عطش درانی

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
رطش درانی
معلومات شخصیت
پیدائش 22 جنوری 1952  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں تاریخ پیدائش (P569) ویکی ڈیٹا پر
ساہیوال  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں مقام پیدائش (P19) ویکی ڈیٹا پر
تاریخ وفات 30 نومبر 2018 (66 سال)  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں تاریخ وفات (P570) ویکی ڈیٹا پر
شہریت Flag of Pakistan.svg پاکستان  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں شہریت (P27) ویکی ڈیٹا پر
عملی زندگی
دور 1991
موضوعات اردو، ایجوکیشن
تعليم ایم اے اردو، ایم اے ایجوکیشن، پی ایچ ڈی
مادر علمی جامعہ پنجاب  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں تعلیم از (P69) ویکی ڈیٹا پر
پیشہ اردو مصنف، محقق، استاد، ماہر تعلیم
اعزازات
تمغائے امتیاز، ستارۂ امتیاز
P literature.svg باب ادب

ڈاکٹر عطش درانی (22 جنوری 1952ء – 30 نومبر 2018ء) پاکستان کے ایک ماہر لسانیات، محقق، تنقید نگار، مصنف، ماہر تعلیم اور ماہر علم جوہریات تھے۔ انہوں نے 275 کتابیں لکھیں اور متعدد اطلاقیے بنائے۔ نیز اردو اور انگریزی میں 500 مقالے لکھے۔ عطش درانی کی ان علمی و تحقیقی خدمات پر انہیں تمغہ امتیاز اور ستارۂ امتیاز سے نوازا گیا۔[3][4]

احسان دانش سے شاعری میں اصلاح لیا کرتے پھر انہی کی کہنے پر شاعری چھوڑ کر نثر توجہ دی۔ 1976 میں سید قاسم محمود کی سربراہی میں مکتبہ شاہکار میں اسلامی انسائیکلوپیڈیا اور متعدد کتابوں پر کام کیا۔سیارہ ڈائجسٹ کی ادارت اڑھائی تین برس کی۔  مجلس زبان دفتری کے حوالے سے لاہور میں گورنمنٹ سروس اور اردو نامہ کی ادارت کی۔ حکومت پنجاب کے رسالے ”اردو نامہ“ کی ادارت سنبھالی اور ایک سرکاری جریدے کو علمی تحقیقی جریدے میں تبدیل کر دیا۔ حکومت پنجاب کی ملازمت سے پھر قومی مقتدرہ زبان میں چلے گئے اور وہاں طویل عرصہ گزار کر لسانیات کے حوالے سے خاطر خواہ کام کیا۔

قومی مقتدرہ زبان کے بعد علامہ اقبال اوپن یونیورسٹی میں شعبہ ’’پاکستانی زبانیں‘‘ کے سربراہ رہے،  نیشنل بک کاؤنسل  کی نوکری سال ڈیڑھ سال کے لیے کی[5]۔

اصطلاحات سازی[ترمیم]

خادم علی ہاشمی اور منور ابن صادق کے ساتھ مل کر علم التعلیم، سائنس اور فنیات کے اصطلاحات سازی پر اصطلاحات مرتب کیں جنہیں   مقتدرہ قومی زبان نے اصطلاحات فنیات اور تعلیمی اصطلاحات کے عنوانات کے تحت شائع کیا۔ [6]

گھوسٹ حرف تھیوری (Ghost Character Theory)[ترمیم]

اس تھیوری کے مطابق تمام عربی، فارسی اور پاکستانی زبانوں کے بنیادی 52 حروف میں بیس ہزار حروف تہجی تیار ہو سکتے ہیں۔ اس کا فائدہ یہ ہے کہ اب ایک ہی سافٹ وئیر اور کی بورڈ پر تمام زبانوں میں کام ہو سکتا ہے۔جسے 'خالی کشتیوں' کی تھیوری بھی کہتے ہیں۔ گھوسٹ کریکٹرز وہ حروف ہیں جو بے نقط ہوں اور انہیں تھوڑے سے ردوبدل کے ساتھ استعمال کیا جا سکے۔ ڈاکٹر عطش درّانی کے مطابق ان کریکٹرز کی تعداد 19ہے۔

ئ، ا، ب، ح ، د ، ر، س، ص، ط، ع ، ف، ق، ک، ل، م، ں، ہ، و ، ی ۔

یہ کریکٹرز عربی رسم الخط سے آئے جب ایران نے عربی رسم الخط اپنایا تو انھوں نے چند نئے حروف متعارف کروائے جن میں نقطے اور ایک لائن ہو۔ یہی رسم الخط ہندوستان آیا تو ان پر چار نقطوں کا اضافہ ہو گیا۔ وقت گزرنے کے ساتھ ساتھ ، عربی اور فارسی زبانوں میں تین بنیادی گھوسٹ کریکٹرز شامل ہو گئے۔ و، ہ ، گ ، ھ، ے ،تھے۔ وہ زبانیں جو عربی رسم الخط استعمال کرتی ہیں۔ ان میں گھوسٹ کریکٹرز کی تعداد 22ہے جو یہ ہیں۔

