عراقی خانہ جنگی میں شامل مسلح گروہوں کی فہرست

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search

یہ مضمون عراقی خانہ جنگی میں شامل مسلح گروہوں کی ایک فہرست ہے ۔ خانہ جنگی کا آغاز 2014– میں ہوا تھا ، 2011–2013 کی شورش کے بعد اور اس وقت بھی زیر کنٹرول ہے ۔ جنگ کے دوران دولت اسلامیہ عراق اور لیونٹ (داعش) کی ایک بڑی شمولیت تھی ، یہاں تک کہ دسمبر 2017 میں اسے عراق میں فوجی طور پر شکست دی گئی تھی۔ بعثت کے حامیوں اور کچھ سنی گروہوں نے حکومت عراق اور اس کے اتحادیوں کے خلاف لڑائی لڑی ہے۔ پیشمرگہ نے خانہ جنگی کے دوران داعش اور دیگر قوتوں کے خلاف لڑائی کی۔ اگرچہ وہ حکومت کے خلاف نہیں ، وہ عراقی افواج میں شامل نہیں ہوئے ۔ عراقی کردستان کے مستقبل ، داخلی و خارجی تنازعات اور ملک اور خطے کی سلامتی سے متعلق جاری مذاکرات جاری ہیں ۔

عراقی خانہ جنگی (2014–2017)[ترمیم]

Flag of عراق عراق and allies
Russia–Syria–Iran–Iraq coalition
Flag of عراقی کردستان عراقی کردستان and allies Iraqi Opposition
Sunni Iraqi insurgents and allies
Flag of عراق اور الشام میں اسلامی ریاست داعش and allies
Flag of عراق Iraqi government forces

Allied armed groups:

آشوری قوم

Popular Mobilization Forces

Tribal Mobilization (ar)

CJTF–OIR

ایران (2014–17)

پاکستان (2015–17)[26]

سوریہ (2013–14)

Supported by:

Flag of Kurdistan.svg عراقی کردستان

CJTF–OIR

Allied armed groups:

Further support:

Ba'ath Party Loyalists

Sunni jihadist insurgents:

Flag of عراق اور الشام میں اسلامی ریاست داعش

White Flags (since 2017)

Military situation in the Iraqi Civil War as of اسکرپٹ نقص: «Iraq Syria map date» کے نام سے کوئی ماڈیول نہیں ہے۔.
  Controlled by the Iraqi Government and/or Shi'ite militias
  Controlled by the داعش and allies
  Controlled by the Kurdistan Regional Government and allies

نوٹ[ترمیم]

  • بعثت کے وفادار اور اتحادی سنی ملیشیا زیادہ تر عراقی فوج پر حملہ کرتے ہیں ، حالانکہ اس سے پچھلی جنگ سے شروع ہونے والی آئی ایس کے ساتھ لڑنے کی تاریخ رہی ہے۔
  • عراقی حکومت اور کرد فوج کے مابین اکتوبر 2017 میں لڑائی شروع ہو گئی تھی۔ [64] اس سے قبل ، دونوں نے آئی ایس کے خلاف مل کر کام کیا تھا ، تاہم ، پی ایم ایف میں کرد فورسز اور ترکمن گروہوں کے مابین لڑائی 2015 سے وقفے وقفے سے جاری تھی۔ [65]
  • اتحادی فوجیں آئی ایس کے خلاف عراقی حکومت اور کرد فورس دونوں کی حمایت کرتی ہیں ، لیکن ایک دوسرے کے ساتھ اپنے تنازع میں شامل نہیں ہیں اور پرامن حل کے لیے زور دیا ہے۔ [66]
  • ترکی نے 2017 تک آئی ایس کے خلاف کرد فورسز کی حمایت کی تھی ، لیکن اس کے بعد سے ہی انہوں نے کردوں کے خلاف لڑائی میں عراقی فورسز کی حمایت کی ہے۔ [67]
  • مبینہ طور پر ایم سی آئی آر نے کرد علاقائی حکومت کے ساتھ کرد سرزمین کو نشانہ نہ بنانے کے لیے ایک معاہدہ معاہدہ کیا ہے ، اس کے بدلے میں عراقی حکومت کی عدم مداخلت کے نتیجے میں موجودہ عراقی حکومت کے کنٹرول سے باہر ایک خود مختار علاقہ تشکیل دینا۔ [68]

