حسین علی منتظری

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
حسین علی منتظری
(فارسی میں: حسینعلی منتظری نجف آبادی خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں مقامی زبان میں نام (P1559) ویکی ڈیٹا پر
Hussein-Ali Montazeri in evin prison.jpg 

معلومات شخصیت
پیدائش 22 ستمبر 1922[1]  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں تاریخ پیدائش (P569) ویکی ڈیٹا پر
نجف آباد  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں مقام پیدائش (P19) ویکی ڈیٹا پر
وفات 20 دسمبر 2009 (87 سال)[2]  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں تاریخ وفات (P570) ویکی ڈیٹا پر
قم  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں مقام وفات (P20) ویکی ڈیٹا پر
وجۂ وفات مرض نظام قلب و عروقی  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں وجۂ وفات (P509) ویکی ڈیٹا پر
مدفن حرم فاطمہ معصومہ  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں مقام دفن (P119) ویکی ڈیٹا پر
طرز وفات طبعی موت  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں طرزِ موت (P1196) ویکی ڈیٹا پر
شہریت Flag of Iran.svg ایران  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں شہریت (P27) ویکی ڈیٹا پر
جماعت آزاد  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں سیاسی جماعت کی رکنیت (P102) ویکی ڈیٹا پر
اولاد محمد منتظری  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں اولاد (P40) ویکی ڈیٹا پر
عملی زندگی
استاد سید حسین طباطبایی بروجردی،  روح اللہ خمینی،  محمد حسین طباطبائی  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں استاد (P1066) ویکی ڈیٹا پر
قابل ذکر طلبا مصطفیٰ خمینی،  امام موسی صدر،  ہادی خامنہ ای،  سید علی خامنہ ای،  ہاشمی رفسنجانی  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں شاگرد (P802) ویکی ڈیٹا پر
پیشہ الٰہیات دان،  فلسفی،  مصنف،  آخوند،  سیاست دان  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں پیشہ (P106) ویکی ڈیٹا پر
پیشہ ورانہ زبان فارسی،  عربی  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں زبانیں (P1412) ویکی ڈیٹا پر
ویب سائٹ
ویب سائٹ باضابطہ ویب سائٹ  خاصیت کی حیثیت میں تبدیلی کریں باضابطہ ویب سائٹ (P856) ویکی ڈیٹا پر
آیت اللہ منتظری شاہ ایران کی قید میں

آیت اللہ حسین علی منتظری ایک مشہور شیعہ ایرانی عالم دین اور ایرانی حکومت کے نقاد تھے۔ 1922 کو اصفہان میں پیدا ہوئے اپنی ابتدائی دینی تعلیم وہیں سے حاصل کی۔ شاہ کے زمانے میں انہیں کافی مشکلات کا سامنا کرنا پڑا۔ وہ نسبتاً آزاد خیال قسم کے شعیہ عالم تھے۔ آیت اللہ منتظری انقلابِ ایران کے اہم ترین رہنماؤں میں سے تھے مگر سنہ 1989 میں آیت اللہ منتظری اور آیت اللہ خمینی کے درمیان میں اختلافات پیدا ہوئے تھے۔ آیت اللہ منتظری کو ایک زمانے میں امام خمینی کا جانشین مقرر کیا گیا تھا کہ لیکن سنہ 1989 میں آیت اللہ خمینی کے انتقال سے کچھ ماہ قبل ایران میں حقوقِ انسانی کی صورت حال پر دونوں علما میں تنازعے کے بعد ان سے یہ استحقاق واپس لے لیا گیا۔ بعد ازاں سنہ 1997 میں آیت اللہ منتظری نے امام خمینی کے جانشین آیت اللہ علی خامنہ ای کے اختیارات پر سوال اٹھایا جس کے نتیجے میں نہ صرف ان کا مدرسہ بند کر دیا گیا بلکہ انہیں چھ برس نظر بندی میں گزرانے پڑے۔ 2009 میں ہونے والے ایرانی انتخابات میں انہوں نے نسبتا معتدل اور آزاد خیال امیدوار موسوی کی حمایت کی اور انہوں نے جون 2009 میں ایرانی صدارتی انتخاب کے بعد صدر احمدی نژاد کی مذمت میں فتوٰی بھی دیا۔ 19 دسمبر 2009 کو ان کا انتقال ہوا۔ ان کے جنازے میں بے شمار حکومت مخالف لوگوں نے شرکت کی۔

نگار خانہ[ترمیم]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. جی این ڈی- آئی ڈی: https://d-nb.info/gnd/118909762 — اخذ شدہ بتاریخ: 14 اگست 2015 — اجازت نامہ: CC0
  2. اجازت نامہ: CC0