ماؤنٹین ریلوے ہندوستان

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
ہندوستان کی پہاڑی ریلوے
UNESCO World Heritage Site
مقامبھارت
اہلیتثقافتی: (ii), (iv)
حوالہ944ter
کندہ کاری1999 (23 دور)
توسیعات2005, 2008
رقبہ89 ha (0.34 مربع میل)
محفوظ زون645 ha (2.49 مربع میل)
ماؤنٹین ریلوے ہندوستان is located in بھارت
1
1
2
2
3
3
ہندوستان کی ماؤنٹین ریلوے:
1 = دارجیلنگ ہمالیائی ریلوے,
2 = نیلگیری ماؤنٹین ریلوے,
3 = کالکا – شملہ ریلوے

ماؤنٹین ریلوے آف انڈیا وہ ریلوے لائنیں ہیں جو ہندوستان کے پہاڑی علاقوں میں بنائی گئی تھیں۔ ان خطوں میں نارو گیج اور میٹر گیج ریلوے شامل ہیں لیکن اس میں کچھ براڈ گیج ریلوے بھی شامل ہیں۔ لائنوں میں سے تین، دارجلنگ ہمالیائی ریلوے ، نیلگیری ماؤنٹین ریلوے اور کالکا – شملہ ریلوے ، کو اجتماعی طور پر "ماؤنٹین ریلوے آف انڈیا" کے نام سے یونیسکو کے عالمی ثقافتی ورثہ کے طور پر نامزد کیا گیا ہے۔ دو اور، یعنی ماتھیران ہل ریلوے اور کانگڑا ویلی ریلوے ، یونیسکو کے عالمی ثقافتی ورثہ کی عارضی فہرست میں شامل ہیں۔ [1] [2] نیلگیری ماؤنٹین ریلوے ہندوستان میں واحد ریک اور پنین ریلوے بھی ہے۔ پہاڑی ریلوے، جیسے جموں-بارہمولہ لائن اور چھوٹا چار دھام ریلوے ، فی الحال زیر تعمیر ہیں اور دیگر منصوبہ بندی کے مرحلے میں ہیں، جیسے سری نگر-لیہہ لائن اور بھانوپلی-لیہہ لائن ۔ حالیہ دنوں میں تعمیر ہونے والی تمام پہاڑی ریلوے براڈ گیج کا استعمال کرتی ہیں۔

دارجیلنگ ہمالیائی ریلوے[ترمیم]

دارجلنگ ہمالیائی ریلوے ، عرفیت "ٹوائے ٹرین" ایک 610  ملی میٹر (2.00 فٹ) ہے تنگ گیج ریلوے جو 88 کلومیٹر (55 میل) کا سفر کر کے سلی گوڑی اور دارجلنگ کو جوڑتی ہے۔ یہ راستہ ہندوستانی ریلوے چلاتا ہے۔ اور اس کی بلندی 100 میٹر (330 فٹ) سے شروع ہوتی ہے۔ سلی گڑی میں اور تقریباً 2,200 میٹر (7,200 فٹ) دارجلنگ میں ہے۔ ۔ سب سے زیادہ بلندی گھوم اسٹیشن پر ہے، جس کی بلندی2,300 میٹر (7,500 فٹ) ہے۔ [3] [4]

نیلگیری ماؤنٹین ریلوے[ترمیم]

نیلگیری ماؤنٹین ریلوے 46 کلومیٹر (29 میل) میٹر گیج سنگل لائن ریلوے ہے۔ یہ میٹوپلائم کے قصبے کو اڈاگمنڈلم ( اوٹاکامنڈ ) کے پہاڑی اسٹیشن سے جوڑتا ہے۔ یہ راستہ ریاست تامل ناڈو کے اندر واقع ہے اور نیلگیری پہاڑیوں سے گزرتا ہے، جو جنوبی ہندوستان کے نیلے پہاڑوں کے نام سے مشہور ہیں۔ نیلگیری ہندوستان میں واحد ریک ریلوے ہے اور یہ ریک سسٹم استعمال کرتی ہے۔ اے بی ٹی سسٹم کے لیے خصوصی بھاپ انجنوں کے استعمال کی ضرورت ہوتی ہے۔ اس لائن میں 16 سرنگیں اور 250 پل ہیں، جس کی وجہ سے راستے میں چڑھائی کے سفر میں تقریباً 290 منٹ کا وقت لگتا ہے۔ [5] [6] [7]

کالکا – شملہ ریلوے[ترمیم]

