanian examples of the 'star and crescent' motif are of course well known.
  2. The symbolism of the star and crescent in the flag of the مملکت لیبیا (1951–1969) was explained in an English language booklet, The Libyan Flag & The National Anthem, issued by the Ministry of Information and Guidance of the Kingdom of Libya (year unknown, cited after Jos Poels at FOTW, 1997) as follows: "The crescent is symbolic of the beginning of the lunar month according to the Muslim calendar. It brings back to our minds the story of Hijra (migration) of our Prophet Mohammed from his home in order to spread Islam and teach the principles of right and virtue. The Star represents our smiling hope, the beauty of aim and object and the light of our belief in God, in our country, its dignity and honour which illuminate our way and puts an end to darkness. "
  3. Edward E. Curtis, Black Muslim religion in the Nation of Islam, 1960–1975 (2006), p. 157.