النحل

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
یہاں جائیں: رہنمائی، تلاش کریں
النحل
دور نزول مکی
نام کے معنی شہد کی مکھی
زمانۂ نزول اخیرِ مکی زندگی
اعداد و شمار
عددِ سورت 16
عددِ پارہ 14
تعداد آیات 128
الفاظ 1,845
حروف 7,642
گذشتہ الحجر
آئندہ الاسرا

قرآن مجید کی 16 ویں سورت جو حضرت محمد صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم کی مکی زندگی میں نازل ہوئی۔ 16 رکوع اور 128 آیات ہیں۔

نام

آیت 68 کے فقرے "و اوحیٰ ربک الی النحل" سے ماخوذ ہے۔ النحل کےمعنی شھد کی مکھی ہے. یہ بھی محض علامت ہے نہ کہ موضوعِ بحث کا عنوان۔

زمانۂ نزول

مزید دیکھیں: النحل آیت 126 تا 128

متعدد اندرونی شہادتوں سے اس کے زمانۂ نزول پر روشنی پڑتی ہے۔ مثلاً، آیت 41 کے فقرے "والذین ھاجرو فی اللہ من بعد ما ظلموا" سے صاف معلوم ہوتا ہے کہ اس وقت ہجرتِ حبشہ واقع ہوچکی تھی۔آیت 106 "من کفر باللہ من بعد ایمانہ" سے معلوم ہوتا ہے کہ اس وقت ظلم و ستم پوری شدت کے ساتھ ہورہا تھا اور یہ سوال پیدا ہوگیا تھا کہ اگر کوئی شخص ناقابل برداشت اذیت سے مجبور ہوکر کلمۂ کفر کہہ بیٹھے تو اس کا کیا حکم ہے۔آیات 112 تا 114 کا صاف اشارہ اس طرف ہے کہ نبی صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم کی بعثت کے بعد مکہ میں جو زبردست قحط رونما ہوا تھا وہ اس سورت کے نزول کے وقت ختم ہوچکا تھا۔اس سورت میں آیت 115 ایسی ہے جس کا حوالہ سورۂ انعام آیت 119 میں دیا گیا ہے اور دوسری طرف آیت نمبر 118 ایسی ہے جس میں سورۂ انعام کی آیت 146 کا حوالہ دیا گیا ہے۔ یہ اس بات کی دلیل ہے کہ ان دونوں سورتوں کا نزول قریب العہد ہے۔ان شہادتوں سے پتہ چلتا ہے کہ اس سورت کا زمانۂ نزول بھی مکے کا آخری دور ہی ہے اور اسی کی تائید سورت کے عام اندازِ بیاں سے بھی ہوتی ہے۔

موضوع اور مرکزی مضمون

شرک کا ابطال، توحید کا اثبات، دعوتِ پیغمبر کو نہ ماننے کے برے نتائج پر تنبیہ و فہمائش اور حق کی مخالفت و مزاحمت پر زجر و توبیخ۔

مباحث

سورت کا آغاز بغیر کسی تمہید کے یک لخت ایک تنبیہی جملے سے ہوتا ہے۔ کفار مکہ بار بار کہتے تھے کہ "جب ہم تمہیں جھٹلا چکے ہیں اور کھلم کھلا تمہاری مخالفت کررہے ہیں تو آخر وہ خدا کا ‏عذاب آ کیوں نہیں جاتا جس کی تم ہمیں دھمکیاں دیتے ہوں"۔ اس بات کو وہ بالکل تکیۂ کلام کی طرف اس لیے دہراتے تھے کہ ان کے نزدیک یہ محمد صلی اللہ علیہ و آلہ وسلم کے پیغمبر نہ ہونے کا سب سے زیادہ صریح ثبوت تھا۔ اس پر فرمایا کہ بیوقوفو! خدا کا عذاب تو تمہارے سر پر تلا کھڑا ہے، اب اس کے ٹوٹ پڑنے کے لیے جلدی نہ مچاؤ بلکہ ذرا سی مہلت باقی ہے اس سے فائدہ اٹھا کر بات سمجھنے کی کوشش کرو۔ اس کے بعد فوراً تفہیم کی تقریر شروع ہوجاتی

پچھلی سورہ:
ابراہیم
سورہ 16 اگلی سورہ:
الاسرا
[[:File:Sura16

.pdf|عربی متن]]