پکھالا

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
پاکḷا دہی ، لیموں کے ساتھ اور زیرہ میں کدو

پکھالا ( اڑیہ: ପଖାଳ ) ایک اوڈیا اصطلاح ہے جو ایسے ہندوستانیپکوان کے لیے استعمال ہوتی ہے جو دھلے ہوئے پکائے گئے چاول ہوتےہیں یا چاول کو پانی سے ہلکا بھگو لیا جاتا ہے۔ مائع حصہ تورانی کے طور پر جانا جاتا ہے۔ [1] یہ اڈیشا ، مغربی بنگال ، جھارکھنڈ ، آسام ، چھتیس گڑھ ، اور تمل ناڈو میں مشہور ہے ۔

تمل ناڈو میں اسے پازھیا سدم کہا جاتا ہے۔ اس ڈش کا بنگالی نام پنٹا بھٹ ہے ، چھتیس گڑھ میں اسے بور بھٹ کہا جاتا ہے ، [2] جھارکھنڈ میں لسانی جماعتیں پانی بھٹ ، پکھالا یا پاکھلا جیسے نام استعمال کرتی ہیں ، اور آسام میں اس کو پوئٹا بھٹ کہتے ہیں۔ [3]

روایتی اوڈیا ڈش ، چاول ، دہی ،کھیرا ، زیرہ ، تلے ہوئی پیاز اور پودینہ کے پتے کے ساتھ تیار کیا جاتا ہے۔ اسے خشک بھری ہوئی سبزیاں جیسے آلو ، بینگن ، بڑی اور ساگابھجا یا تلی ہوئی مچھلی کے ساتھ پیش کیا جاتا ہے۔

تاریخ[ترمیم]

یہ نامعلوم ہے کہ کب پکھالا کو مشرقی ہندوستان کی روزمرہ خوراک میں شامل کیا گیا تھا ، لیکن اسےبھگوان جگن ناتھ کے پوری مندر کی ترکیب میں شامل کیا گیا تھا۔ پخالا کو برصغیر پاک و ہند کے مشرقی حصے (بشمول نیپال اور میانمار کے کچھ حصوں) میں کھایا جاتا ہے۔

گرمی کو شکست دینے کے لیے، اس ڈش کو صاف پانی سے بھری ہوئی کٹوری میں پکایا جاتا ہے اور ٹھنڈا کیا جاتا ہے. اوڈیشا ، مغربی بنگال ، آسام ، اور چھتیس گڑھ کے کھانوں میں بھی یہ ڈش موجود ہے۔ اس کھانے کو فروغ دینے کے لئے ، 20 مارچ کو پکھالا دیباس یا دن کے طور پر منایا جاتا ہے۔

درجہ بندیاں[ترمیم]

  • جیراپکھالا یا زیرا پکھالا زیرے کو کڑی کے پتوں کے ساتھ پکھالا میں شامل کرکے بنایا جاتا ہے۔ [4] [5] [6]
  • دہی پکھالا کوپکھالا کے ساتھ دہی ڈال کر بنایا جاتا ہے۔
  • گرما پکھالا(گرم پکھالا) عام طور پر چاول بنانے کے بعد یا گرم چاول کے ساتھ فوری طور پر پانی ڈال کر بنایا جاتا ہے۔
  • باسی پکھالاچاولوں کو پیس کر پانی ڈال کر بنایا جاتا ہے جسے عام طور پر رات بھر رکھا جاتا ہے اور اگلے دن کھایا جاتا ہے۔

پاکھالا ڈیباسا (عالمی یوم پاکالا)[ترمیم]

20 مارچ کو پکھالا دباس(عالمی پکھالا دن) کے طور پر دنیا بھر میں اڈیاس کی طرف سے منایا جاتا ہے. [7] [8] [9] [10]

لوگ پکھالا کھاتے ہیں اور اس پکوان کو فروغ دیتے ہیں۔ [11] [12]

مزید دیکھیں[ترمیم]

  • ہندوستانی پکوان کی فہرست
  • کونجی
  • اوڈیشا کے پکوان

حوالہ جات[ترمیم]

 

  1. J. Tharu, Lalita، Susie, Ke (1993). Women Writing in India: The twentieth century. Vol II. Feminist Press. صفحہ 688. ISBN 9781558610293. 
  2. http://www.rkmp.co.in/general-domain/rice-in-human-nutrition/pakhal
  3. http://www.telegraphindia.com/1110804/jsp/northeast/story_14328967.jsp
  4. Jeera Pakhala
  5. Jeera Pakhala
  6. "Jeera Pakhala". 05 مارچ 2016 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 09 ستمبر 2010. 
  7. "March 20 Is Declared As Pakhala Dibas (Universal Pakhala Day) By Odias Worldwide #Pakhal #Odisha #Food - eOdisha.org - latest Odisha News - Business - Culture -Art - Travel". Eodisha.org. 19 March 2014. اخذ شدہ بتاریخ 04 اکتوبر 2016. 
  8. "Pakhala Dibasa to be celebrated by Odias all over the world on 20 March | Incredible Odisha". Incredibleorissa.com. 17 March 2016. اخذ شدہ بتاریخ 04 اکتوبر 2016. 
  9. "'World Pakhala Divas' on March 20". Pragativadi: Leading Odia Dailly (بزبان انگریزی). 2017-03-18. 24 اپریل 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 09 مارچ 2019. 
  10. "Why March 20 celebrates as Pakhala Dibasa & Who has initiated this Dates - #PakhalaDibasa". eOdisha.org - latest Odisha News - Business - Culture -Art - Travel. 2016-03-20. اخذ شدہ بتاریخ 09 مارچ 2019. 
  11. "Pakhala dibasa grows bigger each passing year - Times of India". The Times of India (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 09 مارچ 2019. 
  12. "ଆଜି 'ବିଶ୍ୱ ପଖାଳ ଦିବସ' ! ଓଡିଆ ଜାତିର ଅନନ୍ୟ ବିଶେଷତ୍ୱ ପଖାଳ". Kanak News (بزبان انگریزی). 2018-03-20. اخذ شدہ بتاریخ 09 مارچ 2019.