آذربائیجان–پاکستان تعلقات

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
پاکستان -آذربائیجان تعلقات
نقشہ مقام Pakistan اور Azerbaijan

پاکستان

آذربائیجان

آذربائیجان–پاکستان تعلقات آذربائیجان اور پاکستان کے مابین خارجہ تعلقات ہیں۔ باکو میں پاکستان کا ایک سفارت خانہ ہے اور آذربائیجان کا اسلام آباد میں ایک سفارت خانہ ہے۔ دونوں ممالک کو اسٹریٹجک شراکت دار سمجھا جاتا ہے۔ [1]اور آذربائیجان پاکستان سیکیورٹی تعاون کا آپس فوجی شعبے سے لے کر فوجی تعلقات تک اور سیکیورٹی ایجنسیوں کے مابین بھی تعاون بڑھا رہا ہے۔

دونوں ملکوں کے مابین جدید تعلقات اس وقت قائم ہوئے جب 9 جون 1992 کو، سوویت یونین کے خاتمے کے بعد جمہوریہ آذربائیجان آزاد ہوا۔ [2]پاکستان نے آذربائیجان کو 12 دسمبر 1991 کو تسلیم کیا تھا- پاکستان ان ممالک میں شامل تھا جنھوں نے آذربائیجان کو تسلیم کیا تھا۔[3] دونوں ممالک کے مابین تجارت اور تعاون مستقل طور پر فروغ پا رہا ہے، دونوں ممالک کے مابین تجارت کو بہتر بنانے کے طریقوں پر متعدد اجلاس منعقد ہوئے ہیں۔

دونوں ممالک کے آفیشلز نے مارچ 2013 میں یہ کہا تھا کہ آذربائیجان اور پاکستان  آپس کے "اسٹریٹجک شراکت داری کے تعلقات"  سے لطف اندوز ہوئے ہیں. [4]

سرکاری ملاقاتیں[ترمیم]

فاروق لغاری 1995 میں آذربائیجان کا دورہ کرنے والے پاکستان کے پہلے صدر تھے۔ایک سال بعد ، حیدر علیئیف اسلام آباد گئے۔ حیدر علیئیف اور پاکستان کی وزیر اعظم بینظیر بھٹو کے مابین متعدد ملاقاتیں ہوئی جن کا اختتام 9 معاہدوں پر دستخط پر ہوا ، جو سفارتی لحاظ سے اہم تھے۔[5]

دونوں ممالک کے مابین دفاعی اور فوجی تعاون سے متعلق معاہدہ 2002 میں نتیجے پہ پہنچا۔

معاشی تعلقات[ترمیم]

موسم خزاں 1995 میں ، دونوں ممالک نے تجارت اور معیشت کے میدان میں تعاون اور ریاستی سطح پر مشترکہ کمیشن کے قیام سے متعلق ایک پروٹوکول پر دستخط کیے۔مذکورہ کمیشن کی میٹنگیں ہر 2 سال بعد دونوں ممالک کے دار الحکومت شہروں میں ہوتی ہیں۔ 2005 میں نیشنل بینک آف پاکستان کی ایک شاخ باکو میں کھولی گئی [6]

فوجی تعاون[ترمیم]

آذربائیجان پاکستان سے جے ایف-17 تھنڈر لڑاکا طیارے خریدنے کے لیے بات چیت کر رہا ہے۔[6] [7]

بین الاقوامی حمایت[ترمیم]

پاکستان ان چند ممالک میں سے ایک ہے جس نے خوجالی قتل عام کو تسلیم کیا ہے۔[7] جسے ارمینیا نے آزربائیجان کے عوام کے خلاف نسل کشی کے طور پر کرایا تھا۔[8][9]

انسان دوستی تعاون[ترمیم]

08 اپریل، 2015 کو آذربایجان بین الاقوامی ترقیاتی ایجنسی (اے ڈی اے اے) کے ذریعہ پاکستان کے مختلف شہروں کے دیہی علاقوں میں اکتوبر کے مہینے کے دوران سیلاب کی تباہ کاریوں کے متاثرین کو انسانی امداد کی فراہمی کی گئی.[10]

ثقافتی روابط[ترمیم]

پاکستان اور آذربائیجان کے مابین تعلقات مذہبی اور ثقافتی شعبوں میں بھی فروغ پاتے ہیں۔ باکو اسٹیٹ یونیورسٹی میں پاکستانی –  اردو زبان کی ایک خاص شاخ موجود ہے۔

سفارتخانہ[ترمیم]

آذربائیجان میں اسلامی جمہوریہ پاکستان کے مجاز سفیر سئید خان مہمند ہیں جبکہ پاکستان میں جمہوریہ آذربائیجان کے مجاز سفیر ڈشگین شکاروف ہیں۔[11][12]

مزید دیکھیے[ترمیم]

بیرونی روابط[ترمیم]

  • Cemendtaur، A.H. (October 12, 2013). "A piece of Multan in Baku". The News. July 2, 2017 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ October 14, 2016. 
  • "New Page in Azerbaijan-Pakistan relations". AzerNews.az. October 18, 2016. اخذ شدہ بتاریخ March 11, 2017. 
  • An official website of the Embassy of Pakistan in Azerbaijan
  • An official website of a branch of the National Bank of Pakistan in Bakuآرکائیو شدہ [Date missing] بذریعہ nbp.az [Error: unknown archive URL]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. http://www.azernews.az/nation/105579.html
  2. "Пакистан и Азербайджан. Взаимоотношения.". 
  3. "PRESIDENT MUSHARRAF'S VISIT TO AZERBAIJAN: AN EFFORT TO BUILD PAKISTANI REGIONAL LEADERSHIP". اخذ شدہ بتاریخ April 26, 2016. 
  4. "News.Az –   Azerbaijan, Pakistan 'enjoy strategic partnership relations'". اخذ شدہ بتاریخ April 26, 2016. 
  5. "Heydar Aliyev and Benazir Bhutto. Official meetings". 
  6. "В Баку открылся филиал Национального Банка Пакистана". Day.Az (بزبان روسی). July 12, 2005. اخذ شدہ بتاریخ 29 اپریل 2018. 
  7. ""International Recognition of The Khojaly Genocide"". un.mfa.gov.az. اخذ شدہ بتاریخ 29 اپریل 2018. 
  8. "Pakistani Senate`s Foreign Relations Committee approves Khojaly genocide" (بزبان انگریزی). Azertag. February 1, 2012. 
  9. "Khojaly genocide: Causes, consequences and international recognition" (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 29 اپریل 2018. 
  10. "Azerbaijan - Pakistan relations". 29 نومبر 2019 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 06 دسمبر 2019. 
  11. "Пресс-релизы". mia.gov.az (بزبان روسی). اخذ شدہ بتاریخ 29 اپریل 2018. 
  12. "Embassy of Azerbaijan in Pakistan". April 28, 2018 میں اصل سے آرکائیو شدہ.