جہانگیر خان (کرکٹ کھلاڑی)

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
جہانگیر خان (کرکٹ کھلاڑی)
ذاتی معلومات
پیدائش1 فروری 1910(1910-02-01)
بستی غزن, جالندھر, پنجاب (بھارت), برطانوی ہند کے صوبے اور علاقے (اب بھارت)
وفات23 جولائی 1988(1988-70-23) (عمر  78 سال)
لاہور, پنجاب، پاکستان, پاکستان
بلے بازیدائیں ہاتھ کا بلے باز
گیند بازیدائیں ہاتھ کا تیز گیند باز
تعلقاتماجد خان (بیٹا)
اسد جہانگیر (بیٹا)
بزید خان (پوتا)
بین الاقوامی کرکٹ
قومی ٹیم
پہلا ٹیسٹ25 جون 1932  بمقابلہ  انگلستان
آخری ٹیسٹ15 اگست 1936  بمقابلہ  انگلستان
کیریئر اعداد و شمار
مقابلہ ٹیسٹ کرکٹ فرسٹ کلاس کرکٹ
میچ 4 111
رنز بنائے 39 3,327
بیٹنگ اوسط 5.57 22.32
100s/50s 0/0 4/7
ٹاپ اسکور 13 133
گیندیں کرائیں 606 8,314
وکٹ 4 328
بولنگ اوسط 63.75 25.34
اننگز میں 5 وکٹ 12
میچ میں 10 وکٹ 2
بہترین بولنگ 4/60 8/33
کیچ/سٹمپ 4 82
ماخذ: CricketArchive، 10 March 2013

جہانگیر خان जहांगीर खान(پیدائش:01 فروری 1910ء،بستی غزن ،جالندھر(اب جالندھر)، پنجاب|وفات: 23جولائی 1988ءلاہور، پنجاب، پاکستان،) ایک مسلمان بھارتی کرکٹر تھے جنہوں نے بھارت کی طرف سے 4 ٹیسٹ میچ کھیلے ڈاکٹر محمد جہانگیر خان نے برطانوی دور حکومت میں ہندوستان کے لیے کرکٹ کھیلی اور آزادی کے بعد پاکستان میں کرکٹ ایڈمنسٹریٹر کے طور پر خدمات انجام دیں۔ انہوں نے اسلامیہ کالج لاہور سے گریجویشن کیا تھا۔

کرکٹ کیریئر[ترمیم]

جہانگیر خان کا تعلق پشتون خاندان سے تھا، اور 6 فٹ قد کا حامل باولر درمیانی رفتار سے بولنگ کرتا تھا۔ وہ کرکٹ کے ایک مشہور خاندان سے تعلق رکھتے تھے جس نے پاکستان کے کپتان عمران خان، جاوید برکی اور ماجد خان پیدا کیے، ماجد خان ان کے حقیقی بیٹے تھے۔ ماجد خان کے بیٹے بازید خان نے بھی 2005ء میں پہلی بار پاکستان کی نمائندگی کی، جس سے یہ خاندان کیوی فیملی کے نعد دوسرا خاندان بن گیا جس کہ ٹیسٹ کرکٹرز کی مسلسل تین نسلیں پروان چڑھی ہیں۔ سابق بھارتی ٹیسٹ کرکٹربقا جیلانی ڈاکٹر محمد جہانگیر خان کے بہنوئی ہیں جنہوں نے ٹیسٹ کرکٹ میں ہندوستان کی طرف سے ٹیسٹ میچوں میں اپنے جوہر دکھائے۔

فرسٹ کلاس کرئیر[ترمیم]

جہانگیر خان نے اپنے فرسٹ کلاس ڈیبیو پر 108 رنز بنائے اور میچ کی دوسری اننگز میں سات وکٹیں حاصل کیں۔ انہوں نے 1932ء میں لارڈز میں انگلینڈ کے خلاف اپنے پہلے ٹیسٹ میں بھارت کی نمائندگی کی۔ دورے کے بعد، وہ انگلینڈ میں ہی رہیں اور کیمبرج یونیورسٹی سے ڈاکٹریٹ کی۔ اس نے مڈل ٹیمپل سے فائنل بار پاس کیا۔ اس وقت وہ چار سال تک کرکٹ میں کیمبرج بلیو تھے۔ اس نے جنٹلمین بمقابلہ پلیئرز میچوں میں بھی دو بار شرکت کی۔ 1935 میں انڈین جم خانہ کے لیے کھیلتے ہوئے انہوں نے دو ماہ میں 70 کی اوسط سے 1380 رنز بھی بنائے۔ جب ہندوستان نے 1936ء میں انگلینڈ کا دورہ کیا تو وہ ٹیم میں شامل ہوئے اور تینوں ٹیسٹ میں نظر آئے۔ کیمبرج میں اپنے وقت کے دوران ان کی بہترین باؤلنگ چیمپئن کاؤنٹی یارکشائر کے خلاف 58 رنز کے عوض 7 رنز تھی۔ ہندوستان واپس آکر، وہ 1939ء میں بمبئی پینٹنگولر میں کھیلے۔

ایک تاریخی واقعہ[ترمیم]

