بشیرا

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
بشیرا
بشیرا.png
ਪੰਜਾਬੀ ਬਸ਼ੀਰਾ
ہدایت کار اسلم ڈار
پروڈیوسر اسلم ڈار
قمر بٹ
تحریر عزیز میرٹھی
منظر نویس عزیز میرٹھی
کہانی عزیز میرٹھی
ستارے
راوی ایس ایم صدیق
موسیقی کمال احمد
سنیماگرافی سعید ڈار
ایڈیٹر خورشید احمد، عباس
پروڈکشن
کمپنی
تقسیم کار کینگ پکچرز
تاریخ اشاعت
دورانیہ
2:20:47 دقیقہ
ملک Flag of Pakistan.svg پاکستان
زبان پنجابی
بجٹ روپیہ 10 ملین (US$94,000)
باکس آفس روپیہ 80 ملین (US$750,000)

بشیرا (انگریزی: Bashira) ‏ پنجابی زبان میں فلم کا آغاز کیا۔ فلم كى نمائش 21 جولائی، 1972ء كو ہوئى۔ پاکستانی ڈائمنڈ جوبلی ڈراما فلم، فمیلی کیریئر کے بارے میں فلم کی تکمیل کی گی ہیں۔ سلطان راھی نے اس سپر ہٹ سنہری جیلی پنجابی فلم سے کامیابی حاصل کی۔ مشہور شاعر مشیر کاظمی نے اس فلم میں کردار ادا کیا۔ اس فلم کے ہدایتکار اسلم ڈار تھے۔ فلمساز تیار کردہ وہ بھی اسلم ڈار ہی تھے۔ فلم کے اداکاروں میں سے منفرد کردار دیکھے سلطان راہی، حبیب، عالیہ، رنگیلا تھے۔

واقعات[ترمیم]

بشیرا ایک ڈائمنڈ جوبلی ایکشن فلم تھی 1972ء. سلطان راھی نے فلم کے عنوان کے کردار میں، اس فلم کے ساتھ پاکستانی فلم صنعت میں اپنی بڑی کامیابی حاصل کی اور ملک میں تقریبا دو دہائیوں تک جاری رہنے والے خونی کارروائی فلموں کا ایک نیا بنیاد شروع کیا. سلطان راھی اگرچہ فلموں میں موجود تھے لیکن اس فلم میں حقیقی معنوں میں اس نے اہم کردار اداکار ادا کیا. اس فلم کو کرنے کے بعد اس ڈیلر کو اس فلم میں کم کاسٹ ریلیز کرنے کے لیے تیار تھا تاکہ اسلم ڈار نے پہل لیا اور اس کی اپنی تقسیم کے دفتر قائم کرکے اسے آزاد کر دیا. فلم بہت اچھی طرح سے تھی اور پنجابی سنیما فلم کی تاریخ میں سنگ میلوں میں سے ایک بن گیا. بشیرا کا ایک موڑ نقطہ نظر نہ صرف سلطان راھی کی فلمی کیریئر میں بلکہ پاک فلمومھی کو بلند آواز سے ڈیلیوری کی ترسیل کا راستہ بھی دیا گیا.

مسلسل ناکامی[ترمیم]

اردو فلموں کی مسلسل ناکامی کے بعد، فلم ڈائریکٹر اسلم ڈار نے ایک پنجابی فلم بنانے کا فیصلہ کیا تاکہ وہ بشیرا کا خیال بنائے اور فلم کے اہم کردار کے لیے ساون کو مشغول کرنے کی کوشش کی کیونکہ وہ خان چاچا کی کامیابی کے بعد اچھی طرح سے موصول ہوئی تھیں. ساون کے انکار کے بعد (اس نے ستر ہزار روپے طلب کیے)، اسلم ڈار نے سلطان راہی کو فلم کے ہیرو کے طور پر لے کر حتمی طور پر اپنے ساتھیوں سے بات چیت کی، لیکن اس خیال کو سننے کے بعد وہ سبھی سلطان راھی کو اس کے ہیرو کے لیے نہیں تھے. لیکن اسلم ڈار نے راھی کے ساتھ فلم کا تعین اور مکمل کیا، اس کے بعد اسلم نے اس بات کا احساس کیا کہ اس کے دوستوں کو یہ حق ہے کہ کوئی فلم ڈسٹریبیوٹر اس منصوبے پر لے جانے کے لیے تیار نہیں تھا، آخرکار اسلم ڈار نے اپنی فلم کو نمائش دی تھی دونوں اداکار اور فلم ڈائریکٹر، بلکہ اس نے ایک دہائی کی طرف اشارہ کیا.

اداکار[ترمیم]

گیت البم[ترمیم]

"بشیرا"
بشیرا (البم).jpg
گیت
اے-سائیڈ "Other Side" (double A-side)
طرز فلمی گانے
ریکارڈز 23 ستمبر 1972ءء (1972ءء-09-23)
صنف فلم ٹریک لسٹ
طوالت 27:07
لیبل ای ایم آئی (پاکستان) لمیٹڈ
گیت نگار عزیز میرٹھی
پروڈوسر اسلم ڈار [1]
نمبر شمارعنوانگلوکارطوالت
1."اے ویلا مڑھ نّیں آنا وے چن مکھناں، اے کہنداں نیں تنیوں اے شرابی اکھیاں"تصور خانم2:51
2."کیسری ڈوپٹہ گل کڑتی شنیل دی، دل لینا دل دینا لوڑ کی وکیل دی"نورجہاں3:08
3."میں دیس پنجاب دی ہیر اڑیۓ، میں ٹوٹے ٹوٹے کر دیاں گی"نورجہاں، آئرین پروین4:12
4."کاہنوں کڈھنا ایں نک نال لکیراں، توں دل دی لکیر کڈھ لے"مسعود رانا5:20
5."پہلے اکھ لڑ دی، فیر دل ملدے، فیر ہوندے قول قرار"نورجہاں3:39
6."جی کردا اے میرا اج بھنگڑے پاواں، چھم چھم نچاں وانگ مورنی"نورجہاں، آئرین پروین3:33
7."بنوں رانی بڑی دلگیر وے، کندھا ڈولی نوں دے جاٸیں ویر وے"نورجہاں4:57
کل طوالت:27:07

اس فلم کی موسیقی کمال احمد نے ترتیب دی جبکہ نغمات مشیر کاظمی، بشیر کھوکھر، آصف جاہ نے لکھے۔ اس فلم میں نورجہاں، مسعود رانا، آئرین پروین اور تصور خانم نے اپنی آواز کا جادو جگایا۔

حوالہ جات[ترمیم]

  1. عاشق علی حجرہ شاہ مقیم۔ "بشیرا (1972ء) - فلم گانے"۔ ای ایم آئی پاکستان۔ ای ایم آئی پاکستان تمام بینڈ کو جاری کرنے کے لئے تیار ہے۔ اخذ شدہ بتاریخ 3 دسمبر 2018۔

بیرونی روابط[ترمیم]