رامادیوی چودھری

آزاد دائرۃ المعارف، ویکیپیڈیا سے
Jump to navigation Jump to search
رامادیوی چودھری
(اڑیہ میں: ରମାଦେବୀ ଚୌଧୁରୀ ویکی ڈیٹا پر (P1559) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
Ramadebi.jpg
 

معلومات شخصیت
پیدائش 3 دسمبر 1899  ویکی ڈیٹا پر (P569) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
کٹک ضلع  ویکی ڈیٹا پر (P19) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
وفات 22 جولا‎ئی 1985 (86 سال)  ویکی ڈیٹا پر (P570) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
کٹک  ویکی ڈیٹا پر (P20) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
شہریت Flag of India.svg ہندوستان (26 جنوری 1950–)
British Raj Red Ensign.svg برطانوی ہند (–14 اگست 1947)
Flag of India.svg ڈومنین بھارت (15 اگست 1947–26 جنوری 1950)  ویکی ڈیٹا پر (P27) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
جماعت انڈین نیشنل کانگریس  ویکی ڈیٹا پر (P102) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
اولاد انا پرنا مہارانا  ویکی ڈیٹا پر (P40) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
عملی زندگی
پیشہ صحافی،  سیاست دان  ویکی ڈیٹا پر (P106) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
مادری زبان اڑیہ  ویکی ڈیٹا پر (P103) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
پیشہ ورانہ زبان اڑیہ،  ہندی  ویکی ڈیٹا پر (P1412) کی خاصیت میں تبدیلی کریں
اعزازات
جمنا لعل بجاج اعزاز (1981)  ویکی ڈیٹا پر (P166) کی خاصیت میں تبدیلی کریں

رامادیوی چودھری ((اڑیہ: ରମାଦେବୀ ଚୌଧୁରୀ)‏ ) (3 دسمبر 1899 - 22 جولائی 1985)، جسے راما دیوی کے نام سے بھی جانا جاتا ہے، ایک ہندوستانی آزادی پسند اور ایک سماجی مصلح تھیں۔ اڈیشہ کے لوگ اسے ماں کہتے تھے۔ بھونیشور میں رام دیوی یونیورسٹی برائے خواتین کا نام اس عظیم شخصیت کے نام پر رکھا گیا ہے۔

خاندان[ترمیم]

وہ گوپال بلو داس اور بسنت کماری دیوی کی بیٹی اور مدھو سودن داس کی بھانجی تھیں۔ 15 سال کی عمر میں، اس کی شادی گوپا بندھو چودھری سے ہوئی، جو اس وقت ڈپٹی کلکٹر تھے۔ [1]

آزادی کے دوران کردار[ترمیم]

اپنے شوہر کے ساتھ، وہ 1921 میں ہندوستان کی آزادی کی تحریک میں شامل ہوئیں [1] وہ مہاتما گاندھی [2] سے بہت متاثر تھیں اور انہوں نے عدم تعاون کی تحریک میں بڑھ چڑھ کر حصہ لیا۔ وہ خواتین کو تحریک آزادی میں شامل ہونے کی ترغیب دینے کے لیے گاؤں گاؤں جایا کرتی تھیں۔ [2] دوسرے جنہوں نے اسے متاثر کیا وہ تھے جے پرکاش نرائن، وینایک نرہری بھاوے اور اس کے چچا مدھوسودن داس۔ [2] 1921 میں ان کی گاندھی جی سے پہلی ملاقات ہوئی اور اپنے شوہر کے ساتھ مل کر تحریک عدم تعاون میں شامل ہوگئیں۔ [2] اسی سال انہوں نے انڈین نیشنل کانگریس میں شمولیت اختیار کی اور کھادی پہننا شروع کر دی۔ [2] 1930 میں، اس نے اڑیسہ کی سطح پر نمک ستیہ گرہ تحریک میں بڑھ چڑھ کر حصہ لیا۔ وہ کرن بالا سین، مالتی دیوی، سرلا دیوی، پران کرشنا پادھیاری جیسے دیگر کارکنان کے ساتھ انچوڈی اور سریجنگ گئی۔ [2] اس کو اور اس کے ساتھیوں کو نومبر 1930 میں گرفتار کیا گیا اور انگریزوں نے مختلف جیلوں میں رکھا۔ وہ کئی بار (1921، 1930، 1936، 1942 میں) دیگر خواتین آزادی کارکنوں جیسے سرلا دیوی، مالتی چودھری اور دیگر کے ساتھ گرفتار ہوئیں اور انہیں جیل بھیج دیا گیا۔ [3] [4] [5] [2] انہوں نے انڈین نیشنل کانگریس کے 1931 کے کراچی اجلاس میں شرکت کی اور اس وقت رہنماؤں سے اگلا اجلاس اڑیسہ میں منعقد کرنے کی درخواست کی۔ [2] 1932 میں ہزاری باغ جیل سے رہائی کے بعد، وہ ہریجن کی فلاح و بہبود میں بڑھ چڑھ کر حصہ لیتی تھیں۔ اس نے اسپروشیاتا نبارنا سمیتی کو گاندھی جی کی ہدایات کے تحت اچھوت کے خاتمے کے لیے کہا۔ اس ادارے کا نام بعد میں ہریجن سیوا سنگھا رکھ دیا گیا۔ [2] وہ گاندھی جی کے 1932 اور 1934 کے اڑیسہ کے دوروں کے ساتھ ساتھ کستوربا، سردار پٹیل، راجندر پرساد، مولانا آزاد، جواہر لعل نہرو اور دیگر کے دوروں میں بھی شامل تھیں۔ [2] اس نے باری میں ایک آشرم شروع کیا، جس کا نام گاندھی جی نے سیواگھر رکھا ۔ [2] 1942 کی ہندوستان چھوڑو تحریک کے دوران، راما دیوی کے پورے خاندان کے افراد بشمول ان کے شوہر، گوپا بندھو چودھری کو گرفتار کر لیا گیا۔ [2] کستوربا گاندھی کی موت کے بعد، گاندھی جی نے انہیں کستوربا ٹرسٹ کے اڑیسہ باب کے نمائندے کے طور پر کام سونپا۔ [2]

