فہمیدہ حسین

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
ڈاکٹر فہمیدہ حسین میمن
معلومات شخصیت
پیدائش 5 جولا‎ئی 1948 (73 سال)  ویکی ڈیٹا پر (P569) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
حیدرآباد  ویکی ڈیٹا پر (P19) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
رہائش کراچی  ویکی ڈیٹا پر (P551) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
عملی زندگی
مادر علمی جامعہ کراچی
جامعہ سندھ  ویکی ڈیٹا پر (P69) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
پیشہ لیکچرر  ویکی ڈیٹا پر (P106) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
پیشہ ورانہ زبان سندھی  ویکی ڈیٹا پر (P1412) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
نوکریاں جامعہ سندھ  ویکی ڈیٹا پر (P108) کی خاصیت میں تبدیلی کریں

ڈاکٹر فہمیدہ حسین (خاندانی نام فہمیدہ میمن) ( سندھی: ڊاڪٽر فهميده حسين ميمڻ) 5 جولائی 1948 کو ٹنڈو جام ضلع حیدرآباد سندھ پاکستان میں ایک ادبی گھرانے میں پیدا ہوئی تھیں۔[1] ان کے والد محمد یکون "نیاز" بھی ایک عالم تھے جنہوں نے حافظ شیرازی کی شاعری کا فارسی سے سندھی زبان میں ترجمہ کیا تھا۔ ان کا بھائی سراج الحق میمن بھی ایک معروف مصنف اور محقق تھا۔

ڈاکٹر فہمیدہ حسین پاکستان کی ایک معروف مصنفہ، عالم، ماہر لسانیات اور دانشور ہے۔[2] ان کے کام کرنے کے شعبے یہ رہے ہیں: ادب، لسانیات، عورت کا مطالعہ اور بشریات۔ عظیم کلاسیکی صوفیانہ شاعر شاہ عبدالطیف بھٹائی کے مطالعہ میں اس کی مہارت ہے۔ ڈاکٹر فہمیدہ مئی 2008 سے مارچ 2015 تک سندھی لینگویج اتھارٹی کی چیئرپرسن تھیں۔ اس سے قبل وہ جامعہ کراچی، شاہ عبدالطیف چیئر کے ڈائریکٹر کی حیثیت سے دس سال تک خدمات انجام دے چکی ہیں۔ اس سے قبل وہ اسی یونیورسٹی میں سندھی شعبہ کی پروفیسر اور چیئرپرسن کی حیثیت سے بھی خدمات انجام دے چکی ہیں۔ ڈاکٹر فہمیدہ حسین ایک قابل مصنفہ ہیں جن کے پاس اس کی ساکھ کے لیے 15 سے زائد کتابیں ہیں جن کے ساتھ ساتھ ادبی تنقید، لسانیات، سندھی زبان کے مختلف پہلوؤں کے خصوصی حوالہ، شاہ عبد اللطیف بھٹائیکی شاعری اور صنفی امور کے موضوعات پر کئی تحقیقی مضامین ہیں۔ اس نے چھوٹی عمر سے ہی مختصر کہانیاں اور شاعری لکھنا شروع کی تھی اور اسے مختصر کہانیوں کی ایک کتاب بھی اس کا سہرا ہے۔ وہ پچھلے 40 سالوں سے مختلف اخبارات اور رسائل میں کالم، مضامین اور نقاد لکھ رہی ہیں۔ اس کی شادی عبد الحسین سے ہوئی ہے اور ان کے 3 بچے ڈاکٹر سنیتا حسین، ارونا حسین اور ایک بیٹا شاہیر حسین ہیں۔

تعلیم[ترمیم]

ڈاکٹر فہمیدہ حسین نے ابتدائی تعلیم ماڈل اسکول حیدرآباد سندھ سے کی اور 1968 میں ڈی جے سائنس کالج کراچی سے گریجویشن مکمل کی۔ اس نے 1970 میں حیدرآباد میں سندھ یونیورسٹی کے شعبہ انگریزی سے انگریزی میں ماسٹر ڈگری حاصل کی اور اسی یونیورسٹی سے 1972 میں سندھی میں ایک اور ماسٹر ڈگری بھی حاصل کی۔

1990 میں انہوں نے جامعہ کراچی میں محکمہ جنرل ہسٹری سے ہندی زبان میں ڈپلومہ کورس مکمل کیا۔ مزید، انہوں نے 1992 میں، پی ایچ ڈی کرنے کے لیے سندھی ادب میں اپنے ڈاکٹروں کا مقالہ کامیابی کے ساتھ مکمل کیا۔

فہمیدہ حسین نے 1981 میں بیچلر آف لا کی ڈگری (ایل ایل بی) بھی حاصل کی تھی۔

کیریئر[ترمیم]

1972 میں ڈاکٹر فہمیدہ حسین کو یونیورسٹی آف سندھ کے انسٹی ٹیوٹ آف ایجوکیشن میں انگریزی کی لیکچرر مقرر کیا گیا، یہ عہدہ ان کے 1975 تک رہا۔ 1978 سے 1988 تک وہ جامعہ کراچی میں سندھی کی لیکچرر کے طور پر پڑھاتی تھیں۔ 1988 میں وہ اسسٹنٹ پروفیسر کے عہدے پر فائز ہوئی، جب وہ پروفیسر مقرر کی گئیں، وہ 1995 تک اس عہدے پر فائز رہیں اور بعد میں 1997 میں اس شعبہ کی چیئرپرسن بھی رہیں۔[3]