یہ بھی دیکھیں[ترمیم]

  • شام کی خانہ جنگی میں مسلح گروہوں کی فہرست
  • لیبیا خانہ جنگی میں مسلح گروہوں کی فہرست
  • یمنی خانہ جنگی میں مسلح گروہوں کی فہرست
  • لبنان میں شام کی خانہ جنگی کے اسپلور میں مسلح گروہوں کی فہرست
  • عراق جنگ کے جنگجو

حوالہ جات[ترمیم]

  1. ^ ا ب پ ت ٹ "Anti-IS troops are gaining ground on multiple fronts in Iraq". web.archive.org. October 10, 2017. 
  2. "Archived copy". 29 جون 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 12 جولا‎ئی 2018. 
  3. "Archived copy". 12 جولا‎ئی 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 12 جولا‎ئی 2018. 
  4. phillsmyth (18 June 2014). "Hizballah Cavalcade: From Najaf to Damascus and Onto Baghdad: Iraq's Liwa Abu Fadl al-Abbas". Jihadology.net. 02 اپریل 2016 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 29 ستمبر 2016. 
  5. "Sunni opposition to the Islamic State". Rubin Center. 28 September 2014. 01 مارچ 2016 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 30 مئی 2016.  Retrieved 30 May 2016.
  6. Fadel، Leith (4 March 2015). "5,000 Sunni Militiamen Fighting Alongside the Iraqi Security Forces in Tikrit". Almasdarnews.org. 22 مئی 2016 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 29 ستمبر 2016. 
  7. "Lebanon's Hezbollah acknowledges battling the Islamic State in Iraq". Washington Post. 17 فروری 2015 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 29 ستمبر 2016. 
  8. "Archived copy". 29 جون 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 29 جون 2018. 
  9. "Archived copy". 29 جون 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 29 جون 2018. 
  10. "Archived copy". 29 جون 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 29 جون 2018. 
  11. "The American Mesopotamian Organization Announces a Call to Arms against ISIS". Prweb.com. 18 اکتوبر 2017 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 12 دسمبر 2017. 
  12. ^ ا ب پ ت ٹ ث ج "Archived copy". 17 جولا‎ئی 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 17 جولا‎ئی 2018. 
  13. http://www.ahewar.org/s.asp?aid=435424&r=0[مردہ ربط]
  14. "Iraq's Shabak get their own militia". Pakistan Defence. 13 January 2015. 13 اگست 2016 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 02 جون 2016.  Retrieved 3 June 2016.
  15. "التركمان يشاركون في معركة تحرير تكريت بلواء من 4 آلاف مقاتل". Almada. 23 March 2015. 11 اکتوبر 2016 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 23 ستمبر 2016.  Retrieved 3 June 2016.
  16. "Iraqi Christians take up arms to regain lost land". Al-Monitor. 19 August 2015. 05 مئی 2016 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 03 جون 2016.  Retrieved 3 June 2016.
  17. "June 3, 2016". Daesh Daily. 4 June 2016. 20 اگست 2016 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 05 جون 2016.  Retrieved 5 June 2016.
  18. ^ ا ب پ "Kirkuk Frontline". LCarabinier. 18 February 2016. 18 اکتوبر 2017 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 24 جولا‎ئی 2016.  Retrieved 24 July 2016.
  19. "Archived copy". 11 جون 2019 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 18 اگست 2019. 
  20. ""كتائب الحمزة" تعلن اكمال استعداداتها للمشاركة بتحرير مناطق غرب الأنبار". قناه السومرية العراقية. 
  21. ^ ا ب "Archived copy". 17 نومبر 2017 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 19 جولا‎ئی 2018. 
  22. "Archived copy". 12 جولا‎ئی 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 12 جولا‎ئی 2018. 
  23. ^ ا ب پ "Beyond the Islamic State:Iraq's Sunni Insurgency" (PDF). Institute for the Study of War. October 2014. 29 اپریل 2016 میں اصل (PDF) سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 16 اپریل 2016. 
  24. "Archived copy". 26 جولا‎ئی 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 26 جولا‎ئی 2018. 
  25. "Archived copy". 01 جولا‎ئی 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 01 جولا‎ئی 2018. 
  26. Syed، Baqir Sajjad (15 July 2017). "Pakistan helped Iraq in defeating IS, says Iraqi envoy". Dawn. 10 دسمبر 2017 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 12 دسمبر 2017. 
