امیر نصر اللہ خان

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
نصر اللہ خان
افغان سربراہان ریاست کی فہرست
Nasrullah Khan.png
افغان سربراہان ریاست کی فہرست
21 – 28 فروری 1919ء
پیشروامیر حبیب اللہ خان
جانشینامان اللہ خان
والدامیر عبدالرحمن خان
والدہعسل بیگم
پیدائش1874
سمرقند، روسی ترکستان
وفات1920ء (عمر 45–46)
کابل، افغانستان

امیر نصر اللہ خان (1874–1920ء)، جسے کبھی کبھی نصر اللہ خان کہا جاتا ہے،[1] افغانستان کا شہزادہ (ولی عہد) اور امیر عبدالرحمٰن خان کا دوسرا بیٹا تھا۔ وہ 21 سے 28 فروری 1919ء تک ایک ہفتے کے لیے افغانستان کے تخت پر فائز رہے۔

ذاتی زندگی[ترمیم]

نصراللہ 1874ء میں سمرقند میں پیدا ہوئے،[2] عبدالرحمن خان کے تین بیٹوں میں سے دوسرے تھے۔ ان کے بھائی حبیب اللہ خان تھے جو ان کے بڑے بھائی اور محمد عمر خان تھے۔[3] نصراللہ کی پیدائش اس دور میں ہوئی جب ان کے والد عبدالرحمن خان روسی ترکستان میں جلاوطنی کی زندگی گزار رہے تھے۔

22 جولائی 1880ء کو افغانستان پر برطانوی قبضے کے خاتمے کے بعد نصر اللہ کے والد کو امیر تسلیم کیا گیا، اس شرط پر کہ وہ افغانستان کی خارجہ پالیسی کو برطانیہ کے ساتھ ہم آہنگ کریں۔ اپنے والد کے تخت پر چڑھنے کے نتیجے میں، نصر اللہ (اور اس کے بڑے بھائی حبیب اللہ) افغانستان کے شہزادہ (ولی عہد) بن گئے۔

بیویاں[ترمیم]

ان کی شادی سردار محمد یوسف خان کی صاحبزادی بلقیس سے ہوئی، جس کا عرفی نام کوکو جان تھا۔ ان کی دوسری شادی سردار فقیر محمد خان کی بیٹی بلقیس بیگم سے ہوئی۔ ان کی تیسری شادی ہرات کے ایک جنرل فرامرز خان کی بیٹی سے ہوئی۔ ان کی چوتھی شادی جہان آرا بیگم کی بیٹی بابو گل سے ہوئی جو ازبکستان میں افغان وفد سردار محمد اسلم خان کی بیٹی تھیں۔ ان کی پانچویں شادی وزیر تجارت اور جلال آباد کے گورنر سردار نور احمد خان امین الوجاہت کی بیٹی حبیبہ عالیہ بیگم سے ہوئی۔ اس نے چھٹی بار بامیان سے تعلق رکھنے والی لیلیٰ بیگم سے شادی کی، ساتویں بار ہزارہ سے تعلق رکھنے والی شیریں سے اور آٹھویں بار گلشن نامی شگنانی سے شادی کی۔

اولاد[ترمیم]

اس کے گیارہ بیٹے اور پندرہ بیٹیاں تھیں۔

  • سردار عزیز اللہ خان ضیائی (بلقیس کوکو جان کا بیٹا)
  • سردار جمال الدین خان۔ (بیلقیس کوکو جان کا بیٹا)
  • سردار محمد اکرم خان۔ (جہان آرا مہردل کا بیٹا)
  • سردار محمد غفار خان ناصر ضیاء (جہاں آرا مہردل کا بیٹا)
  • سردار صفی اللہ خان (حبیبہ عالیہ بیگم کا بیٹا)
  • سردار عطاء اللہ خان ناصر ضیاء (حبیبہ عالیہ بیگم کا بیٹا)
  • سردار عظیم اللہ خان (حبیبہ عالیہ بیگم کا بیٹا)
  • سردار روح اللہ خان (لیلیٰ بیگم کا بیٹا)
  • سردار عبدالرؤف خان ناصر ضیاء (شیریں بیگم کا صاحبزادہ)
  • سردار غلام محمد خان۔ (گلشن بیگم کا بیٹا)
  • سردار عبدالسلام خان۔ (گلشن بیگم کا بیٹا)
  • زینب خانم (بلقیس کوکو جان کی بیٹی)
  • روح افزا خانم (بیلقیس کوکو جان کی بیٹی)
  • حاجرہ سردار بیگم (بیلقیس کوکو جان کی بیٹی)
  • حمیرہ خانم اول (جہان آرا مہردل کی بیٹی)
  • صدیق خانم (جہان آرا مہردل کی بیٹی)
  • محترمہ رقیہ (جہان آرا مہردل کی بیٹی)
  • حفصہ خانم (حبیبہ عالیہ بیگم کی بیٹی)
  • مسز عذرا (لیلیٰ بیگم کی بیٹی)
  • صالحہ بیگم (لیلیٰ بیگم کی بیٹی)
  • حمیرا خانم (شیریں بیگم کی بیٹی)
  • آمنہ بیگم (شیریں بیگم کی بیٹی)
  • حنیفہ خانم (گلشن بیگم کی بیٹی)
  • عالیہ بیگم (گلشن بیگم کی بیٹی)
  • عائشہ بیگم (مرجان بیگم کی بیٹی)
  • حمیدہ بیگم (شہنانی کی بیٹی)۔

حوالہ جات[ترمیم]

  1. "Afghanistan Ameer's Prince" (PDF). نیو یارک ٹائمز. New York. 24 May 1895. اخذ شدہ بتاریخ 19 فروری 2010. 
  2.  چشولم، ہیو، ویکی نویس (1911ء). "Abdur Rahman Khan". دائرۃ المعارف بریطانیکا (ایڈیشن 11ویں). کیمبرج یونیورسٹی پریس. 
  3. Hamilton، Angus (1910). Afghanistan. Oriental Series. 18. Boston: J. B. Millet Company. ISBN 9781113611291.