بھارت نیپال سرحد

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
بھارت نیپال سرحد
Map of Nepal.png
نیپال کی نقشہ، جنوب میں بھارت کے ساتھ
Characteristics
ممالک Flag of India.svg بھارت Flag of Nepal.svg نیپال
لمبائی1,770 کلومیٹر (5,810,000 فٹ)
تاریخ
تاسیس00000

Treaty of Sugauli مابین نیپال اور برطانوی راج
موجودہ صورت15 اگست 1947ء

برطانوی راج سے بھارت کی آزادی
Treaties1950 Indo-Nepal Treaty of Peace and Friendship

بھارت نیپال سرحد ایک بین الاقوامی کھلی سرحد ہے جو بھارت اور نیپال کے درمیان میں ہے۔ سلسلہ کوہ ہمالیہ اور سندھ و گنگ کے میدانی علاقوں کے ساتھ ساتھ 1,770 کلومیٹر (1,099.83 میل) طویل سرحد ہے۔[1] موجودہ سرحدی حد بندی 1816ء میں نیپال اور برطانوی راج کے مابین ہونے والے معاہدہ سوگولی کے بعد کی گئی تھی۔ مابعد آزادی ہند، موجودہ سرحد کو نیپال اور جمہوریہ بھارت کے مابین سرحد کے طور پر تسلیم کیا گیا تھا۔

تفصیل[ترمیم]

یہ سرحد مغرب میں چین، بھارت اور نیپال کی مشترکہ سرحد سے شروع ہوتی ہے۔ اس کے بعد یہ پہاڑی جنوب مغرب میں ہمالیہ، شوالک سے ہوتی ہوئی گنگی میدان میں داخل ہوتی ہے، شروع میں وسیع میدانی علاقہ اور پھر شاردا ندی سرحد کا کام کرتی ہے۔ ماجھولا کے بالکل مشرق میں یہ جنوب مشرق کا رخ کرتی ہے اور اس سمت سے آگے بڑھتی ہے، جگہ بہ جگہ مختلف دریاؤں اور پہاڑی چوٹیوں کو استعمال کرتی ہے۔ اسلام پور کے شمال مغرب میں سرحد شمال مشرق کی طرف موڑ دیتی ہے اور مشرقی چینی ٹرائی پوائنٹ سے آگے بڑھتی ہے۔

تاریخ[ترمیم]

یہ سرحدی خطہ تاریخی طور پر مختلف ہندوستانی اور نیپالی ریاستوں کے کنارے موجود ہے۔ اس نے ہندوستان میں برطانوی حکمرانی کے دور میں اپنی جدید شکل اختیار کی جو 17 ویں صدی میں شروع ہوئی تھی۔ اٹھارہویں صدی کے آخر میں نیپالی بادشاہ نے توسیع کی مہم چلائی جس سے وہ انگریزوں کے ساتھ تنازع میں آگئے اور یوں اینگلو نیپالی جنگ (1814–16) شروع ہوئی۔[2][3] نیپال کو شکست کا سامنا کرنا پڑا، اور سیوگولی کے معاہدے کے ذریعہ اس کو مجبور کیا گیا کہ وہ جدید ہند نیپال کی حدود کو مؤثر طریقے سے تشکیل دے کر، برطانیہ کے لئے بہت بڑی اراضی کو چھوڑ دے۔[4][5] ترائی کے خطے کا انتظام کرنا مشکل ہونے کی وجہ سے، انگریزوں نے اس کا کچھ حصہ 1816ء میں نیپال واپس کردیا۔[6]

سرحدی گزرگاہیں[ترمیم]

متعدد اہم سرحدی گزرگاہیں ہیں جو ہندوستانی انٹیگریٹڈ چیک پوسٹس (ICP) تیسرے ممالک کے شہریوں کے لئے کارگو کسٹم اور امیگریشن اندراج پر کارروائی کے لئے استعمال ہوتی ہیں۔یہ، مغرب سے مشرق تک ہیں:

  1. بانباسا چمپاوت ضلع، اتراکھنڈ، بھارت – کنچنپور ضلع، سدرپشچم پردیش، نیپال
  2. روپایدھیا ضلع بہرائچ، اترپردیش – نیپال گنج بانکے ضلع، نیپال
  3. سونولی مہاراج گنج ضلع، اترپردیش، بھارت – سدھارتھ نگر روپندیہی ضلع، نیپال
  4. راکسال مشرقی چمپارن ضلع، بہار، بھارت – برگنج، نیپال (جو 'نیپال کا دروازہ' بھی کہلاتا ہے)
  5. جوگبانی ارریہ ضلع، بہار، بھارت – بیرات نگر، نیپال
  6. پانی ٹینکی دارجلنگ ضلع، مغربی بنگال، بھارت – کاکاربھٹہ، نیپال

چونکہ سرحد کے ساتھ کوئی باڑ نہیں ہے اس یے وہاں کئی چھوٹے سرکاری اور غیر سرکاری سرحدی گزرگاہیں ہیں۔ چھوٹی سرکاری سرحدی گزرگاہ کو نیپالی زبان میں چھوٹی بھنسر (معمولی کسٹم) کے نام سے جانا جاتا ہے۔یہ، مغرب سے مشرق تک (بھارتی ریاستوں کے ساتھ ساتھ ہیں):

اتارکھنڈ

سونالی میں سرحدی دروازہ

اتر پردیش

بہار

مغربی بنگال

مزید دیکھیے[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. "نیپال". CIA World Factbook. 05 ستمبر 2020 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 23 ستمبر 2020. 
  2. "History of the Nepalese Army". nepalarmy.mil.np. Nepal Army. 28 دسمبر 2017 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 16 جنوری 2019. 
  3. Marshall، Julie G. (2005). Britain and Tibet 1765–1947: A Select Annotated Bibliography of British Relations with Tibet and the Himalayan States Including Nepal, Sikkim and Bhutan. ISBN 978-0-415-33647-5. 
  4. "Treaty of Sagauli | British-Nepalese history [1816]". Encyclopedia Britannica (بزبان انگریزی). اخذ شدہ بتاریخ 27 مئی 2020. 
  5. Stephen Groves (22 ستمبر 2014). "India and Nepal Tackle Border Disputes". The Diplomat. 29 مارچ 2017 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 28 مارچ 2017. 
  6. "Nepal: A Country Study". Library of Congress. 1991. اخذ شدہ بتاریخ 23 ستمبر 2020.