ہندوستان کی آزادی کے بعد کردار[ترمیم]

1947 میں ہندوستان کی آزادی کے بعد، راما دیوی نے اپنے آپ کو آچاریہ ونوبا بھاوے کی بھوڈن اور گرامدان تحریک کے لیے وقف کر دیا۔ [6] 1952 میں اس نے اپنے شوہر کے ساتھ ریاست بھر میں تقریباً 4000 کلو میٹر پیدل سفر کیا تاکہ بے زمینوں اور غریبوں کو زمین اور دولت دینے کے پیغام کو آگے بڑھایا جا سکے۔ [6] [7] [8] [9] [10] [11] 1928 سے، راما دیوی جگت سنگھ جگت سنگھ پور کے الکا آشرم میں رہیں۔ [12]

اس نے اتکل کھادی منڈل کے قیام میں مدد کی اور رام چندر پور میں اساتذہ تربیت سنٹر اور بلواڑی بھی قائم کیا۔ 1950 میں اس نے ڈمبوروگیڈا میں ایک قبائلی فلاحی مرکز قائم کیا۔ 1951 کے قحط کے دوران اس نے اور مالتی نے کوراپوٹ میں قحط سے نجات کے لیے کام کیا۔ اس نے 1962 کی ہند-چین جنگ سے متاثرہ فوجیوں کی مدد کے لیے کام کیا۔

ایمرجنسی کے دوران اس نے ہری کرشنا مہتاب اور نیلمانی روترے کے ساتھ اپنا اخبار نکال کر احتجاج کیا۔ [2] گرام سیوک پریس پر حکومت نے پابندی لگا دی تھی اور اسے اڑیسہ سے تعلق رکھنے والے دیگر لیڈروں جیسے نبکرشنا چودھری، ہری کرشنا مہتاب، منموہن چودھری، محترمہ کے ساتھ گرفتار کیا گیا تھا۔ انا پرنا مہارانا، جے کرشنا موہنتی، اور دیگر۔ [13]

اس نے کٹک میں ایک پرائمری اسکول، شیشو وہار اور ایک کینسر ہسپتال قائم کیا۔ [2]

اعزازات[ترمیم]

قوم کے لیے ان کی خدمات کے اعتراف میں، رمادیوی کو 4 نومبر 1981 کو جمنالال بجاج اعزاز [14] [15] اور 16 اپریل 1984 کو اتکل یونیورسٹی کی طرف سے ڈاکٹر آف فلاسفی (Honoris causa) سے نوازا گیا۔

یادگاریں[ترمیم]

بھونیشور میں راما دیوی یونیورسٹی برائے خواتین کا نام ان کی یاد میں رکھا گیا ہے۔ یہ مشرقی بھارت میں خواتین کی پہلی یونیورسٹی ہے، جو 2015 سے قائم ہوئی ہے۔ یونیورسٹی کے احاطے میں ان کے لیے ایک عجائب گھر ہے۔ [16] کٹک میں اس کے ذریعہ شروع کیے گئے اسکول - شیشو وہار کا نام اب رام دیوی شیشو وہار ہے۔ [17]