  27. "Syrian Warplanes Strike in Western Iraq, Killing at Least 50 People". Wall Street Journal. 25 June 2014. 10 اکتوبر 2017 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 08 مارچ 2017. 
  28. "Al-Qaeda claims killing Syrian troops in Iraq". Al Jazeera. 11 March 2013. 12 مارچ 2013 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 17 اپریل 2016. 
  29. "Archived copy". 09 جولا‎ئی 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 09 جولا‎ئی 2018. 
  30. "Archived copy". 09 اگست 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 18 اگست 2019. 
  31. "Archived copy". 09 جولا‎ئی 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 09 جولا‎ئی 2018. 
  32. "Archived copy". 09 جولا‎ئی 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 09 جولا‎ئی 2018. 
  33. ^ ا ب "From survival to diaspora: the Yazidis in North Kurdistan". Nationalia. 22 December 2015. 30 جنوری 2016 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 16 اپریل 2016.  Retrieved 16 April 2016.
  34. Baxtiyar Goran (9 March 2017). "Haider Shesho: Ezidkhan Units take orders from President Barzani, Peshmerga Ministry". Kurdistan24. 13 مارچ 2017 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 14 مارچ 2017. 
  35. "Battle-tested Kakai battalion begs to retake villages". Rûdaw. 17 اگست 2016 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 03 جون 2016. 
  36. "Iraq's Kakai minority joins fight against Islamic State". Al-Monitor. 06 اگست 2016 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 03 جون 2016. 
  37. "Guerrilla forces, Popular Crowd engage in clashes in central Kirkuk". Hawar News Agency. 16 October 2017. 17 اکتوبر 2017 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 17 اکتوبر 2017. 
  38. "HPG statement on Kirkuk". ANF News. 16 October 2017. 17 اکتوبر 2017 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 17 اکتوبر 2017. 
  39. ^ ا ب "YNK: PKK and YPG are fighting in Şengal and Rabia against ISIS". 6 August 2014. 08 اگست 2014 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 06 اگست 2014. 
  40. "Kurdish PKK Forces Gather to Retake Mahmur Camp and Shingal". Kurdistan Tribune. 8 August 2014. 12 اگست 2014 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 09 اگست 2014. 
  41. "Asayîşa Êzdîxanê hat avakirin". Hawar News Agency. 6 July 2016. 09 اگست 2016 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 24 جولا‎ئی 2016.  Retrieved 24 July 2016. (in Northern Kurdish language)
  42. ""Sicherheitskräfte Êzîdxans": YBŞ bildet eigene Sicherheitskräfte aus". ÊzîdîPress. 10 July 2016. 15 اگست 2016 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 24 جولا‎ئی 2016.  Retrieved 24 July 2016. (in German language)
  43. "Operasyonên taybet ên li Şengalê êdî karê YTÊ ye". ANF. 13 July 2016. 17 اگست 2016 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 24 جولا‎ئی 2016.  Retrieved 24 July 2016. (in Northern Kurdish language)
  44. ""PDKI Peshmerga Forces Fought Bravely in the Liberation of Makhmour and Gwer"". PDKI.org. 11 August 2014. 25 اگست 2014 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 25 اکتوبر 2016. 
  45. [1] [مردہ ربط]
  46. "July 26, 2016". Daesh Daily. 27 July 2016. 15 ستمبر 2016 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 27 جولا‎ئی 2016.  Retrieved 27 July 2016.
  47. "Christians reclaim Iraq village from ISIS". Cbsnews.com. 04 دسمبر 2017 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 12 دسمبر 2017. 
  48. "Inside the Christian Militias Defending the Nineveh Plains". War Is Boring. 7 March 2015. 15 ستمبر 2016 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 03 جون 2016.  Retrieved 3 June 2016.
  49. "Iraq Christian Brigade To Battle ISIS: Anti-Islamic State 'Tiger Guards' Will Support Kurdish Fighters". International Business Times. 13 March 2015. 03 اگست 2016 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 03 جون 2016.  Retrieved 3 June 2016.