کالکا – شملہ ریلوے کالکا اور شملہ کے درمیان چلتی ہے۔یہ ریلوے 95.66 کلومیٹر (59.44 میل) لمبی ہے۔ اور اس کا گیج تنگ ہے جو 2 فٹ 6 انچ (762 ملی میٹر) 2 فٹ 6 انچ (762 ملی میٹر) چوڑا ہے۔ شملہ ہماچل پردیش کا جدید دار الحکومت ہے۔ [8] [9] اور کی بلندی پر واقع ہے۔ یہ ہمالیہ کے دامن میں واقع ہے۔ یہ 1864 میں برطانوی ہندوستان کا موسم گرما کا دار الحکومت بنا اور اس نے ہندوستان میں برطانوی فوج کے ہیڈ کوارٹر کے طور پر بھی کام کیا۔ [8] [9] ریلوے کی تعمیر تک شملہ تک واحد رسائی گاؤں کے کارٹ وے سے تھی۔ ریلوے لائن دہلی – امبالا – کالکا ریلوے کمپنی نے تعمیر کی تھی، جو 1898 میں سیوالک پہاڑیوں میں شروع ہوئی تھی اور 1903 میں مکمل ہوئی تھی۔

عالمی ثقافتی ورثہ سائٹس - عارضی فہرست[ترمیم]

ماتھیران ہل ریلوے[ترمیم]

ماتھیران ہل ریلوے ایک 2 فٹ (610 ملی میٹر) ہے۔یہ 2 فٹ (610 ملی میٹر) تنگ گیج ریلوے اور 21 کلومیٹر (13 میل) کا فاصلہ طے کرتی ہے۔ یہ نیرال اور ماتھیران کے درمیان، مغربی گھاٹوں میں چلتی ہے۔

کانگڑا ویلی ریلوے[ترمیم]

کانگڑا ویلی ریلوے 2 فٹ 6 انچ (762 ملی میٹر) ہے۔یہ لائن2 فٹ 6 انچ (762 ملی میٹر) 2 فٹ 6 انچ (762 ملی میٹر) تنگ گیج ریلوے اور 163 کلومیٹر (101 میل) کا فاصلہ طے کرتی ہے۔ اس لائن کا سب سے اونچا مقام 1,291 میٹر (4,236 فٹ) کی بلندی پر احجو اسٹیشن پر ہے۔۔ [10]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. UNESCO World Heritage Centre۔ "Mountain Railways of India"۔ whc.unesco.org (بزبان انگریزی)۔ 03 مئی 2006 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 08 جون 2017 
  2. UNESCO World Heritage Centre۔ "Mountain Railways of India (Extension)"۔ whc.unesco.org (بزبان انگریزی)۔ اخذ شدہ بتاریخ 08 جون 2017 
  3. Paul Whittle، Terry Martin۔ "A Brief History of the DHR"۔ History and A Trip Up the Line۔ Darjeeling Himalayan Railway Society۔ 08 فروری 2007 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 24 فروری 2007 
  4. "History of Darjeeling Himalayan Railway"۔ 17 جولا‎ئی 2011 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 03 اپریل 2010 
  5. M.S. Kohli، Ashwani Lohani (2004)۔ "The Indian Mountain Railway"۔ Mountains of India: Tourism, Adventure, Pilgrimage۔ Indus Publishing۔ صفحہ: 97–106۔ ISBN 81-7387-135-3۔ 08 مئی 2021 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 20 فروری 2010 
  6. Govind. V.M Krishnan۔ NMR Nilgiri Mountain Railway:From Life Line to Oblivion۔ krishnantech.net۔ 07 نومبر 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 21 فروری 2010 
  7. "Cultural Sites inscribed on UNESCO's World heritage List"۔ India-Mountains railways of India۔ World Heritage List;UNESCO۔ 2005-06-15۔ 13 اگست 2006 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 26 دسمبر 2019 
  8. ^ ا ب M.S. Kohli، Ashwani Lohani (2004)۔ "The Indian Mountain Railway"۔ Mountains of India: Tourism, Adventure, Pilgrimage۔ Indus Publishing۔ صفحہ: 97–106۔ ISBN 81-7387-135-3۔ 08 مئی 2021 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 20 فروری 2010 
  9. ^ ا ب "HP declares Kalka–Shimla railway as 'heritage' property"۔ The Hindu۔ 2010-02-21۔ 27 ستمبر 2008 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 19 فروری 2010 
  10. "Trains to Ahju Station – 4 Arrivals NR/Northern Zone – Railway Enquiry"۔ indiarailinfo.com۔ 19 اپریل 2019 میں اصل سے آرکائیو شدہ۔ اخذ شدہ بتاریخ 22 فروری 2019