تخت ہزارہ

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search

تخت ہزارہ: رانجھا کا آبائی گاؤں ، مہاکاوی رومانوی کہانی ہیر رانجھا کا مرکزی کردار ، مقامی لوگوں کے لیے معاشی مواقع نہ ہونے کی وجہ سے ویران ہونے کے خطرے کا سامنا ہے۔

صدیوں پرانی عمارتیں ختم ہونا شروع ہو گئی ہیں اور لوگوں کی ایک بڑی تعداد معاشی بے یقینی اور بے روزگاری کی وجہ سے گاؤں سے نقل مکانی کر چکی ہے۔

دریں اثنا ، حکومت نے اس جگہ کو سیاحتی مقام کے طور پر تیار کرنے کا کوئی منصوبہ نہیں بنایا ہے ، حالانکہ لوک کہانی کے ساتھ اس کے روابط نے ملک کے ساتھ ساتھ بیرون ملک بھی دلچسپی پیدا کی ہے۔

رانجھا کا مشہور آبائی شہر تخت ہزارہ ایک منفرد شناخت اور تاریخی حیثیت رکھتا ہے۔ تاریخی واقعات بتاتے ہیں کہ جب مغلیہ سلطنت کا زوال شروع ہوا تو تخت ہزارہ لاقانونیت کا شکار ہو گیا کیونکہ سکھ جنگجوؤں کے گروہوں نے علاقے کو لوٹنا شروع کر دیا۔ انہوں نے تاریخی شہر کو تباہ کر دیا۔ باشندوں کی ایک بڑی تعداد شہر چھوڑ کر محفوظ مقامات پر منتقل ہو گئی۔

1785 کے آس پاس ، لوگوں نے یہاں دوبارہ آباد ہونا شروع کیا۔ اس طرح ، مختلف اتار چڑھاؤ سے گزرنے کے بعد ، شہر ایک چھوٹے سے گاؤں میں بدل گیا۔

مختلف تاریخی حوالوں سے ثابت ہوتا ہے کہ رانجھا کا اصل نام دھیڈو تھا اور اس کے والد مجدین ایک کسان تھے۔

اس جگہ کے دائرے کے 80 کلومیٹر کے ارد گرد سات دروازے ہیں۔ تخت ہزارہ اور تخت محل دو بڑے اور مشہور دروازے یا دروازے ہیں جو تخت ہزارہ یا تخت محل میں داخل ہوتے ہیں ، اور اسی وجہ سے اس کا نام تخت ہزارہ آیا۔

تخت ہزارہ رانجھا سے وابستگی کی وجہ سے مشہور ہوا جس کی کہانی سید وارث شاہ نے ہمیشہ کے لیے ریکارڈ کی۔ سرکاری اعداد و شمار سے پتہ چلتا ہے کہ تخت ہزارہ کی آبادی 5000 ہے ، جبکہ صرف 20 سال پہلے یہ قصبہ تقریبا،000 15 ہزار افراد کا گھر تھا۔ روزگار کے مواقع اور کاروباری وسائل کی کمی کی وجہ سے آبادی میں کمی آئی ہے۔ روزی کی تلاش میں نقل مکانی کرنے والوں کی تعداد بتدریج بڑھ رہی ہے۔

تاریخی قصبہ ضلع سرگودھا میں کوٹ مومن سے 40 کلومیٹر مشرق میں دریائے چناب کے کنارے پر واقع ہے۔ دریا کے اس پار ، حافظ آباد اور گوجرانوالہ اضلاع کی حدود شروع ہوتی ہیں ، جبکہ منڈی بہاؤالدین اور گجرات کے اضلاع صرف 3 کلومیٹر دور ہیں۔ تخت ہزارہ اس طرح کئی اضلاع کے سنگم پر واقع ہے۔

عمارتیں قدیم چھوٹی اینٹوں سے بنی ہیں لیکن تاریخ اور ورثے کے مختلف رنگ نمایاں ہوتے ہیں جب ہم پرانے ڈھانچے کو دیکھتے ہیں۔ یہ عمارتیں گزرتے وقتوں کی یاد تازہ کرتی ہیں۔ لیکن آج گاؤں کی خستہ حالت زائرین پر ایک مایوس کن تاثر چھوڑتی ہے۔ دیواروں کے ذریعے دکھائی جانے والی کاریگری ماضی کی ایک عظیم میراث ہے جو وقت کے ساتھ صرف ایک یادگار بن سکتی ہے۔