سال 1998 میں ڈاکٹر فہمیدہ حسین نے جامعہ کراچی میں ڈائریکٹر شاہ عبد اللطیف بھٹائی چیئر کا عہدہ حاصل کیا۔[4]https://www.uok.edu.pk/faculties/shahlatifchair/publications.php اور مئی 2008 میں، سندھی زبان اتھارٹی کی چیئرپرسن کے ممتاز اور معتبر عہدے پر ڈاکٹر فہمیدہ حسین کو مقرر کیا گیا تھا۔[5]

1968 سے لے کر آج تک ان تمام برسوں کے دوران، ڈاکٹر فہمیدہ حسین مختلف شعبوں پر بطور کالم نگار، ایڈیٹر، محقق، مترجم، مصنفہ اور ماہر لسانیات سندھی، اردو اور انگریزی میں لکھتی رہی ہیں۔ ڈاکٹر حسین ملک کے متعدد اہم تعلیمی اداروں کے بورڈ میں ممبر کی حیثیت سے خدمات انجام دے رہے ہیں۔

فی الحال وہ سندھی زبان اتھارٹی (ایس ایل اے)، سندھ کی چیئرپرسن کے عہدے سے ریٹائر ہوگئیں ہیں

شائع کتابیں[ترمیم]

وہ ادب، زبان انجینئری اور شاہ عبداللطیف بھٹائی کی شاعری پر کئی کتابیں لکھ چکی ہیں۔ اس کی ساکھ سے متعلق کتابوں کی فہرست یہ ہے:

  • (2012) سندھو لکھت۔21 ویں سدی-ایک مرد تھیال تقیق (سندھو لسانیات پر تحقیقی مضامین کا ترجمہ)، سندھی زبان اتھارٹی حیدرآباد
    (2012) ادیون *آون انجن، (شاہ لطیف کی شاعری پر مضامین) - محکمہ ثقافت ، حکومت۔ سندھ، کراچی
    (2012) سندھی بولی-لزانی پہلوآرکائیو شدہ [Date missing] بذریعہ sl.sindhila.org [Error: unknown archive URL] (سندھی زبان سے متعلق مضامین)، سندھی زبان اتھارٹی، حیدرآباد، سندھ
    (2011) *سندھی بولی- جی سکھیا ( دیواناگری )، سندھی زبان اتھارٹی، حیدرآباد، سندھ
    (2011)
  • آئیے سندھی سیکھنآرکائیو شدہ [Date missing] بذریعہ sl.sindhila.org [Error: unknown archive URL] (آئیے ہم سی ڈی کے ساتھ سندھی سیکھیں)۔ سندھی زبان اتھارٹی، حیدرآباد، سندھ
    (2008)
  • شاہ عبد اللطیف بھٹائی۔ (اردو میں زندگی، شاعری اور فلسفہ)، پاکستان اکیڈمی آف لیٹرز، اسلام آباد۔
    (2006) دنیا جون شیر اڑون (دنیا کی خواتین شعرا کی شاعری کا سندھی ترجمہ) - سندھی ادبی بورڈ، جامشورو۔
    (2003) ہک ہوا کین کہانیاں (مختصر کہانیوں کا مجموعہ)، سچل اکیڈمی، کراچی۔
    (2002) شاہ لطیف کی شاعری میں عورت کی تصویر، (انگریزی ترجمہ) شاہ عبد اللطیف بھٹائی چیئر، جامعہ کراچی، کراچی
    (2002) ادبی تنقید فین آئن طریخ (ادبی تنقید آرٹ اور تاریخ)، نئوں نیاپو اکیڈمی، کراچی۔
    (2000) برے صغیر جی بولین جو لسانیانتی جائزو (لسانیاتی سروے آف انڈیا کا سندھی ترجمہ، جلد VIII، حصہ 1، جارج گیریسن کا تحریر)، سندھی زبان اتھارٹی، حیدرآباد۔
    (1996) شاہ لطیف کی شائری میں عورت کا روپ (اردو ترجمہ) بھٹ شاہ ثقافتی کمیٹی، حیدرآباد۔
    (1993) شاهه لطیف جی شاعري ۾ عورت جو روپ (شاہ لطیف کی شاعری میں عورت کی تصویر)، بھٹ شاہ ثقافتی کمیٹی، حیدرآباد۔
    (1990) پیر ہسام الدین راشدی ۔ ایک سیرت، سندھ ثقافت اور سیاحت محکمہ، کراچی۔ (1983) ہوون جی آدر- سفر نامہ، اگم پبلشرز، حیدرآباد۔

ایوارڈ[ترمیم]

انہیں اپنے کام اور شراکت کے لیے متعدد ایوارڈز بھی مل چکے ہیں۔[6]

  • 2004: صدر کا پرائیڈ آف پرفارمنس
  • 2004: پاکستان اکیڈمی آف لیٹرز ایوارڈ
  • 2003: ریسرچ اینڈ پبلیکیشنز میں نمایاں کام کے لیے لطیف ایوارڈ
  • 2000: سندھ کے بہترین سندھی مصنف کا ساہیوگ فاؤنڈیشن ایوارڈ
  • 1995: ریسرچ اینڈ رائٹنگ میں سندھ گریجویٹ ایسوسی ایشن کا ایوارڈ
  • 1994: ہجرا ایوارڈ 1414 ، پاکستان اکیڈمی آف لیٹرز
  • 1994: شاہ لطیف کی شاعری اور خواتین علوم پر بہترین ریسرچ کا سندھی ادبی سنگت ایوارڈ

بھی دیکھو[ترمیم]

  • ڈان جائزہ: فہمیدہ حسین پر پروفائل (1999) [1]
  • شاہ لطیف چیئر پبلیکیشنز [2]
  • ڈان ، 5 جون ، 2008: ڈاکٹر فہمیدہ نے ایس ایل اے کا چیئر پرسن مقرر کیا [3]

حوالہ جات[ترمیم]

بیرونی روابط[ترمیم]