سدرپشچم پردیش

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
سدرپشچم پردیش
सुदूर-पश्चिम प्रदेश
سدرپشچم پردیش
صوبہ
Mt Saipal.png
Api Nampa.JPG
Ghoda Ghodi Lake.JPG
Badi Malika.png
Pacific Khaptad lake.jpg
Swamp deer at Shuklaphanta.png
سدرپشچم پردیش
مہر
سدرپشچم پردیش کا محل وقوع
سدرپشچم پردیش کا محل وقوع

سدرپشچم پردیش کے ڈویژن
متناسقات: 28°42′12″N 80°34′01″E / 28.70333°N 80.56694°E / 28.70333; 80.56694متناسقات: 28°42′12″N 80°34′01″E / 28.70333°N 80.56694°E / 28.70333; 80.56694
ملکFlag of Nepal.svg نیپال
قیام20 ستمبر 2015ء
دار الحکومتگوداوری
Largest cityدھنگاڑہی
ضلع9
حکومت
 • مجلسحکومت سدرپشچم پردیش
 • گورنر[شرمیلا کماری پنٹہ]]
 • وزیر اعلیٰتریلوچن بھٹہ (نیپال کیمونسٹ پارٹی
 • عدالت عالیہدیپال ہائي کورٹ
 • صوبائی امسبلییک ایوانیت (53 نشستیں)
 • پارلیمانی حلقے16
رقبہ
 • کل19,515.52 کلومیٹر2 (7,534.98 میل مربع)
رقبہ درجہ6واں
آبادی (2011)
 • کل2,552,517
 • درجہ5واں
 • کثافت130/کلومیٹر2 (340/میل مربع)
 • کثافت درجہ5ویں
نام آبادیسدرپشچمی نیپالی
منطقۂ وقتنیپال معیاری وقت (UTC+5:45)
جیوکوڈNP-SE
سرکاری زباننیپالی زبان
دیگر زبانیں1. ڈوٹیلی زبان
2. Tharu
انسانی ترقیاتی اشاریہ0.478 (low)
خواندگی63.48%
انسانی جنسی تناسب91.25 مذکر /100 مؤنث (2011)
ویب سائٹp7.gov.np

سدرپشچم پردیش (نیپالی: सुदूरपश्चिम प्रदेश) (بعید مغربی صوبہ) نیپال کے سات صوبوں میں سے ایک ہے، جسے نئے آئین نیپال کے تحت نیپال کا صوبہ 20 ستمبر 2015ء کو قرار دیا گیا۔[1] اس کی سرحدیں شمال میں چین کے تبت خودمختار خطے سے ملحق ہے، کرنالی پردیش اور لمبینی پردیش مشرق میں، اور بھارتی ریاستیں اتراکھنڈ مغرب اور جنوب میں اتر پردیش ہے۔ یہ صوبہ 19،515.52 کلومیٹر 2 کے رقبے پر محیط ہے - جو ملک کے کل رقبے کا تقریباً 13.22٪ ہے، یہ ابتدائی طور پر صوبہ نمبر 7 کے نام سے جانا جاتا ہے، نومنتخب صوبائی اسمبلی نے ستمبر 2018ء میں سدرپشچم پردیش کو اس صوبے کے مستقل نام کے طور پر اپنایا۔28 ستمبر 2018ء کی اسمبلی رائے شماری کے مطابق، گوداوری شہر کو صوبے کا دارالحکومت قرار دیا گیا ہے۔[2][3] یہ وبہ پہلے بعید مغربی ترقیاتی علاقے کا حصہ تھا۔ آبادی اور معیشت کے لحاظ سے تین بڑے شہر دھنگدھی، بھیمڈٹہ (مہندر نگر) اور ٹیکا پور ہیں۔[4]

حکومت اور انتظامیہ[ترمیم]

گورنر صوبے کے سربراہ کی حیثیت سے کام کرتا ہے جب کہ وزیر اعلیٰ صوبائی حکومت کا سربراہ ہوتا ہے۔ دیپال ہائی کورٹ کے چیف جج عدلیہ کے سربراہ ہیں۔[5] موجودہ گورنر، وزیراعلیٰ اور چیف جج موہن راج ملہ (گورنر)، تریلوچن بھٹہ (وزیر اعلیٰ) اور یگیا پرساد بسال ہیں۔[6][7] صوبے میں صوبائی اسمبنی کے 53 حلقے اور 16 ایوان نماہندگان کے حلقے ہیں۔[8]