ا ب ح د ر س ص ط ع ف ک گ ل م ن ں و ہ ء ی ھ ے

مکمل 52 بنیادی کریکٹرز کم از کم 660 بنیادی حروف بناتے ہیں۔ 660 گھوسٹ بنیادی حروف 19800 رسمی حروف بناتے ہیں ۔ کل ملا کر 20600 حروف بنتے ہیں۔ ان کی پیش کردہ اس گھوسٹ تھیوری سے انٹرنیشنل Unicode پر مختلف الفاظ کا استعمال کیا جا رہا ہے۔ اس کے علاوہ اس کی مدد سے ڈاکٹر عطش درّانی نے کمپیوٹر پر مختلف زبانوں کے الفاظ کے استعمال کو بہتر بنایا ہے۔ تھوڑے سے ردوبدل کے ساتھ سندھی، پنجابی، سرائیکی، پشتو، براہوی، بلتی، شنا، کشمیری ، گوجری کو کمپیوٹر پر لکھا جا سکتا ہے۔

تصانیف[ترمیم]

عطش کی آخری تصنیف کتاب الجواہر جو البیرونی کی تصنیف کتاب الجماہر فی معرفة الجواہر کے اُس حصے کا ترجمہ ہے جو جواہرات سے متعلق ہے، نیشنل بک فاؤنڈیشن اسلام آباد نے جولائی2018 ءمیں شائع کی۔

  • اسلامی فکر و ثقافت ، مکتبہ عالیہ لاہور نے 1980 میں شائع کی۔
  • مغربی ممالک میں ترجمے کے قومی اور عالمی مراکز ، قومی مقتدرہ زبان نے 1986 میں شائع کی۔
  • "لسانی و ادبی تحقیق وتدوین کے اصول" ، 19 ابواب اور 419 صفحات پر مشتمل کتاب نیشنل بک فاؤنڈیشن نے شائع کی۔
  • کتابیات قانون ، قومی مقتدرہ زبان، 1984
  • پاکستانی اردو کے خد و خال ، قومی مقتدرہ زبان، 1997
  • لغات و اصطلاحات میں مقتدرہ کی خدمات ، قومی مقتدرہ زبان، 1993
  • اردو اصطلاحات نگاری (کتابیاتی جائزہ) ، قومی مقتدرہ زبان، 1993
  • اردو اصطلاحات نگاری (تحقیقی و تنقیدی جائزہ) ، قومی مقتدرہ زبان، 1993
  • اصناف ادب کی مختصر تاریخ ، 1982
  • اماں سین ، 2002
  • اماں سین اور دیگر شخصے ، پورب اکادمی ، اسلام آباد

خراج تحسین[ترمیم]

معروف ڈراما نویس، شاعر اور کالم نویس امجد اسلام اجمد نے ان الفاظ میں انہیں خراج تحسین پیش کیا:

"اردو کے ایک جدید اور بین الاقوامی معیارات کے درجے اور صلاحیت کی زبان بنانے کے سلسلے میں ان کا کام بے حد وقیع ہی نہیں مستقبل گیر اور سمت نما بھی ہے۔ وہ اپنے بھاری بھرکم جسمانی وجود کی طرح ایک غیر معمولی اور وسیع تر ذہن کے مالک تھے اور اردو رسم الخط کو کمپیوٹر کے بین الاقوامی تقاضوں کے مطابق بنانے کے سلسلے میں ان کی تحقیق اور علمی اجتہادات یقینا ایک بہت قیمتی تحفہ ہیں اور ان کی خدمات کو صحیح معنوں میں خراج عقیدت پیش کرنے کا سب سے بہتر طریقہ بھی غالباً یہی ہے کہ ان کی جلائی ہوئی شمعوں کو روشن رکھا جائے۔ [7]"


مزید دیکھیے[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. Renowned researcher and scholar Prof Dr Attash Durrani passed away on Friday morning.
  2. ^ ا ب https://www.shuyuan.sg/store/۔.۔/attash-durrani/۔.۔/978-613-9-91835.۔.5[مردہ ربط]، 6139918359, 9786139918355
  3. "President awards 'Tamgha-i-Imtiaz' to Attash Durrani"۔ International The News۔ مورخہ 25 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 16 مارچ 2014۔
  4. "pr100 conferment of civil awards-14 اگست 2015"۔ مورخہ 25 دسمبر 2018 کو اصل سے آرکائیو شدہ۔
  5. عطش درانی انٹرویو ،سجاول خان کے ساتھ
  6. خادم علی ہاشمی، گردوپیش ویب
  7. امجد اسلام امجد ، ایکسپریس کالم

بیرونی روابط[ترمیم]