یو ایس ایڈ

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
یہاں جائیں: رہنمائی، تلاش کریں

یو ایس ایڈ (USAID) امریکی حکومت کا ایک ادارہ ہے۔ اپنے نام سے یہ ایک امداد دینے والا ادارہ لگتا ہے لیکن یہ United States Agency for International Development کا مخفف ہے۔

United States Agency for International Development
USAID-Identity.svg
ایجنسی ایک نظر میں
قیام November 3, 1961
سابقہ ادارہ International Cooperation Administration
مرکزی دفتر Ronald Reagan Building
واشنگٹن ڈی سی
ملازمین 3,909 career U.S. employees (2012)
مجلس عاملہ Rajiv Shah، Administrator
Alfonso E. Lenhardt، Deputy Administrator
Mark Feierstein، Associate Administrator
ویب سائٹ
usaid.gov
حواشی
[1][2]
جنوری 2007۔ مغربی کنارہ۔یو ایس ایڈ کے اشتہار پر کسی نے لکھا ہے “ہمیں تمہاری مدد نہیں چاہیئے“

اس ادارے کا مشن "to partner to end extreme poverty and to promote resilient, democratic societies while advancing the security and prosperity of the United States." ہے یعنی انتہائی غربت کے خاتمے کی مدد کرنا اور لچکدار جمہوری معاشروں کو پروان چڑحانا تاکہ امریکا کی حفاظت اور خوشحالی بڑھ سکے۔ پہلے اس ادارے کا نام International Cooperation Administration تھا جس سے حاکمیت کی بو آتی تھی اس لیے 1961 میں اس کا نام بدل کر ایک شوگر کوٹڈ نام دیا گیا۔ یہ ادارہ اگرچہ امریکی حکومت کے لیے کام کرتا ہے لیکن تکنیکی اعتبار سے یہ ایک وفاقی خود مختار ادارہ ہے۔

اعتراضات[ترمیم]

  • یو ایس ایڈ پر اکثر تنقید کی جاتی ہے کہ اس کا اصل مقصد غربت کا خاتمہ نہیں بلکہ سیاسی دخل اندازی کے لیے سازگار ماحول بنانا ہے یا پھر کسی غیر ملکی صنعتکار کا مفاد بڑھانا ہے۔
  • امداد کے طور پر ملنے والی رقم سے اشیاء اور سازوسامان صرف مخصوص کمپنیوں سے ہی خریدا جاسکتا ہے۔
  • امداد حاصل کرنے والے کسی بھی ملک میں ہونے والی ترقی پائیدار ثابت نہیں ہوئی لیکن امریکی نفوذ پائیدار رہا۔
  • پہلے لفظ قرض استعمال کیا جاتا تھا جس پر سود ہوتا تھا۔ اب نہ قرض کا لفظ استعمال ہوتا ہے نہ سود کا مطالبہ۔ پھر بھی امداد لینے والے کسی بھی ملک کا قرض کم نہیں ہو سکا۔
  • یو ایس ایڈ پر اکثر یہ الزام لگایا جاتا ہے کہ وہ اپوزیشن کی مدد کر کے حکومت کو کمزور کرتی ہے اور الیکشن پر اثر انداز ہوتی ہے۔ برازیل کی مثال بہت واضح ہے۔
  • افغانستان پر نظر رکھنے والے غیر سرکاری گروہوں کے مطابق افغانستان کو دی جانے والی امداد کا 40 فیصد امداد فراہم کرنے والے ممالک ہی وصول کر گئے۔
  • William Blum نے الزام لگایا تھا کہ سی آئی اے اور دوسری ایجینسیوں کے ایجنٹ اپنی کاروائیاں یو ایس ایڈ کی آڑ میں کرتے ہیں۔
  • 1990 میں جب یمنی سفیر عبد اللہ صالح اشتال نے عراق میں مجوزہ مسلح امریکی جارحیت کے خلاف ووٹ دیا تو یونائیٹڈ نیشن میں امریکی سفیر Thomas Pickering اٹھ کر یمنی سفیر کے پاس آیا اورکہا کہ یہ تمہارا سب سے مہنگا انکار ہے۔ اس کے فوراً بعد یو ایس ایڈ نے یمن کی امداد بند کر دی۔[3][4]

مزید دیکھیے[ترمیم]

بیرونی ربط[ترمیم]

حوالے[ترمیم]

  1. "Agency for International Development"۔ اصل سے جمع شدہ 2009-04-13 کو۔ اخذ کردہ بتاریخ 2014-08-07۔ 
  2. "USAID History"۔ یو ایس ایڈ۔ اصل سے جمع شدہ 2012-05-15 کو۔ اخذ کردہ بتاریخ 2014-08-07۔ 
  3. Hornberger, Jacob" But Foreign Aid Is Bribery! And Blackmail, Extortion, and Theft Too!" September 26, 2003
  4. U.S. State Department, Country Fact Sheets - Background Note: Yemen. 12 March 2012