نیپال کے دوسرے صوبوں کی طرح، سودورپشچم پردیش میں ایک متفقہ مقننہ ہے۔ صوبائی اسمبلی کی میعاد پانچ سال ہے۔ صوبہ اسمبلی سدرپشچم پردیش کو عارضی طور پر دھنگاڑہی کے ضلعی رابطہ کمیٹی ہال میں قائم کیا گیا ہے۔[9]

District map of Sudurpashchim Pradesh

انتظامی ڈویژن[ترمیم]

صوبہ نو اضلاع میں تقسیم ہے، جو ذیل میں درج ہیں ایک ضلع کا انتظام ضلعی رابطہ کمیٹی کے سربراہ اور ضلعی انتظامیہ کے افسر کے ذریعہ کیا جاتا ہے۔بلدیات میں ایک سب میٹروپولیٹن شہر اور 33 بلدیات شامل ہیں۔ صوبے میں 54 دیہی میونسپلٹی ہیں۔[10]

  1. اچھام ضلع
  2. بایتادی ضلع
  3. باجھانگ ضلع
  4. باجورا ضلع
  5. دادیلہورا ضلع
  6. دارچولا ضلع
  7. دوتی ضلع
  8. کائلالی ضلع
  9. کنچنپور ضلع

آبادیات[ترمیم]



Circle frame.svg

سدرپشچم پردیش میں مذہب

  ہندو مت (97.23%)
  مسیحیت (1.09%)
  بدھ مت (1.07%)
  اسلام (0.23%)
  Prakṛti (0.22%)
  دیگر یا لامذہب religious (0.16%)

اس صوبے کی مجموعی آبادی 2،552،517 ہے جو نیپال کی مجموعی آبادی کا 9.63٪ ہے۔ آبادی کی کثافت فی مربع کلو میٹر میں 130 افراد ہے۔ صوبے میں آبادی میں اضافے کی شرح 1.53٪ ہے۔ جنسی تناسب کے حساب سے ہر 1000 خواتین کے مقابلے میں 912 مرد ہیں، جب کہ 2011ء میں مجموعی طور پر 1،217،887 مرد اور 1،334،630 خواتین تھیں۔اس علاقے کی شہری آبادی 1،504،279 (58.9٪) اور دیہی آبادی 1،048،238 (41.1٪) ہے۔[11]

مزید دیکھیے[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. "Nepal Provinces". statoids.com. اخذ شدہ بتاریخ 21 مارچ 2016. 
  2. "Prov 7 named Sudurpaschim amid objection from NC, RJP". The Himalayan Times. 28 ستمبر 2018. اخذ شدہ بتاریخ 1 اکتوبر 2018. 
  3. "Province 7 named Sudurpashchim, Godawari capital". The Kathmandu Post. 28 ستمبر 2018. اخذ شدہ بتاریخ 1 اکتوبر 2018. 
  4. "Nepal Provinces". www.statoids.com. 
  5. "High Courts get their chief judges" (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 27 اپریل 2018. 
  6. "Trilochan Bhatta becomes Province 7 chief minister". The Himalayan Times (بزبان انگریزی). 16 فروری 2018. اخذ شدہ بتاریخ 28 اپریل 2018. 
  7. "President of Nepal administers oath to Chiefs of seven provinces | DD News". ddnews.gov.in (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 27 اپریل 2018. 
  8. "CDC creates 495 constituencies". The Himalayan Times (بزبان انگریزی). 31 اگست 2017. اخذ شدہ بتاریخ 27 اپریل 2018. 
  9. "Preparations under way for assembly meeting". The Himalayan Times (بزبان انگریزی). 31 جنوری 2018. اخذ شدہ بتاریخ 28 اپریل 2018. 
  10. "स्थानिय तह". 103.69.124.141. اخذ شدہ بتاریخ 27 اپریل 2018. 
  11. "Nepal Census 2011" (PDF). UN Stats.