آر اے نکلسن

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
:چھلانگ بطرف رہنمائی، تلاش

آر اے نکلسن (18 اگست، 1868ء سے 27 اگست، 1945ء تک) ایک ممتاز انگریز مستشرق تھا۔ جو کہ اسلامی ادب اور اسلامی تصوف دونوں کا عالم تھا، اسے انگریزی زبان میں وسیع پیمانے پر عظیم ترین رومی سکالرز اور مترجمین میں سے شمار کیا جاتا ہے۔

زندگی[ترمیم]

ہینری ایلن نکلسن ایک ماہر حجریات (ماہرِقدیم حیاتیات) کا بیٹا، آر اے نکلسن، کیگلے، مغربی یارکشائر، انگلینڈ میں پیدا ہوا اور چیسٹر، چیشائر میں فوت ہوا۔اُس نے یبرڈین یونیورسٹی اور ٹرنٹی کالج، کیمبرج سے تعلیم حاصل کی اور 1902ء سے 1926ء تک فارسی کے لیکچرر کے طور پر خدمات سرانجام دیں۔ پھر کیمبرج میں 1926ء سے 1933ء تک ْعربی کے سر تھامس ایڈمز کے پروفیسر ‘ رہے۔ انہیں اسلامی ادب اور اسلامی تصوف میں ایک معروف عالم تصور کیا جاتا ہے۔ اُس نے اسلامی مطالعات پر ایک دیرپا اثر چھوڑا ہے۔ وہ تصوف پر لکھے ہوئے ضخیم ذخائر کو عربی، فارسی، اور عثمانی ترکی سے انگریزی زبان میں ترجمہ کرنے میں ماہر تھا۔ نکلسن نے دو بہت بااثر کتابیں تصنیف کیں:

  • (1907) Literary History of The Arabs
  • (The Mystics of Islam (1914

رومی پر کام[ترمیم]

نکلسن کا شاہکار، مثنوی مولانا روم پر ان کے کام تھا۔ یہ کتاب 1925ء سے 1940ء تک آٹھ جلدوں میں شائع ہوئی۔ انہوں نے مثنوی کے پہلے اہم فارسی ایڈیشن کو ڈھونڈا، انگریزی میں جتنا بھی کام رومی پر ہوا تھا، اس میں سے، سب سے پہلے مکمل ترجمہ اور تشریح نکلسن نے کی۔ لہٰذا اس کا کام دنیا بھر رومی تعلیمات کے میدان میں سب سے زیادہ مؤثر رہا۔

اقبالیات[ترمیم]

مرکزی صفحہ اقبالیات

پھر شاعرِ مشرق محمد اقبال کے ایک استاد ہونے کے ناطے، نکلسن نے اقبال کی پہلی فلسفیانہ فارسی شاعری کی کتاب اسرارِخودی کا انگریزی میں ترجمہ The Secrets of the Self کے عنوان سے کیا۔


دیگر اہم تراجم[ترمیم]


مزید دیکھئے[ترمیم]