مرحوم مقامی مصنف میاں محمد شفیع نے اپنی کتاب صدف ریزے میں تخت ہزارہ کے ثقافتی ورثے کا ذکر کیا ہے جس میں میاں رانجھا کے نام سے ایک پرانی مسجد بھی شامل ہے جس کی باقیات اب بھی موجود ہیں۔ مغل بادشاہ ظہیر الدین بابر نے بھی اپنی کتاب تزک بابری میں تخت ہزارہ کے بارے میں لکھا ہے۔ مغلیہ دور میں ، ایک روحانی شخصیت شاہ شام الدین یہاں رہتے تھے اور ان کا مزار تخت ہزارہ میں واقع ہے ، جہاں ہر سال ان کے اعزاز میں ایک میلہ ہوتا ہے۔

اگرچہ تخت ہزارہ کے ارد گرد کی زمین بہت زرخیز ہے اور اس کی پیداوار پورے پنجاب میں فراہم کی جاتی ہے ، لیکن بڑے شہروں تک آسان رسائی نہ ہونے کی وجہ سے کسانوں کو مسائل کا سامنا کرنا پڑتا ہے۔ لوگوں کی بڑھتی ہوئی نقل مکانی کی وجہ سے ، خدشہ ہے کہ قصبے کے تاریخی نشانات غائب ہو جائیں گے۔

۔[1]

رانجھا کا آبائی گاؤں[ترمیم]

تختِ ہزارہ سرگودھا کے مشرق میں دریائے چناب کے کنارے پر آباد ایک خوبصورت سرسبز اور خوشحال قصبہ ہے۔ یہاں کے اکثر باسی کاشتکاری سے وابستہ ہیں۔ یہاں کی زمین ریتلی نرم اور انتہائی ذرخیز ہے۔ آب و ہوا چاول،گندم، لیموں، مالٹا، آم، بانس اور سبزیوں کی کاشت کے لیے کافی موزوں ہے لیکن تختِ ہزارہ کی وجہ شہرت ہیر رانجھا کی وہ رومانی داستان ہے جس پر پاک و ہند میں بیسیوں فلمیں اور ڈرامے بن چکے ہیں۔ اِس قصے کو نظم و نثر میں بھی کثرت سے بیان کیا گیا ہے۔

مدثر ظفر مزید لکھتے ہیں اگر کوئی قاری یہ سوچ رہا ہے کہ میاں رانجھا کے آبائی گاؤں میں میاں رانجھا کی کوئی بڑی سی یادگار ہوگی تو وہ میری طرح مغالطے میں ہے۔ اِس خیال کے تحت یہاں آنے والوں کو صرف مایوسی ہوتی ہے۔ تختِ ہزارہ میں داخل ہوتے ہی دائیں جانب بر لب سڑک ایک امام بارگاہ ہے۔ کہا جاتا ہے کہ یہاں میاں رانجھا کا گھر ہوا کرتا تھا لیکن شاید یہ ایک مفروضہ ہی ہے، کیونکہ اِس بات کی تصدیق یہاں کے مقامی لوگ بھی نہیں کرتے۔

بہرحال یہ ایک تاریخی گاؤں ہے جس کا پرانا نام کھجیاں والا تھا۔ کسی مغل شہنشاہ نے دورانِ سفر اِس جگہ پڑاؤ کیا اور بادشاہ کا تخت یہاں بچھایا گیا جس کی مناسبت سے اِس جگہ کا نام تختِ ہزارہ ہو گیا، جو اب تک تختِ ہزارہ کے نام سے موسوم چلا آتا ہے۔[2]

امام بارگاہ قصر علی اکبر۔ کہا جاتا ہے کہ رانجھا کا گھر یہاں ہوا کرتا تھا—تصویر مدثر ظفر

حوالہ جات[ترمیم]

  1. All About Pakistan
  2. ڈان نیوز 26 نومبر 2017ء تحقیق مدثر ظفر