3 جولائی 1936ء کو، جہانگیر خان لارڈز میں کیمبرج کی طرف کھیلتے ہوئے ایم سی سی کے خلاف ٹام پیئرس کو گیند کر رہے تھے، جس نے ابھی ایک،دو دفاعی سٹروکس کھیلے تھے اس کے بعد ایک مردہ چڑیا سٹمپ کے پاس ملی، جس کے بارے میں خیال کیا جاتا ہے کہ وہ پرواز کے دوران گیند سے ٹکرائی تھی اور فوراً ہی ہلاک ہو گئی تھی۔ بدقسمت پرندے کو بھر کر اسی گیند پر چڑھایا گیا جس نے اسے مار ڈالا تھا اور بعد میں لارڈز کی میموریل گیلری میں دکھایا گیا۔ اس کے بعد سے یہ گراؤنڈ میں دکھائے جانے والے سب سے زیادہ متجسس اور سب سے زیادہ پسند کیے جانے والے نوادرات میں سے ایک بن گیا ہے۔ 2020ء کے اوائل میں نیچرل ہسٹری میوزیم کے ذراِئع نے پہلی بار انکشاف کیا کہ چڑیا ایک نوجوان بالغ نر تھا۔ اس کا علاج پیٹ میں جلد کے کئی حصوں کے ساتھ ساتھ ایک ڈھیلا پنکھ، ہلکے نقصان اور ماحول کی دھول اور گندگی کی وجہ سے کیا گیا جو شہری عجائب گھروں میں عام ہے۔ جنوبی کینسنگٹن کا سفر صرف دوسری بار تھا جب چڑیا لارڈز سے نکلی تھی۔ 2006ء میں اس نے روٹرڈیم کے نیچرل ہسٹری میوزیم میں گرینڈ ہاؤس اسپیرو نمائش کا حصہ بنانے کے لیے شمالی سمندر کے پار ایک سفر کیا۔ اس کا حالیہ سفر اس بات کی ضمانت دیتا ہے کہ یہ آنے والے کئی سالوں تک MCC میوزیم کے زائرین کو خوش کرنے کے لیے موزوں رہے گا۔

بطور سلیکٹر[ترمیم]

جہانگیر 1939-40ء اور 1941-42ء کے درمیان سلیکٹر تھے۔ 1947ء کے بعد پاکستان منتقل ہونے کے بعد، انہوں نے پاکستان میں سلیکٹر کی خدمات انجام دیں اور 1960-1961ء میں ہندوستان کا دورہ کرنے والی ٹیم کا انتخاب کیا۔ وہ کالج کے پرنسپل تھے اور پھر ریٹائر ہونے سے پہلے پاکستان میں ڈائریکٹر تعلیم کے طور پر خدمات انجام دیں۔ جب جالندھر نے 1983ء میں اپنے پہلے ٹیسٹ میچ کی میزبانی کی تو جہانگیر کو میچ میں شرکت کے لیے خصوصی طور پر مدعو کیا گیا۔ اپنے ابتدائی دنوں میں، وہ ہندوستان کے چیمپیئن جیولن پھینکنے والے بھی تھے۔ انہوں نے 1932ء میں AAA اور لندن میں برٹش ایمپائر گیمز 1934ء میں ہندوستان کی نمائندگی کی۔

اعداد و شمار[ترمیم]

جہانگیر خان نے 4 ٹیسٹ میچوں کی 7 اننگز میں صرف 39 رنز بنائے۔ 5.57 کی اوسط سے بننے والے ان رنزوں میں 13 ان کا سب سے زیادہ کسی ایک اننگ کا سکور تھا۔ اس طرح 111 فرسٹ کلاس میچز کی 175 اننگز میں 26 مرتبہ ناقابل شکست رہ کر انہوں نے 3327 رنز بنائے۔ 22.32 کی اوسط سے بننے والے ان رنزوں میں 133 ان کی کسی بھی ایک اننگ کا سب سے زیادہ سکور تھا۔ 4 سنچریاں اور 7 نصف سنچریاں بھی انہوں نے سکور کیں۔ بولنگ بھی ڈاکٹر جہانگیر خان نے 255 رنز دے کر 4 وکٹ حاصل کئے۔ 63.75 کی قدرے مہنگی اوسط کے ساتھ 86/4 ان کا کسی ایک اننگ کا بہترین بولنگ فگر تھا۔ اس طرح فرسٹ کلاس کرکٹ میں انہوں نے 8314 رنز دے کر 328 وکٹ اپنے نام کئے۔ 8/33 ان کی کسی ایک اننگ میں بہترین بولنگ کا ریکارڈ تھا جس کیلئے انہیں 25.34 کی اوسط حاصل ہوئی۔

وفات[ترمیم]

23 جولائی 1988ء کو وہ 78 سال اور 173 دن کی عمر میں وفات پا گئے تھے اپنی موت کے وقت، وہ اپنے پہلے ٹیسٹ میں ہندوستان کے لیے کھیلنے والی ٹیم کے آخری زندہ بچ جانے والے کھلاڑی تھے۔ انہیں ان کے آبائی علاقے میں سپرد خاک کیا گیا۔

مزید دیکھیے[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]