  50. "Iraq's first Christian brigade to battle ISIS". Al Arabiya. 13 March 2015. 22 مارچ 2016 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 03 جون 2016.  Retrieved 3 June 2016.
  51. "Albania sending weapons to Kurdish forces in Iraq". NOW News. 28 August 2014. 04 ستمبر 2014 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 28 اگست 2014. 
  52. "Czech Republic to supply more rifles, ammunition for Peshmerga". Rudaw. 25 January 2016. 01 اپریل 2016 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 16 اپریل 2016. 
  53. "Estonia donates small-arms ammo to Iraqi Kurds". 2 September 2014. 04 ستمبر 2014 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 03 ستمبر 2014. 
  54. "Finland increases military support to Kurdistan". Kurdistan24.net. 13 دسمبر 2017 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 12 دسمبر 2017. 
  55. "Germany mulls sending more weapons to Kurdish peshmerga". DW. 27 October 2015. 24 اپریل 2016 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 16 اپریل 2016. 
  56. "Iran Was First to Supply Iraq's Kurds With Weapons to Battle the Islamic State". News.vice.com. 12 دسمبر 2017 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 12 دسمبر 2017. 
  57. "Russia delivers million rounds of ammunition to Kurdistan Peshmerga". Kurdistan 24. 17 August 2016. 22 اگست 2016 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 22 اگست 2016. 
  58. Hassan، Hassan (17 June 2014). "More Than ISIS, Iraq's Sunni Insurgency". Carnegie Endowment for International Peace. 19 جون 2014 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 20 جون 2014. 
  59. "Military council of the rebels starts setting governors on their captured cities". Elaph. Osama Mahdi. 16 جون 2014 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 13 جون 2014. 
  60. Aymenn Jawad Al-Tamimi. "Jamaat Ansar al-Sunna". Aymenn Jawad Al-Tamimi. 25 اکتوبر 2014 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 07 نومبر 2014. 
  61. Al-Tamimi، Aymenn Jawad. "Formation of new jihadi group: Jabhat al-Murabiteen in Iraq". Aymennjawad.org. 10 جون 2016 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 29 ستمبر 2016. 
  62. "Iraq's Sunnis Form Tribal Army, As Sectarian Violence Builds". Npr.org. 27 April 2013. 01 دسمبر 2017 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 05 اپریل 2018. 
  63. Al-Tamimi، Aymenn Jawad. "Comprehensive Reference Guide to Sunni Militant Groups in Iraq". Aymennjawad.org. 11 اکتوبر 2016 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 29 ستمبر 2016. 
  64. "Iraqi forces launch 'major' Kirkuk operation". Al Jazeera. 16 October 2017. 16 اکتوبر 2017 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 17 اکتوبر 2017. 
  65. "Iraq: Ethnic Fighting Endangers Civilians". Human Rights Watch. 13 January 2016. 09 مئی 2016 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 24 اپریل 2016. 
  66. "Coalition statement on military movements near Kirkuk". Operation Inherent Resolve. 16 October 2017. 16 اکتوبر 2017 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 19 اکتوبر 2017. 
  67. "Turkey supports Iraq's moves to restore peace, order in Kirkuk, MFA says". Daily Sabah. 16 October 2017. 16 اکتوبر 2017 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 19 اکتوبر 2017. 
  68. Muir، Jim (June 13, 2014). "Could Iraq conflict boost Kurdish dreams of independence?". BBC News. 15 جون 2014 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 15 جون 2014. The Kurds ... are in touch with other elements, including tribal leaders and commanders of the Military Councils of Iraqi Revolutionaries (MCIR), which includes many experienced former Iraqi army officers. The Kurds have been given assurances from the latter that they will not encroach on the borders of the KRG autonomous region, according to an MCIR spokesman... The Kurdish leadership's message to the MCIR conversely was that اربیل would not be against the Sunnis taking the road of establishing their own autonomous area, following the lead of Kurdistan itself.