موت[ترمیم]

وہ 22 جولائی 1985 کو 85 سال کی عمر میں انتقال کر گئیں۔ [2]

حوالہ جات[ترمیم]

  1. ^ ا ب Philomena Royappa Reddy؛ P. Sumangala (1998). Women in development: perspectives from selected states of India. B.R. Pub. Corp. ISBN 978-81-7018-978-7. اخذ شدہ بتاریخ 22 اپریل 2011. . Rama Devi Rama Devi along with her husband Gopabandu Choudhury joined the Freedom Movement in 1921
  2. ^ ا ب پ ت ٹ ث ج چ ح خ د ڈ ذ ر​ ڑ​ ز Freedom Struggle and Rama Devi Orissa Review April 2006
  3. People's Revolt in Orissa: A Study of Talcher by Debi P. Mishra – 1998 – Page 138
  4. Women and Social Change in India by Snehalata Panda – 1992 – Page 14
  5. Encyclopaedia of women biography: India, Pakistan, Bangladesh by Nagendra Kr Singh – 2001
  6. ^ ا ب Dharam Paul Chowdhry (1992). Profile of voluntary action in social welfare and development. Siddhartha Publishers. ISBN 978-81-85464-01-5. اخذ شدہ بتاریخ 22 اپریل 2011. . In 1952 the Bhoodan and Gramdan movement claimed the services of both Mrs. Rama Devi and her...
  7. Orissa Review 1990 – Volume 47 – Page 14 "commencement of the Salt Satyagraha, the women leaders like Rama Devi, Sarala Devi, Malatl Devi and Kiran Bala Sen made efforts for the active participation of women in this satyagraha. Led by Rama Devi and Malati Devi, fifteen hundred ..."
  8. Reflections on the National Movement in Orissa 1997 "Malati Devi protest meeting was held and a big procession was organised at Cuttack on 7th May, 1930. During this time prominent women leaders of Orissa like Rama Devi, Malati Devi and Sarala Devi were arrested. On 25th September ..."
  9. B. S. Chandrababu, L. Thilagavathi Woman, Her History and Her Struggle for Emancipation 2009 – Page 313 "Rama Devi was married at the age of fourteen, in 1914 to Gopabandru Choudhury, who was working as a Deputy ... the Civil Disobedience Movement when the top leaders were imprisoned, Rama Devi acted as the 'Dictator' of the Orissa ..."
  10. Subhas Chandra Parida, Sasmita Nayak Empowerment of Women in India – 2009 Page 197 "... Women political leaders like Basant Manjari Devi (Rajamata of Ranapur), Rama Devi and Malati Choudhury (social ..."
  11. Sachidananda Mohanty – Early Women's Writings in Orissa, 1898–1950: A Lost Tradition 2005 "Rama. Devi. 1889–1985. Daughter of Gopal Ballabha Das, younger brother of Madhusudan D:is. the eminent Oriya nationalist, Rama Devi received no formal schooling. She was married to Gopabandhu Choudhury at the age of 14. ..."
  12. Atul Chandra Pradhan, Ashok Kumar Patnaik, Utkal University. Post-graduate Dept. of History People's movements in Orissa during the colonial era – 1994– Page 149 "In the process they had paved the way towards building of a new society in Orissa based on Gandhians ideals. From 1928 Rama Devi had stayed in the Alaka Ashram at Jagatsingpur and had participated in all the activities of the Ashram."
  13. Orissa: the dazzle from within (art, craft and culture of ...by G. K. Ghosh – 1993 – – Page 37
  14. "Jamnalal Bajaj Awards Archive". Jamnalal Bajaj Foundation. 
  15. British Empire Leprosy Relief Association. Indian Council؛ Hind Kusht Nivaran Sangh (1 January 1982). Leprosy in India. Hind Kusht Nivaran Sangh. اخذ شدہ بتاریخ 22 اپریل 2011. . JAMNALAL BAJAJ AWARDS, 1981 The Jamnalal Bajaj Awards are given every year for outstanding contributions in any one or more ... Award III was awarded to Smt. Ramadevi Gopabandhu Choudhuri ofCuttackfor her outstanding contribution to the ...
  16. "Ramadevi Womens University". 24 دسمبر 2017 میں اصل سے آرکائیو شدہ. اخذ شدہ بتاریخ 07 مارچ 2022. 
  17. rmss